உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Vaccine: ویکسین مینڈیٹ کی وجہ سے کسی کو بھی اپنی ملازمت یا راشن سے نہیں ہونا پڑے گا محروم، مرکز کی سپریم کورٹ میں وضاحت

    ’جب کہ ویکسین کے مینڈیٹ کا پہلو جو کئی ریاستوں اور دیگر حکام کے ذریعے جاری کیا جا رہا ہے‘۔

    ’جب کہ ویکسین کے مینڈیٹ کا پہلو جو کئی ریاستوں اور دیگر حکام کے ذریعے جاری کیا جا رہا ہے‘۔

    سالیسٹر جنرل تشار مہتا (Solicitor General Tushar Mehta) نے یہ بات جسٹس ایل ناگیشورا راؤ اور بی آر گاوائی پر مشتمل بنچ کو بتائی جو ایک معاملے کی سماعت کر رہی تھی جس میں کورونا ویکسینز کے مینڈیٹ کے کلینیکل ٹرائلز کے ڈیٹا کے انکشاف سمیت مسائل اٹھائے گئے ہیں۔

    • Share this:
      مرکز نے پیر کے روز سپریم کورٹ (Supreme Court) میں ان دلائل کی مخالفت کی کہ لوگ مبینہ طور پر مختلف ریاستوں اور حکام کے ذریعہ کورونا ویکسین مینڈیٹ کی وجہ سے کئی سہولیات سے محرومی کی باتیں عام کررہے ہیں۔ مرکز نے اس بات کی نفی کی ہے کہ ویکسین مینڈیٹ کی وجہ سے کسی کو بھی ملازمت یا راشن کھونے کی مسئلہ پیش نہیں آئے گا۔

      سالیسٹر جنرل تشار مہتا (Solicitor General Tushar Mehta) نے یہ بات جسٹس ایل ناگیشورا راؤ اور بی آر گاوائی پر مشتمل بنچ کو بتائی جو ایک معاملے کی سماعت کر رہی تھی جس میں کورونا ویکسینز کے مینڈیٹ کے کلینیکل ٹرائلز کے ڈیٹا کے انکشاف سمیت مسائل اٹھائے گئے ہیں۔

      درخواست گزار کی طرف سے پیش ہوئے ایڈوکیٹ پرشانت بھوشن نے کہا کہ ویکسین کے مینڈیٹ کا پہلو جو کئی ریاستوں اور دیگر حکام کے ذریعے جاری کیا جا رہا ہے، اس کی وجہ سے لوگ اپنی ملازمتیں کھو رہے ہیں۔ اس وقت جو چیز ضروری ہے وہ یہ ہے کہ ویکسین کے مینڈیٹ کے بارے میں بتایا جائے کیونکہ لوگ اپنی ملازمتیں کھو رہے ہیں۔ وہ اپنا راشن کھو رہے ہیں۔

      مہتا نے بنچ کو بتایا کہ عرضی گزار نے اس معاملے میں ایک درخواست دائر کی ہے جس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ اس کی وجہ سے لوگ اپنی ملازمتیں کھو رہے ہیں۔ بھوشن نے ایک آئی اے دائر کیا کہ بہت سے لوگ اپنی ملازمتیں کھو رہے ہیں۔ سماعت کے دوران بنچ نے بھوشن سے کہا کہ یہ تمام واقعات، جن کو عرضی گزار اس کے نوٹس میں لا رہا ہے، عدالت کے لیے فیصلہ کرنا ممکن نہیں ہو سکتا کیونکہ متعدد حالات ہو سکتے ہیں۔ بنچ نے کہا کہ وہ اس معاملے کی حتمی سماعت کرے گی اور پھر فیصلہ کرے گی۔

      بھوشن نے کہا کہ آج صورتحال یہ ہے کہ لوگ اپنی ملازمتیں کھو رہے ہیں۔ بنچ نے کہا کہ بہت سارے حالات ہوسکتے ہیں اور مخصوص مسائل کو متعلقہ ہائی کورٹس سے نمٹا جاسکتا ہے۔ ویکسین کے مینڈیٹ کے معاملے کا حوالہ دیتے ہوئے بھوشن نے کہا کہ مختلف حکام ان مینڈیٹ کے ذریعے شہریوں کے ہر قسم کے بنیادی حقوق کو محدود کر رہے ہیں۔ بھوشن نے کہا کہ وہ یہ بحث نہیں کر رہے ہیں کہ ویکسین کا مینڈیٹ بالکل جاری نہیں کیا جا سکتا۔

      انہوں نے کہا کہ ایک فرد کو ویکسین کے فوائد اور نقصانات، اس کے فوائد میں وزن کرنا ہوگا اور پھر اس کے بارے میں خود فیصلہ کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ایسا مینڈیٹ صرف اس صورت میں جاری کیا جا سکتا ہے۔ جب اس بات کا واضح ثبوت موجود ہو کہ ویکسین نہ لینا کسی فرد کو ویکسین لینے کے بعد دوسروں کے لیے بہت زیادہ خطرہ بناتا ہے۔

      بھوشن نے کہا کہ ایسے شواہد موجود ہیں جو ظاہر کرتے ہیں کہ اگر کسی شخص کو انفیکشن ہوا ہے تو اس کا انفیکشن سے تحفظ کسی بھی حفاظتی ٹیکے سے کہیں زیادہ بہتر ہے۔ بنچ نے کہا کہ وہ اس معاملے کو حتمی طور پر سماعت کے لیے درج کرے گی اور اس کا فیصلہ کرے گی۔

      بھوشن نے کہا کہ ویکسین کے ان مینڈیٹ کے نتیجے میں وہ آزادانہ طور پر گھومنے پھرنے کے قابل نہیں ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: