உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Pakistanکی جانب سےرچی جارہی ہےنئی سازش،کشمیرکی آڑمیں دہشت گردی کودیاجارہاہےبڑھاوا

    ’کئی سرچ پارٹیاں بنائی گئیں، جنہوں نے بھرپور تلاشی لی اور متعدد گھات لگائے‘۔

    ’کئی سرچ پارٹیاں بنائی گئیں، جنہوں نے بھرپور تلاشی لی اور متعدد گھات لگائے‘۔

    بیان میں کہا گیا ہے کہ چوکس ہندوستانی فوج نے 26 مئی کو کیرن سیکٹر کے آگے والے علاقوں میں دراندازی کی کوشش کو ناکام بنا دیا، جس کا نتیجہ تین دہشت گردوں کی ہلاکت اور جنگ کی طرح کی بڑی مقدار میں اسٹورز کی بازیابی پر منتج ہوا۔

    • Share this:
      نیوز 18 ڈاٹ کام کے مطابق ہندوستانی فوج (Indian Army) نے جمعرات کے روز پاکستان پر جنگ بندی کی تفہیم کے آڑ میں نئے دھوکے میں ملوث ہونے کے لئے ’کشمیر میں اپنے مرتے ہوئے ایجنڈے کو زندہ کرنے اور برتن کو ابلتے رہنے‘ کے مذموم عزائم کو آگے بڑھانے کے لئے تنقید کی۔

      یہ بیان ضلع کپواڑہ کے کیرن سیکٹر میں لائن آف کنٹرول (ایل او سی) کے ساتھ دراندازی کی ایک کامیاب کوشش کے خاتمے کے پس منظر میں آیا ہے، جس میں صبح سویرے کی کارروائی میں تین پاکستانی دہشت گردوں کو گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا تھا۔

      سری نگر میں مقیم آرمی کے پی آر او کرنل ایمرون موسوی کی طرف سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ ’’پاکستانی فوج کی طرف سے جنگ بندی مفاہمت کی آڑ میں جموں و کشمیر میں مرتے ہوئے ایجنڈے کو زندہ کرنے اور برتن کو ابالتے رکھنے کے پاکستان کے مذموم عزائم ایک نیا فریب ہے۔‘‘

      انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر میں دہشت گردی کو برآمد کرنا گزشتہ تین دہائیوں میں پاکستان کی ریاستی پالیسی رہی ہے۔ POJK میں دہشت گردوں کے ہینڈلرز کی بڑھتی ہوئی مایوسی ہندوستانی فوج کی طرف سے کئے گئے اثر پر مبنی کارروائیوں اور موجودہ امن و سکون کے نتیجے میں واضح ہے کہ وادی میں آنے والے سیاحوں کی بڑی تعداد سے ظاہر ہے۔

      فوج نے کہا کہ تین پاکستانی دہشت گردوں کا خاتمہ دیسی ساختہ دھماکہ خیز آلات کے سٹوروں کو شامل کرنے کے لیے جنگ جیسی جنگ کی بازیابی ہوئی ہے۔ یہ امن، مقامی لوگوں کی خوشحالی، اور آنے والی امرناتھ یاترا میں خلل ڈالنے کے ارادے کا واضح اشارہ ہے۔

      بیان میں کہا گیا ہے کہ چوکس ہندوستانی فوج نے 26 مئی کو کیرن سیکٹر کے آگے والے علاقوں میں دراندازی کی کوشش کو ناکام بنا دیا، جس کا نتیجہ تین دہشت گردوں کی ہلاکت اور جنگ کی طرح کی بڑی مقدار میں اسٹورز کی بازیابی پر منتج ہوا۔ آپریشن ایس ایس پی کپوارہ سمیت متعدد ایجنسیوں کی مشترکہ انٹیلی جنس کی بنیاد پر شروع کیا گیا تھا۔ کئی سرچ پارٹیاں بنائی گئیں، جنہوں نے بھرپور تلاشی لی اور متعدد گھات لگائے۔

      فوج کے مطابق دہشت گردوں کے ساتھ رابطہ 26 مئی کی صبح 4.45 بجے ایل او سی کے قریب آگے والے علاقوں میں قائم ہوا، جس کے نتیجے میں شدید فائرنگ کا تبادلہ ہوا۔ ایک سول پورٹر بھی فائر فائٹ میں اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھا۔ صبح کے وقت مکمل تلاشی لی گئی اور تقریباً 2 بجے اختتام پذیر ہوا۔ علاقے کی تلاشی کے دوران تین دہشت گردوں کی لاشیں، تین اے کے رائفلیں، ایک پستول، چھ دستی بم اور بڑی مقدار میں گولہ بارود اور دیسی ساختہ دھماکہ خیز آلات سے متعلق اسٹورز برآمد ہوئے۔

      مزید پڑھیں: Varanasi Gyanvapi case:گیان واپی معاملے میں مقدمے کے پائیداری کی سماعت آج

      دریں اثنا جموں و کشمیر پولیس نے جمعرات کو کہا کہ صرف اس سال اب تک 26 غیر ملکی دہشت گرد سیکورٹی فورسز کے مختلف مقابلوں میں مارے گئے ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں:
      طلاقہ حسنہ کے خلافSCمیں درخواست، مسلم خاتون نے کیا غیرآئینی قرار دینے کا مطالبہ

      انسپکٹر جنرل آف پولیس (آئی جی پی) کشمیر زون وجے کمار نے کہا، ’’اس سال اب تک مارے گئے 26 غیر ملکی دہشت گردوں میں سے 14 کا تعلق جیش محمد اور 12 کا لشکر طیبہ سے ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: