உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    احمد آبادمیں IN-SPACE ہیڈکوارٹرکا آغاز، یہ کیاہےاورکیوں ہےاہم؟ پی ایم مودی نےکہی ایم باتیں

    وزیر اعظم نریندر مودی

    وزیر اعظم نریندر مودی

    وزیر اعظم نے مزید وضاحت کی کہ انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر میں ہندوستان کی خلائی صنعت میں انقلاب لانے کی صلاحیت ہے۔ تو میں یہی کہوں گا کہ ’اس جگہ کو دیکھیں‘۔ انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر اسپیس کے لئے ہے

    • Share this:
      وزیر اعظم نریندر مودی (Prime Minister Narendra Modi) نے آج بوپال، احمد آباد میں انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر (IN-SPACE) کے ہیڈ کوارٹر کا افتتاح کیا۔ اس پروگرام میں انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر اور خلائی پر مبنی ایپلی کیشنز اور خدمات کے شعبے میں کام کرنے والی نجی شعبے کی کمپنیوں کے درمیان مفاہمت ناموں کے تبادلے کا بھی مشاہدہ کیا گیا ہے۔

      انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر کے قیام کا اعلان جون 2020 میں کیا گیا تھا۔ یہ سرکاری اور نجی دونوں اداروں کی خلائی سرگرمیوں کے فروغ، حوصلہ افزائی اور ضابطے کے لیے محکمہ خلائی میں ایک خود مختار اور واحد ونڈو نوڈل ایجنسی ہے۔ یہ نجی اداروں کے ذریعہ ISRO کی سہولیات کے استعمال میں بھی سہولت فراہم کرتا ہے۔

      وزیر اعظم نے انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر کے آغاز کو ہندوستانی خلائی صنعت کے لیے ’اسپیس کو دیکھیں‘ لمحہ قرار دیا کیونکہ یہ بہت ساری ترقی اور مواقع کا پیش خیمہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر ہندوستان کے نوجوانوں کو ہندوستان کے بہترین ذہنوں کے سامنے اپنی صلاحیتوں کا مظاہرہ کرنے کا موقع فراہم کرے گا۔ چاہے وہ حکومت میں کام کر رہے ہوں یا نجی شعبے میں انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر سب کے لیے بہترین مواقع پیدا کرے گا۔

      وزیر اعظم نے مزید وضاحت کی کہ انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر میں ہندوستان کی خلائی صنعت میں انقلاب لانے کی صلاحیت ہے۔ تو میں یہی کہوں گا کہ ’اس جگہ کو دیکھیں‘۔ انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر اسپیس کے لئے ہے، انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر رفتار کے لئے ہے اور انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر نئے مستقبل کے لئے ہے۔

      وزیر اعظم نے کہا کہ کافی عرصے سے خلائی صنعت میں نجی شعبے کو محض ایک وینڈر کے طور پر دیکھا جاتا رہا ہے، ایک ایسا نظام جس نے ہمیشہ نجی شعبے کی صنعت میں ترقی کی راہیں مسدود کیں۔ وزیراعظم نے کہا کہ صرف بڑے خیالات ہی فاتح بناتے ہیں۔ خلائی شعبے میں اصلاحات کر کے اسے تمام پابندیوں سے آزاد کر کے انڈین نیشنل اسپیس پروموشن اینڈ آتھرائزیشن سینٹر کے ذریعے نجی صنعت کو سپورٹ کر کے، ملک آج فاتح بنانے کی مہم شروع کر رہا ہے۔

      مزید ٖپڑھیں: Exclusive: پاکستانی فوج میں کشیدگی؟ کیا باجوا پر سے بھروسہ ٹوٹ رہا ہے؟ اقتدار کے گلیاروں میں بڑا سوال


      انھوں نے کہا کہ نجی شعبہ صرف وینڈر نہیں رہے گا بلکہ خلائی شعبے میں ایک بڑے فاتح کا کردار ادا کرے گا۔ وزیر اعظم نے مزید کہا کہ جب سرکاری خلائی اداروں کی طاقت اور ہندوستان کے پرائیویٹ سیکٹر کا جذبہ پورا ہو جائے گا تو آسمان بھی حد نہیں ہو گا۔


      مزید پڑھیں: Rajya Sabha Election 2022: راجستھان میں 4 سیٹوں میں 3 پر کانگریس، ایک سیٹ پر بی جے پی کا قبضہ

      ہندوستان سرکاری کمپنیوں، خلائی صنعتوں، اسٹارٹ اپس اور اداروں کے درمیان ہم آہنگی کے لیے نئی انڈین اسپیس پالیسی پر کام کر رہا ہے۔ وزیر اعظم نے بتایا کہ ہم جلد ہی خلائی شعبے میں کاروبار کرنے میں آسانی کو بہتر بنانے کے لیے ایک پالیسی لانے جا رہے ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: