ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

این آرسی پرسپریم کورٹ نے پرتیک ہزیلا اوررجسٹرارکی سرزنش، عدلیہ پرمکمل اعتماد، مایوس ہونے کی ضرورت نہیں: مولانا ارشد مدنی 

جمعیۃعلماء ہند کے وکلاء کپل سبل، سلمان خورشید، اندراجے سنگھ اور فضیل ایوبی سپریم کورٹ میں جسٹس رنجن گگوئی اور جسٹس روہنٹن فالی نریمن کی خصوصی بینچ کے سامنے این آرسی معاملے میں پیش ہوئے۔

  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
این آرسی پرسپریم کورٹ نے پرتیک ہزیلا اوررجسٹرارکی سرزنش، عدلیہ پرمکمل اعتماد، مایوس ہونے کی ضرورت نہیں: مولانا ارشد مدنی 
مولانا سید ارشد مدنی: فائل فوٹو

نئی دہلی: این آرسی کے معاملہ میں آج پانچ الگ الگ معاملوں میں پیروی کرنے والے جمعیۃعلماء ہند کے وکلاء سینئرایڈوکیٹ کپل سبل، سینئرایڈوکیٹ سلمان خورشید، سینئر ایڈوکیٹ اندراجے سنگھ اوروکیل آن ریکارڈ فضیل ایوبی، جسٹس رنجن گگوئی اور جسٹس روہنٹن فالی نریمن کی خصوصی بینچ کے سامنے پیش ہوئے تو این آرسی کے پروجیکٹ کوآرڈی نیٹرپرتیک ہزیلا اوررجسٹرارآف انڈیا سیلیش وہاں پہلے سے موجود تھے۔


اس معاملہ پرسماعت کے بجائے فاضل ججوں نے انگریزی روزنامہ "انڈین ایکسپریس" میں شائع ہونے والے پرتیک ہزیلا اورسیلیش کے اس انٹرویوپر سخت برہمی کااظہارکیا، جس میں انہوں نے این آرسی کے حوالہ سے بات کی تھی، عدالت نے ان دونوں سے سوال کیا کہ جب این آرسی کو لیکر مقدمات عدالت میں زیرسماعت ہیں توانہوں نے مذکورہ اخبارکوانٹرویوکیوں دیا؟


فاضل ججوں نے یہ بھی کہا کہ آپ لوگ سپریم کورٹ کی ہدایت پرہی این آرسی کا کام دیکھ رہے ہیں، اس لئے آپ لوگ جوکچھ کہیں گے اسےعدالت کی منشاء یا رائے ہی سمجھا جائے گا۔ عدالت نے کہا کہ ایسا کہہ کے آپ آپ لوگ توہین عدالت کے مرتکب ہوئے ہیں، لیکن چونکہ آپ لوگ این آرسی کی تیاری جیسے اہم کام میں مصروف ہیں، اس لئے عدالت آپ کی اس غلطی کودرگزرکرتی ہے، تاہم عدالت نے انتباہ دیا کہ وہ آئندہ ایسا کام نہیں کریں گے اورعدالت کی اجازت کے بغیرپریس سے کوئی بات نہیں کریں گے۔ اس پر ان دونوں نے عدالت کو یقین دلایا کہ آئندہ وہ ایسی غلطی نہیں کریں گے۔


مولانا مدنی نے کہا کہ ملک کی عدلیہ پر ہم مکمل اعتماد اوراس کا احترام کرتے ہیں۔ انہوں نے آخرمیں کہا کہ آسام شہریت کا معاملہ انسانی بقاء اورلوگوں کی زندگی سے جڑا ہوا ہے، اس لئے ہم امید کرتے ہیں کہ عدالت حالات اور تمام شواہدکو دیکھتے ہوئے ایک ایسا فیصلہ دے گی جومتاثرین کے وسیع تر مفادمیں ہوگا ہمیں مایوس ہونے کی ضرورت نہیں ہے۔
واضح رہے کہ گزشتہ 31 جولائی کی سماعت کے بعد پرتیک ہزیلا اورسیلیش نے انڈین ایکسپریس کے نمائندے کو انٹرویو دیا تھا۔ اس موقع پراٹارنی جنرل آف انڈیا کے کے وینوگوپال اورایڈیشنل سالیسٹرجنرل تشارمہتا بھی عدالت میں موجودتھے۔ پچھلی سماعت میں عدالت نے اس کی آئندہ سماعت کی تاریخ 16 اگست مقررکی تھی۔ آج سماعت کے دوران جمعیۃعلماء آسام کے صدرمولانا مشتاق عنفر اپنی پوری ٹیم کے ساتھ عدالت میں موجودتھے۔
First published: Aug 07, 2018 09:04 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading