உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاکستانی فوج کی جانب سے ضلع پونچھ کے کئی علاقوں میں کی گئی گولہ باری

    Youtube Video

    پاکستان کی جانب سے ضلع پونچھ کے کیرنی،قصبہ،شاہپور کے علاوہ بالاکوٹ سیکٹروں میں فائربندی معاہدے کی خلاف ورزی (Ceasefire by Pakistan)کی گئی۔

    • Share this:
      پاکستان کی جانب سے ضلع پونچھ کے کیرنی،قصبہ،شاہپور کے علاوہ بالاکوٹ سیکٹروں میں فائربندی معاہدے کی خلاف ورزی (Ceasefire by Pakistan)کی گئی۔ کئی علاقوں میں کل شام چار بجے سے آج صبح چھ بجے تک گولہ باری کا سلسلہ جاری رہا۔ اس بیچ فوج نے بھی پاکستان کو منہ توڑ جواب دیا ہے۔فوج نے پاکستانی چوکیوں کو نشانہ بنایا۔ نیوز ایٹین اردو کے کیمرے میں فوج کی جوابی کاروائی کے مناظر قید ہوگیے ہیں۔

      اپنے ٹی وی اسکرین پر آپ دیکھ سکتے ہیں کہ کس طرح فوج نے پاکستان کی اشتعال انگیزی کا منہ توڑ جواب دیا۔۔جوابی کاروائی کے بعد پاکستان نے فارئنگ بند کردی۔بتایا جاتا ہے کہ پاکستانی گولہ باری سے شاہپور میں چند مکانوں کو کافی نقصان پہنچا ہے۔۔علاقے کے لوگوں نے مزید بنکروں کی مانگ کی ہے۔

      سری نگر: جموں وکشمیر کے سری نگر میں پولیس اور سی آر پی ایف کی ایک مشترکہ ٹیم پر دہشت گردوں نے حملہ کردیا۔ اس حادثہ میں ایک پولیس کے جوان اور ایک شہری زخمی ہوگئے۔ زخمیوں کو علاج کے لئے قریبی اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے جبکہ دہشت گردوں کو پکڑنے کے لئے علاقے کو پوری طرح سے گھیر لیا گیا ہے۔ دہشت گردوں کو پکڑنے کے لئے اب علاقے میں سرچ آپریشن شروع کردیا گیا ہے۔

      اطلاعات کے مطابق، سری نگر کے شاذگریا پورہ کے پاس اتوار دوپہر پولیس اور سی آر پی ایف کی مشترکہ ٹیم گشت کر رہی تھی۔ اسی دوران وہاں پہلے سے موجود دہشت گردوں نے پرانے سری نگر شہر کے شاذگریا پورہ میں واقع ایک ناکے پر ٹیم پر فائرنگ شروع کردی۔ دہشت گردوں کی طرف سے چلی گولی باری میں پولیس کا جوان فرخ احمد اور ایک عام شہری زخمی ہوگئے۔

       



      زخمیوں کو قریب کے اسپتال میں داخل کرا دیا گیا ہے۔ سیکورٹی اہلکاروں نے پورے علاقے کو گھیر لیا ہے اور دہشت گردوں کی تلاش کرنے کے لئے علاقے میں سرچ آپریشن شروع کردیا گیا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ دہشت گرد ابھی بھی علاقے میں پوشیدہ ہیں۔ دہشت گردوں نے جس طرح سے واردات کو انجام دیا ہے، اس سے لگتا ہے کہ انہیں پہلے سے معلوم تھا کہ گشت ٹیم یہاں سے آنے والی ہے۔ دہشت گردوں کی تلاش جاری ہے۔
      Published by:sana Naeem
      First published: