ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

اقلیتی بچوں کو بیرون ملک تعلیم حاصل کرنے کے لئے 20 لاکھ روپے تک کا مل سکتا ہے قرض: شہباز علی

این ایم ڈی ایف سی کےڈائرکٹر شہباز علی نے بتایا کہ ایجوکیشن لون کے تحت ان کا ادارہ ملک میں تکنیکی اور پیشہ وارانہ کورسیز کی تکمیل کے لئے 15 لاکھ روپے تک کا قرض دیتا ہے جبکہ بیرون ملک جا کر تعلیم حاصل کرنے والے بچوں کو 20 لاکھ روپے تک کا قرض فراہم کرایا جا تا ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Sep 28, 2016 07:26 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
اقلیتی بچوں کو بیرون ملک تعلیم حاصل کرنے کے لئے 20 لاکھ روپے تک کا مل سکتا ہے قرض: شہباز علی
این ایم ڈی ایف سی کےڈائرکٹر شہباز علی نے بتایا کہ ایجوکیشن لون کے تحت ان کا ادارہ ملک میں تکنیکی اور پیشہ وارانہ کورسیز کی تکمیل کے لئے 15 لاکھ روپے تک کا قرض دیتا ہے جبکہ بیرون ملک جا کر تعلیم حاصل کرنے والے بچوں کو 20 لاکھ روپے تک کا قرض فراہم کرایا جا تا ہے۔

نئی دہلی۔  وزارت اقلیتی امور کے تحت قائم کردہ قومی ترقیاتی و مالیاتی کارپوریشن یعنی این ایم ڈی ایف سی اقلیتوں کی تعلیمی، سماجی اور معاشی پسماندگی دور کرنے کے لئے آسان شرطوں پر قرض کی مختلف اسکیمیں چلارہا ہے جس کے خاطر خواہ نتائج سامنے آرہے ہیں۔ این ایم ڈی ایف سی کےڈائرکٹر شہباز علی نے بتایا کہ ایجوکیشن لون کے تحت ان کا ادارہ ملک میں تکنیکی اور پیشہ وارانہ کورسیز کی تکمیل کے لئے 15 لاکھ روپے تک کا قرض دیتا ہے جبکہ بیرون ملک جا کر تعلیم حاصل کرنے والے بچوں کو 20 لاکھ روپے تک کا قرض فراہم کرایا جا تا ہے۔ یہ قرض محض 3 فیصد سالانہ شرح سود پر دیا جاتا ہے اور تعلیم مکمل ہونے پر پانچ برس کی آسان قسطوں پر یہ رقم واپس کی جا سکتی ہے۔


انہوں نے بتایا کہ تعلیمی قرض کے تحت کریڈٹ لائن ۔ 2 کے تحت ملک میں پیشہ وارانہ کورسیز کے لئے طلبا و طالبات کو 20 لاکھ اور بیرونی ممالک میں پڑھنے والے بچوں کو 30 لاکھ روپے تک کا قرض دیا جاتا ہے۔ کریڈٹ لائن کے تحت خواتین کو 3 فیصد کی رعایت دی جاتی ہے۔ مسٹر شہباز علی نے بتایا کہ مرکزی حکومت کے ادارہ قومی اقلیتی ترقیاتی و مالیاتی کارپوریشن کے قیام کا واحد مقصد اقلیتی فرقے کے لوگوں کو آسان شرطوں پر قرض فراہم کرکے ان کے بچوں کے لئے حصول تعلیم کا راستہ آسان بنانے کے ساتھ ساتھ انہیں اپنا روزگار خود کرنے کے لئے بھی قرض فراہم کرانا ہے۔ تاکہ وہ اس سے استفادہ کرکے سماج میں باعزت زندگی گزار سکیں۔ انہوں نے بتایا کہ چھوٹے چھوٹے روزگار شروع کرنے کے لئے این ایم ڈی ایف سی ایک لاکھ روپے تک کا قرض دیتا ہے جو سالانہ 7 فیصد شرح سود پر دیا جاتا ہے۔ اسی طرح مارکیٹنگ کرنے کی مددگار اسکیم کے تحت دستکاروں و فنکاروں کو مختلف نمائشوں میں اپنے فن کے نمونوں کو فروخت کرنے کے لئے مدعو کیا جاتا ہے جس میں شرکت کے لئے دستکاروں و فنکاروں کو آمدورفت کا خرچ دیا جاتا ہے۔


خواتین کے لئے مہیلا سمردھی یوجنا کے تحت سلائی، کڑھائی، کٹنگ، ہتھ کرگھا، بنائی، زردوزی وغیرہ کی تربیت یافتہ خواتین کو اپنا کاروبار شروع کرنے کے لئے این ایم ڈی ایف سی قرض فراہم کراتا ہے اور ایسی خواتین کو چھ ماہ کی تربیت کے دوران ایک ہزار روپے ماہانہ وظیفے کے ساتھ انہیں 1500 روپے کی گرانٹ بھی دی جاتی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ رواں برس نومبر میں پرگتی میدان میں شروع ہونے والے بین الاقوامی تجارتی میلے میں خصوصی نمائش کا اہتمام کیا جائے گا جس میں اقلیتی طبقات کے لوگوں کے ذریعے تیار کردہ بنائی، کڑھائی، لکڑی کے ساز و سامان، پیتل کا ساز و سامان وغیرہ کی نمائش کی جائے گی۔

First published: Sep 28, 2016 05:53 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading