உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کسانوں کیلئے پی ایم مودی کاپہلابڑاآؤٹ ریچ پروگرام، 16 دسمبر کوzero budget natural farming پر ہوگا خطاب

    وزیر اعظم نریندر مودی 16 دسمبر کو ایک آؤٹ ریچ پروگرام کے ذریعے ملک بھر کے کسانوں تک پہنچیں گے جس میں وہ زیرو بجٹ قدرتی کھیتی (zero budget natural farming) کے فوائد کے بارے میں بات کریں گے۔

    وزیر اعظم نریندر مودی 16 دسمبر کو ایک آؤٹ ریچ پروگرام کے ذریعے ملک بھر کے کسانوں تک پہنچیں گے جس میں وہ زیرو بجٹ قدرتی کھیتی (zero budget natural farming) کے فوائد کے بارے میں بات کریں گے۔

    وزیر اعظم نریندر مودی 16 دسمبر کو ایک آؤٹ ریچ پروگرام کے ذریعے ملک بھر کے کسانوں تک پہنچیں گے جس میں وہ زیرو بجٹ قدرتی کھیتی (zero budget natural farming) کے فوائد کے بارے میں بات کریں گے۔

    • Share this:
      تین زرعی قوانین کو منسوخ کرنے کے فیصلے کے اعلان کے بعد وزیر اعظم نریندر مودی 16 دسمبر کو ایک آؤٹ ریچ پروگرام کے ذریعے ملک بھر کے کسانوں تک پہنچیں گے جس میں وہ زیرو بجٹ قدرتی کھیتی (zero budget natural farming) کے فوائد کے بارے میں بات کریں گے۔ یہ اتر پردیش، پنجاب اور اتراکھنڈ میں اہم اسمبلی انتخابات سے پہلے کیا جائے گا، جہاں کسان ووٹر بڑی تعداد میں پائے جاتے ہیں۔ گجرات میں بھی اگلے سال انتخابات ہونے والے ہیں۔

      اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ وزیراعظم کا پیغام ملک کے کونے کونے تک پہنچے، بی جے پی نے اپنے لیڈروں سے کہا ہے کہ وہ ہر ’منڈل‘ میں تقریب کی اسکریننگ کا اہتمام کریں اور کسانوں کو چائے پر مدعو کریں۔

      وزیراعظم مودی 11 دسمبر کو سریو نہر پروجیکٹ کا افتتاح کرنے بلرام پور میں تھے جہاں انہوں نے کسانوں سے قدرتی کھیتی کو اپنانے پر زور دیا اور انہیں 16 دسمبر کو کرشی وگیان کیندروں پر براہ راست ٹیلی کاسٹ دیکھ کر آؤٹ ریچ پروگرام میں حصہ لینے کی دعوت دی۔

      کسان تحریک ختم کرنے کا اعلان ۔(تصویر:اے پی )۔
      کسان تحریک ختم کرنے کا اعلان ۔(تصویر:اے پی )۔


      بی جے پی ہر ’منڈل‘ کو بھیجی گئی ہدایات کے ساتھ اسے ایک پین انڈیا ایونٹ بنانے کے لیے تیار ہے تاکہ 500 کسانوں کو ایل ای ڈی اسکرینوں پر قدرتی کھیتی کے بارے میں وزیراعظم کی تجاویز دیکھیں اور کیمیکل سے پاک کھیتی کے امکانات سے متاثر ہوں۔ یہ پروگرام ملک بھر کے 741 کرشی وگیان کیندروں پر بھی نشر کیا جائے گا۔

      اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ وزیر اعظم کے پیغامات کسانوں تک پہنچیں، بی جے پی کے قومی جنرل سکریٹری ارون سنہ نے ملک بھر میں بی جے پی کے 55 سینئر رہنماؤں کے ساتھ ایک ورچوئل میٹنگ کی، جن میں کسان مورچہ کے کچھ ریاستی صدور بھی شامل ہیں تاکہ انہیں اس تقریب کے بارے میں آگاہ کیا جا سکے۔

      وہیں 14 دسمبر کو گجرات کے آنند ضلع میں شروع ہونے والی دو روزہ ورکشاپ کے اختتام پر وزیر اعظم مودی کے ترقی پسند کسانوں اور زراعت کے ماہرین سے بات کرنے کی توقع ہے۔ وزیر داخلہ امیت شاہ اور وزیر زراعت نریندر سنگھ تومر کے ساتھ گجرات کے گورنر آچاریہ دیوورت اور ریاست کے وزیر اعلی بھوپیندر پٹیل کے اس پروگرام میں موجود ہونے کی امید ہے۔

      زرعی قوانین کی منسوخی کے باوجود حکومت اب بھی اس بات کو برقرار رکھتی ہے کہ یہ قوانین کسانوں کی فلاح و بہبود کے لیے تھے اور ابتدائی مقصد کے ساتھ اگلے سال تک کسانوں کی آمدنی کو دوگنا کرنے کے لیے ان کے مالی بوجھ کو کم کرنے کے لیے کوئی حل تلاش کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ اس دوران مرکز نے ایک کمیٹی تشکیل دی ہے جو کم از کم امدادی قیمت (ایم ایس پی) کو مزید شفاف اور موثر بنانے اور زیرو بجٹ قدرتی کھیتی کو فروغ دینے پر غور کرے گی۔
      قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔

      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: