ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

نین تارا سہگل اور اشوک واجپئی کے بعد اب راجیش جوشی کا ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ واپس لینے سے انکار

نئی دہلی: عدم برداشت کے معاملے پر ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ واپس کرنے والے والے ہندی کے مشہور شاعر راجیش جوشی نے کہا ہے کہ جو انعام انہوں نے لوٹا دیا ہے وہ اسے قطعی واپس نہیں لیں گے۔

  • UNI
  • Last Updated: Jan 25, 2016 11:32 AM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
نین تارا سہگل اور اشوک واجپئی کے بعد اب راجیش جوشی کا ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ واپس لینے سے انکار
نئی دہلی: عدم برداشت کے معاملے پر ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ واپس کرنے والے والے ہندی کے مشہور شاعر راجیش جوشی نے کہا ہے کہ جو انعام انہوں نے لوٹا دیا ہے وہ اسے قطعی واپس نہیں لیں گے۔

نئی دہلی: عدم برداشت کے معاملے پر ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ واپس کرنے والے والے ہندی کے مشہور شاعر راجیش جوشی نے کہا ہے کہ جو انعام انہوں نے لوٹا دیا ہے وہ اسے قطعی واپس نہیں لیں گے۔


انگریزی کی مشہور مصنفہ نين تارا سہگل اور ہندی کے معروف شاعر اشوک واجپئی کے بعد مسٹر جوشی تیسرے مصنف ہیں، جن کا یہ بیان آیا ہے کہ ان کا ایوارڈ واپس لینے کا کوئی ارادہ نہیں ہے۔ ساہتیہ کیڈمی نے 17 دسمبر کی مجلس عاملہ کی میٹنگ میں تجویز پیش کی تھی کہ ایوارڈ واپس کرنے والے مصنفین کو ان کے ایوارڈ واپس کئے جائیں۔


مسٹر جوشی نے اكاڈمي کے سکریٹری کو لکھے گئے خط میں کہا ہے کہ ساہتیہ اکیڈمی کو چاہئے تھا کہ وہ ایوارڈ واپس کرنے والے مصنفین سے بات کرے، لیکن اس نے آج تک بات نہیں کی اور اس کے برعکس ایوارڈ واپس بھیجنے لگی۔


انہوں نے کہا ہے کہ اکیڈمی اپنی خود مختاری کی حفاظت کرنے میں ناکام رہی ہے اور ایم ایم كلبرگي کو قتل کرنے والی طاقتیں ہی اب دلت طالب علم کو خود کشی کے لئے مجبور کر رہی ہیں۔

First published: Jan 25, 2016 11:31 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading