உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    محبوبہ مفتی کی دھمکی، 'اگرآرٹیکل 370 اور35 اے ہٹایا توجل اٹھےگا ملک'۔

    محبوبہ مفتی : فائل فوٹو۔

    محبوبہ مفتی : فائل فوٹو۔

    بی جے پی نےعام انتخابات2019 کے لئے جاری اپنے انتخابی منشورمیں 35 اے ہٹانے کا وعدہ کیا ہے۔

    • Share this:
      لوک سبھا الیکشن کولے کربی جے پی نے پیرکو'سنکلپ پتر'جاری کیا ہے۔ اس میں آرٹیکل 370 اور35 اے ہٹانے کا بھی وعدہ کیا گیا ہے۔ اس پرٹوئٹ کرکے جموں وکشمیرکی سابق وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی نے بی جے پی حکومت کو دھمکی دی ہے۔ محبوبہ مفتی نے ٹوئٹ کیا 'پہلے سے ہی جموں وکشمیربارود کے ڈھیرپربیٹھا ہوا ہے۔ اگرایسا ہوتا ہے تو نہ صرف کشمیربلکہ پورا ملک جل اٹھے گا، اس لئے میں بی جے پی سے اپیل کرتی ہوں کہ وہ آگ سے کھیلنا بند کریں'۔

      بی جے پی نے سال 2019 کے عام الیکشن سے پہلے جاری اپنے انتخابی منشورمیں 35 اے ہٹانے کا وعدہ کیا ہے۔ گزشتہ تین چارسالوں میں کئی بارکشمیرکے ضمن میں 35 اے کا ذکر ہوتا رہتا ہے۔ یہ متنازعہ مدعا سرخیاں بنتا رہا ہے۔ فی الحال یہ معاملہ سپریم کورٹ میں بھی زیرالتوا ہے۔ ساتھ ہی جموں وکشمیر کے لیڈران ان دفعات کو ہٹائے جانےکی بات سامنے آنے پرسخت ناراضگی کا بھی اظہارکرتے ہیں۔

      آرٹیکل 35 اے جموں وکشمیرکےشہریوں کوخصوصی اختیاردیتا ہے۔ جموں وکشمیرمیں اس آرٹیکل میں کسی بھی طرح کی تبدیلی کی مخالفت ہورہی ہے۔ حالیہ الیکشن میں بھی جموں وکشمیرکےسیاسی جماعتوں نے35 اے کوایک بڑا مدعا بنایا ہوا ہے، وہ اسے ہٹانےکے کسی بھی اقدامات کے خلاف ہیں۔



      کیا ہے آرٹیکل 35 اے؟

      دفعہ 35 اے ہندوستانی آئین کا وہ آرٹیکل ہے، جو جموں وکشمیراسمبلی کولےکرالتزام کرتا ہے۔ یہ ریاست کویہ طے کرنے کی طاقت دیتا ہے کہ جموں کا مستقل شہری کون ہے؟ ویسے 1956 میں بنے جموں وکشمیرکے آئین میں مستقل شہریت کومتعارف کیا گیا تھا۔ یہ آرٹیکل جموں وکشمیرمیں ایسے لوگوں کوکوئی بھی پراپرٹی (جائیداد) خریدنے یا اس کا مالک بننے سے روکتا ہے، جووہاں کےمستقل شہری نہیں ہیں۔ آرٹیکل 35 اے جموں وکشمیر کے غیر مستقل شہریوں کو وہاں سرکاری نوکریوں اورسرکاری امداد سے بھی محروم کرتا ہے۔
      First published: