உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ہندو حکمراں والے بیان پر آؤٹ لک نے مانگی معافی، کہا راج ناتھ کا حوالہ غلط

    نئی دہلی۔ 'آؤٹ لک' میگزین نے اعتراف کیا ہے کہ لوک سبھا میں ہنگامہ مچانے والی اس کی میگزین میں شائع ایک ہندو رہنما کے تبصرہ کو غلطی سے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ  سے منسوب کردیا گیا۔

    نئی دہلی۔ 'آؤٹ لک' میگزین نے اعتراف کیا ہے کہ لوک سبھا میں ہنگامہ مچانے والی اس کی میگزین میں شائع ایک ہندو رہنما کے تبصرہ کو غلطی سے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ سے منسوب کردیا گیا۔

    نئی دہلی۔ 'آؤٹ لک' میگزین نے اعتراف کیا ہے کہ لوک سبھا میں ہنگامہ مچانے والی اس کی میگزین میں شائع ایک ہندو رہنما کے تبصرہ کو غلطی سے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ سے منسوب کردیا گیا۔

    • IBN7
    • Last Updated :
    • Share this:
      نئی دہلی۔ 'آؤٹ لک' میگزین نے اعتراف کیا ہے کہ لوک سبھا میں ہنگامہ مچانے والی اس کی میگزین میں شائع ایک ہندو رہنما کے تبصرہ کو غلطی سے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ  سے منسوب کردیا گیا۔ آؤٹ لک میگزین نے ٹوئٹر پر ایک بیان میں بتایا کہ مارکسوادی كمیونسٹ پارٹی کے ایم پی محمد سلیم نے پیر کو لوک سبھا میں ہوئی بحث میں آؤٹ لک کے 16 نومبر کے شمارے میں شائع ایک خبر کا ذکر کیا۔

      میگزین کے بیان میں کہا گیا ہے کہ اس خبر میں وشو ہندو پریشد کے آنجہانی لیڈر اشوک سنگھل کی طرف سے کئے گئے ایک تبصرہ کو غلطی سے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ کی طرف منسوب کر دیا گیا۔ آؤٹ لک اس کے لئے افسوس ظاہر کرتا ہے۔ یہ ہماری منشا نہیں تھی کہ وزیر داخلہ یا پارلیمنٹ کے وقار کو کم کیا جائے۔

      آؤٹ لک نے کہا ہے کہ آؤٹ لک مسٹر راج ناتھ سنگھ اور مسٹر محمد سلیم کو ہوئی پریشانی کے لئے افسوس ظاہر کرتا ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ ریکارڈ میں حقائق کو لانے کے لئے اس مضمون کے آن لائن ورژن کو ٹھیک کر دیا گیا ہے۔

      سلیم کی طرف سے لوک سبھا میں اس مضمون کے مسئلے کو اٹھائے جانے پر ہنگامہ ہو گیا تھا، جس کی وجہ سے وزیر داخلہ نے اس کی سختی سے تردید کی تھی۔ بعد میں لوک سبھا اسپیکر نے سلیم کے بیان کو ایوان کی کارروائی سے ہٹا دیا تھا۔
      First published: