உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ملک نے عظیم سپوت کھودیا ، پڑھیں سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپئی کی وفات پرکس نے کیا کہا ؟

    اٹل بہاری واجپئی ۔ فائل فوٹو

    اٹل بہاری واجپئی ۔ فائل فوٹو

    اٹل بہاری واجپئی کی بے مثال قیادت ، دوراندیشی اور شاندار اندازخطابت جیسی خصوصیات انھیں ایک عظیم شخصیت بناتی تھیں ۔انکی عظیم اور محبت سے پر شخصیت ہماری یادوں میں ہمیشہ رہے گی

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      صدر رام ناتھ کووند، نائب صدر ایم وینکیا نائیڈو، وزیر اعظم نریندر مودی، بی جے پی کے صدر امت شاہ، کانگریس صدر راہل گاندھی ، سابق نائب وزیر اعظم لال کرشن اڈوانی، سابق صدر پرنب مکھرجی سمیت متعدد رہنماوں نے سابق وزیر اعظم بھارت رتن اٹل بہاری واجپئی کی موت پر آج گہرے رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ان کی وفات سے ہندوستانی سیاست کے ایک عہدکا خاتمہ ہوگیا اور ملک نے ایک عظیم سپوت کھودیا ہے۔
      صدرجمہوریہ رام ناتھ کووند نے مسٹر واجپئی کے انتقال پر گہرے رنج وغم کا اظہارکرتے ہوئے اپنے تعزیتی پیغام میں کہا،’’ہندستانی سیاست کی عظیم شخصیت مسڑ اٹل بہاری واجپئی کے انتقال سے مجھے گہرادکھ پہنچاہے۔ان کی بے مثال قیادت ،دوراندیشی اور شاندار اندازخطابت جیسی خصوصیات انھیں ایک عظیم شخصیت بناتی تھیں ۔انکی عظیم اور محبت سے پر شخصیت ہماری یادوں میں ہمیشہ رہے گی‘‘۔
      نائب صدر جمہوریہ ایم وینکیا نائیڈو نے کہا کہ ہندوستان نے ایک قیمتی رتن کھودیا ہے۔ انہو ں نے کہا کہ مسٹر واجپئی کی زندگی ایک کھلی کتا ب کی طرح تھی اور وہ نوجوان سیاسی لیڈروں کے لئے قابل تقلید ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ واجپئی ہندوستانی سیاست کے آسمان پر قطب تارہ کے مانند تھے ۔ان کی وفات سے بھارت ماتا نے ایک قیمتی رتن کھودیا ہے۔
      وزیر اعظم نریندر مودی نے ایک سے زیادہ ٹویٹ کے ذریعہ خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ یہ اٹل جی کی مثالی قیادت تھی ، جس نے 21 ویں صدی میں ایک مضبوط، خوشحال اور ہمہ جہت ہندستان کی بنیاد رکھی۔مختلف شعبوں میں ان کی مسقبل رخی پالیسیوں نے ہندستان کے ہر شہری کی زندگی کو متاثر کیا۔ ہندستان اپنے چہیتے اٹل جی کی موت سے غمزدہ ہے ، وہ قوم کے لئے زندہ تھے اور دہائیوں اس کی پوری لگن کے ساتھ خدمت کی۔مسٹر مودی نے کہا کہ بی جے پی کو ایک ایک اینٹ کے ذریعہ انہوں نے کھڑا کیا اور پارٹی کا پیغام ملک بھر میں عام کیا ، جس کی وجہ سے آج بی جے پی قومی سیاست اورکئی ریاستوں میں ایک مضبوط طاقت ہے۔
      سابق صدر پرنب مکھرجی نے اپنے تعزیتی پیغام میں کہا کہ ہندوستان نے ایک عظیم سپوت کھودیا اور اس کے ساتھ ہی ایک عہد کا خاتمہ ہوگیا ہے۔ مسٹر واجپئی اپوزیشن میں ایک منطقی ناقد اور وزیر اعظم کی شکل میں سب کا اتفاق رائے حاصل کرنے والے لیڈر رہے۔
      بی جے پی کے صدر امت شاہ نے کہا مسٹر واجپئی کی وفات صرف بی جے پی کے لئے نہیں بلکہ پورے ملک کے لئے ناقابل تلافی نقصان ہے۔ انہوں نے کہا کہ اپنے نقطہ نظر کے تئیں لگن اور ایک سویم سیوک اور تنظیم کے ایک ڈسپلن ورکر کے طورپر بھی اٹل جی کی زندگی ہم سب کو حوصلہ دیتی رہے گی۔
      بی جے پی کے سابق صدر اور سابق نائب وزیر اعظم لال کرشن اڈوانی نے کہا کہ واجپئی کی کمی بہت محسوس کی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ میرے پاس اپنا دکھ اورغم ظاہر کرنے کے لئے کوئی لفظ نہیں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میں ان کے ساتھ طویل مدت تک کام کیا اوراس کی یادیں میرے لئے قیمتی سرمایہ ہیں ۔ جب ہم آر ایس ایس کے پرچارک تھے ، جب ہم جن سنگھ میں آئے،ایمرجنسی کے سیاہ دور میں جدوجہد سے لے کر جنتا پارٹی کی تشکیل اور بعد میں بی جے پی کے قیام تک ہم نے مل کر کام کیا۔
      مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے واجپئی کو تمام سیاسی جماعتوں کے لئے قابل قبول رہنما قرا ردیا۔ مسٹر سنگھ نے کہا کہ واجپئی جی نے ایک ایسے ترقی یافتہ اور طاقت ور ہندوستان کا خواب دیکھا تھا ، جس میں تمام لوگ مل کر امن اور خیر سگالی کے ساتھ رہیں۔
      کانگریس کے صدر راہل گاندھی نے واجپئی کے انتقال پر گہرے رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ملک نے آج ایک عظیم سپوت کھو دیا ہے۔انہوں نے کہا کہ لاکھوں لوگ ان کا احترام کرتے تھے اور ہمیں ان کی بہت یاد آئے گی۔
      راجستھان کے گورنر کلیان سنگھ نے کہا کہ واجپئی کی موت ملک کے لئے ناقابل تلافی نقصان ہے ۔راجستھان کانگریس کمیٹی کے صدر سچن پائلٹ نے کہا کہ مسٹر واجپئی عظیم رہنما تھا ، جنہوں نے سیاست میں اصولوں اور اقدار کی کافی اہمیت دی ۔
      بہار کے وزیر اعلی نتیش کمار نے مسٹر واجپئی کی موت سے ملک ایک اہم سیاسی شخصیت سے محروم ہوگیا۔ وہ اپنے سیاسی قدروں، اصولوں اور آدرشوں کی بنیاد پر عوامی زندگی کی بلندی پر پہنچے۔
      ہریانہ کے وزیر اعلی منوہر لال کھٹر نے کہا کہ مسٹر واجپئی کی موت سے ملک نے ایک ہمہ جہت صلاحیت والی شخصیت کو کھودیا ہے ، جو ہمیشہ غریبوں اورضرورت مندوں کے ساتھ کھڑے تھے۔
      مغربی بنگال کی وزیر اعلی ممتا بنرجی نے مسٹر واجپئی کی موت پر تعزیت کااظہار کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان کی موت ہمارے ملک کے لئے بہت بڑا نقصان ہے۔ میں ان سے وابستہ یادوں کو ہمیشہ محفوظ رکھوں گی۔
      شرومنی اکالی دل کے رہنما اورپنجاب کے سابق وزیراعلی پرکاش سنگھ بادل اور ان کے بیٹے اورسابق نائب وزیر اعلی سکھ بیر سنگھ بادل نے بھی مسٹر واجپئی کی وفات پر تعزیت کا اظہار کیا ہے۔

      First published: