உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    این ٹی پی سی دہلی کو مل رہی صرف آدھی بجلی ، ستیندر جین نے تشویش کا کیا اظہار

    این ٹی پی سی دہلی کو مل رہی صرف آدھی بجلی ، ستیندر جین نے تشویش کا کیا اظہار

    این ٹی پی سی دہلی کو مل رہی صرف آدھی بجلی ، ستیندر جین نے تشویش کا کیا اظہار

    ستیندر جین نے کہا کہ اگر بجلی کا بحران نہیں ہے تو یوپی کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ مرکزی حکومت کو خط کیوں لکھ رہے ہیں؟ : ملک میں بجلی کا بحران ہے۔ جب مرکزی حکومت اسے ایک مسئلہ سمجھتی ہے تب ہی اس کا حل نکلے گا ۔

    • Share this:
    نئی دہلی : دہلی کے وزیر توانائی ستیندر جین نے پیر کو بجلی کے بحران کے حوالے سے ایک اہم پریس کانفرنس کی ۔ انہوں نے کہا کہ دہلی نیشنل تھرمل پاور کارپوریشن لمیٹڈ (این ٹی پی سی) سے تقریبا 4000 میگاواٹ بجلی حاصل کرتی تھی، لیکن آج اس کے آدھے حصے کو بھی بجلی نہیں مل رہی ہے ۔ یہ تشویش کی بات ہے۔ پورے ملک میں بجلی کا بحران ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر بجلی کا بحران نہیں ہے تو ملک بھر میں بجلی کی کٹوتی کیوں ہے؟۔ اتر پردیش کے وزیر اعلی یوگی جی نے مودی حکومت کو خط کیوں لکھا؟ ملک میں بجلی کا بحران ہے اور جب مرکزی حکومت اسے ایک مسئلہ سمجھتی ہے تو وہ اسے حل کر سکے گی۔

    دہلی کے وزیر توانائی ستیندر جین نے کہا کہ کسی بھی پاور پلانٹ میں 15 دن سے کم کا اسٹاک نہیں ہونا چاہئے۔ ابھی زیادہ تر پلانٹ کے پاس 2-3 دن کا اسٹاک باقی ہے۔ مرکزی حکومت کو بتانا چاہئے کہ جب این ٹی پی سی کے تمام پلانٹ 50 سے 55 فیصد کی گنجائش پر کام کر رہے ہیں تو پھر کوئلے کی قلت کیسے پیدا ہو رہی ہے۔  مرکزی وزیر توانائی آر کے سنگھ کے اس بیان کے جواب میں کہ ملک میں بجلی کا بحران نہیں ہے، ستیندر جین نے کہا کہ اگر مرکزی حکومت کہہ رہی ہے کہ بجلی کا بحران نہیں ہے تو ملک کے مختلف وزرائے اعلیٰ اس مسئلے کے بارے میں وزیر اعظم کو خط کیوں لکھ رہے ہیں۔؟ اتر پردیش میں بھی جہاں بی جے پی کی اپنی حکومت ہے،وزیر اعلی یوگی مودی حکومت کو خط کیوں لکھ رہے ہیں؟ ۔

    انہوں نے کہا کہ اس وقت کوئلے کا بڑا مسئلہ ہے۔  مسئلہ یہ ہے کہ یہ خط وزیراعلیٰ اروند کیجریوال جی نے لکھا ہے۔  مرکزی حکومت کو اسے ایک مسئلہ سمجھنا چاہئے، تب ہی اسے حل کیا جائے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت دہلی میں بجلی کی ڈیمانڈ کم ہے۔ ایک وقت میں بجلی کی طلب 7300 میگاواٹ سے زیادہ تھی جو آج کے دور میں کم ہوکر 4562 میگاواٹ رہ گئی ہے۔ ڈیمانڈ کم ہونے کے بعد بھی ہمیں 17 سے 20 روپے کے نرخ پر بجلی خریدنی پڑتی ہے۔  دہلی حکومت کا این ٹی پی سی کے ساتھ سب سے زیادہ بجلی خریدنے کا معاہدہ ہے ، لیکن انہوں نے اپنے پلانٹ میں بجلی کی پیداواری صلاحیت کو 50 فیصد تک بڑھا دیا ہے۔

    عام طور پر این ٹی پی سی دہلی کو تقریبا 4000 میگاواٹ بجلی دیتی ہے، لیکن آج کی تاریخ میں وہ اس سے آدھی بجلی بھی فراہم نہیں کر پاتی ہے ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: