உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    NRIs: اب غیر مقیم ہندوستانیوں بھی کرسکتے ہیں براہ راست بلوں کی ادائیگی، جانیے کیسے کریں؟

    آر بی آئی نے کہا کہ وہ جلد ہی ضروری ہدایات فراہم کرے گا۔

    آر بی آئی نے کہا کہ وہ جلد ہی ضروری ہدایات فراہم کرے گا۔

    ۔ BankBazaar.com کے سی ای او ادھیل شیٹی نے کہا کہ ایک بار جب آر بی آئی تفصیلی ہدایات کو شیئر کرے گا، تو ہم آپریشنل پہلوؤں کے بارے میں مزید جان لیں گے ۔ ترسیلات زر غیر ملکی کرنسی میں ہوں گی اور زر مبادلہ کی شرحیں طے شدہ اور شفاف طریقے سے دستیاب ہونے کی امید ہے۔ اس کے لیے ایک منسلک فیس ہوگی، لیکن اس کے طریقہ کار نفاذ کا ابھی بھی انتظار ہے۔

    • Share this:
      ریزرو بینک آف انڈیا (Reserve Bank of India) نے غیر مقیم ہندوستانیوں (NRI) کو ہندوستان میں براہ راست بلوں کی ادائیگی کے قابل بنایا ہے۔ اب سرحد پار اندرونی ادائیگیاں بھی کی جاسکتی ہے۔ بھارت بل پیمنٹ سسٹم (Bharat Bill payment system) کو فعال کر دیا گیا ہے۔ پہلے بی بی پی ایس کے ذریعے ادائیگی صرف ہندوستان میں صارفین کے لیے دستیاب تھی۔

      ریزرو بینک نے این آر آئیز کو ہندوستان میں اپنے خاندانوں کی جانب سے افادیت، تعلیم اور دیگر بلوں کی ادائیگی میں سہولت فراہم کرنے کے لیے بی بی پی ایس کو سرحد پار اندرونی ادائیگیوں کو قبول کرنے کے قابل بنانے کی تجویز پیش کی ہے۔ آر بی آئی نے ترقیاتی اور ریگولیٹری پالیسیوں سے متعلق ایک بیان میں کہا کہ اس سے بھارت بل پیمنٹ سسٹم پلیٹ فارم پر آن بورڈ کسی بھی بلر کے بلوں کی ادائیگی میں بھی فائدہ ہوگا۔

      ماہرین اسے ایک مثبت طریقہ کے طور پر دیکھتے ہیں کیونکہ اس سے ہندوستانی اداروں کو ترسیلات زر کا راستہ آسان ہو جائے گا۔ BankBazaar.com کے سی ای او ادھیل شیٹی نے کہا کہ ایک بار جب آر بی آئی تفصیلی ہدایات کو شیئر کرے گا، تو ہم آپریشنل پہلوؤں کے بارے میں مزید جان لیں گے ۔ ترسیلات زر غیر ملکی کرنسی میں ہوں گی اور زر مبادلہ کی شرحیں طے شدہ اور شفاف طریقے سے دستیاب ہونے کی امید ہے۔ اس کے لیے ایک منسلک فیس ہوگی، لیکن اس کے طریقہ کار نفاذ کا ابھی بھی انتظار ہے۔

      بھارت بل پیمنٹ سسٹم کیا ہے؟

      بھارت بل پیمنٹ سسٹم ایک ادائیگی کا نظام ہے جسے آر بی آئی نے تیار کیا ہے اور اسے نیشنل پیمنٹ کارپوریشن آف انڈیا (NPCI) چلاتا ہے۔ یہ تمام بلوں کی ادائیگی کے لیے ایک اسٹاپ ایکو سسٹم ہے، جو پورے ہندوستان میں کلائنٹس کو ایک دوسرے سے چلنے کے قابل اور قابل رسائی پیش کرتا ہے۔ نیشنل پیمنٹ کارپوریشن آف انڈیا کی ویب سائٹ کے مطابق بھارت بل پیمنٹ سسٹم ایک کسی بھی وقت کہیں بھی بل کی ادائیگی کی خدمت ہے جو پورے ہندوستان میں تمام صارفین کو یقین، بھروسے اور لین دین کی حفاظت کے ساتھ دستیاب ہوگی۔

      بلوں کی ادائیگی بھارت بل پے کے ذریعے ادائیگی کے مختلف طریقوں سے کی جا سکتی ہے۔ کارڈز (کریڈٹ، ڈیبٹ، اور پری پیڈ)، این ای ایف ٹی، انٹرنیٹ بینکنگ، UPI، بٹوے، آدھار پر مبنی ادائیگیاں اور نقد ادائیگی کے طریقے ہیں جو ماحولیاتی نظام کے ذریعے تعاون یافتہ ہیں۔ بی بی پی ایس کے ساتھ، صارفین مختلف قسم کے یوٹیلیٹی بل ادا کر سکتے ہیں، جیسے کہ بجلی، ٹیلی کام، ڈی ٹی ایچ، گیس اور پانی کے ساتھ ساتھ دیگر بار بار چلنے والی ادائیگیاں، جیسے میوچل فنڈ پریمیم، انشورنس پریمیم، اسکول اور ادارے کی فیس، کریڈٹ کارڈ، ادائیگیاں، فاسٹگ ری چارجز، مقامی ٹیکس، اور ہاؤسنگ سوسائٹی کے واجبات، ایک ہی ونڈو پر دستیاب ہے۔

      بھارت بل پیمنٹ سسٹم کے ساتھ ان کے بلوں سے متعلق کسی بھی مسائل میں صارفین کی مدد کرنے کے لیے صارفین کی شکایات پر کارروائی کے لیے ایک موثر نظام بھی قائم کیا گیا ہے۔

      نئی تبدیلی کا کیا مطلب ہے؟

      یہ بھی پڑھیں:

      چیف جسٹس آف انڈیا این وی رمنا کے بعد اگلے CJI کون؟ جسٹس ادے امیش للت کی سفارش

      بھارت بل پیمنٹ سسٹم فی الحال صرف ہندوستان کے رہائشیوں کے لیے قابل رسائی ہے۔ اب آر بی آئی نے بی بی پی ایس کو سرحد پار اندرونی ادائیگیوں کو قبول کرنے کے قابل بنا دیا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ این آر آئی رشتہ دار اپنے خاندان، دوستوں یا اپنے لیے ہندوستان میں بل ادا کر سکتے ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں:

      Covid-19: کورونا نے پھر بڑھائی تشویش، کیا آنے والی ہے نئی لہر؟ ماہرین نے کہی یہ بات

      یہ ادائیگیاں کریڈٹ، ڈیبٹ اور پری پیڈ کارڈز، این ای ایف ٹی، انٹرنیٹ بینکنگ، یو پی آئی، بٹوے، آدھار پر مبنی ادائیگیوں اور نقدی کے ذریعے کی جا سکتی ہیں۔ آر بی آئی نے کہا کہ وہ جلد ہی ضروری ہدایات فراہم کرے گا۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: