உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    7 بچوں کے باپ نے 19 سالہ لڑکی سے کی عشق میں شادی، ہائی کورٹ سے مانگی سکیورٹی

    ہریانہ کے پلول ضلع کے ہتھین علاقے میں محبت کی شادی (Love Marriage) کا ایک انوکھا معاملہ سامنے آیا ہے۔ یہاں ایک 67 سالہ شخص نے 19 سالہ لڑکی سے شادی کی ہے

    ہریانہ کے پلول ضلع کے ہتھین علاقے میں محبت کی شادی (Love Marriage) کا ایک انوکھا معاملہ سامنے آیا ہے۔ یہاں ایک 67 سالہ شخص نے 19 سالہ لڑکی سے شادی کی ہے

    • Share this:
      پلول۔ کتے ہیں کہ محبت میں عمر نہیں دیکھی جاتی ، محبت کبھی بھی ہو سکتی ہے۔ ہریانہ کے پلول ضلع کے ہتھین علاقے میں محبت کی شادی (Love Marriage) کا ایک انوکھا معاملہ سامنے آیا ہے۔ یہاں ایک 67 سالہ شخص نے 19 سالہ لڑکی سے شادی کی ہے۔ دونوں نے پنجاب اور ہریانہ ہائی کورٹ پہنچ کر خود کو میاں بیوی ہونے کی بات کہہ کر اپنے خاندان سے جان کا خطرہ بتاتے ہوئے تحفظ کا مطالبہ کیا ہے۔ حیرت انگیز بات یہ ہے کہ 67 سالہ شخص کے سات بچے ہیں اور سب شادی شدہ ہیں جبکہ لڑکی بھی پہلے سے شادی شدہ ہے۔

      معاملے کی سنگینی کے پیش نظر پنجاب اور ہریانہ ہائی کورٹ (Punjab And Haryana High Court) نے پلول ڈسٹرکٹ پولیس کپتان (ایس پی) دیپک گہلوات کو ایک ٹیم بنانے کا حکم جاری کیا ہے جس میں خواتین پولیس اہلکار بھی شامل ہونی چاہئیں۔ عدالت نے پولیس کو حکم دیا ہے کہ بچی کی حفاظت کی جائے اور بزرگ شخص کے بارے میں مکمل تفتیش کی جائے۔

      اس سلسلے میں معلومات دیتے ہوئے ، ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ آف پولیس (ڈی ایس پی) رتن دیپ بالی نے بتایا کہ ہتھین کے ہنچ پوری گاؤں کے رہنے والے ایک 67 سالہ شخص نے ضلع نوح کے ایک گاؤں کی 19 سالہ لڑکی سے شادی کی۔ جوڑے نے پنجاب اور ہریانہ ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی ہے کہ ہمیں لڑکی کے خاندان سے جان کا خطرہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں ہائی کورٹ سے حکم ملا ہے کہ معاملے کی تحقیقات کی جائے اور دونوں کو سکیورٹی فراہم کی جائے۔ اس کے ساتھ یہ بھی معلوم ہونا چاہیے کہ یہ شادی کن حالات میں ہوئی۔

      دونوں پہلے سے ہی ہیں شادی شدہ۔۔۔
      بالی نے بتایا کہ لو میرج کرنے والے بزرگ اور لڑکی دونوں پہلے سے ہی شادی شدہ ہیں۔ بزرف شخص کے سات بچے ہیں جو سبھی شادہ شدہ ہیں۔ ان کی بیوی کی چار سال پہلے موت ہو گئی تھی۔ وہیں شادی کرنے والی لڑکی بھی پہلے سے شادی شدہ ہے اور اسے کوئی بچہ نہیں ہے۔ ڈی ایس پی نے بتایا کہ لڑکی کے کنبے کا گاؤں میں زمینی تنازعہ تھا اور لو میرج کرنے والے بزرگ ان کی مدد کرنے جاتا تھا۔ اس دوران ان دونوں کے درمیان رابطہ ہوا۔ انہوں نے بتایا کہ ہائی کورٹ کے ذریعے اس بابت حکم جاری ہوئے ہیں۔ پولیس کے ذڑیعے اسی بنیاد پر کارروائی کی جا رپی ہے جس کا جواب طے وقت پر عدالت میں داخل کرا دیا جائے گا۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: