ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

سی بی ایس ای پیپر لیک: میں طلبہ کے درد کو سمجھتا ہوں، پوری رات سو نہیں سکا: جاوڑیکر

نئی دہلی۔ سی بی ایس ای کی 10 ویں اور 12 ویں کلاس کے پیپر لیک معاملہ میں دہلی کے ایک کوچنگ ادارے کے ملوث ہونے کی بات سامنے آئی ہے۔

  • Share this:
سی بی ایس ای پیپر لیک: میں طلبہ کے درد کو سمجھتا ہوں، پوری رات سو نہیں سکا: جاوڑیکر
پرکاش جاوڈیکر : فائل فوٹو

نئی دہلی۔ سی بی ایس ای کی 10 ویں اور 12 ویں کلاس کے پیپر لیک معاملہ میں دہلی کے ایک کوچنگ ادارے کے ملوث ہونے کی بات سامنے آئی ہے۔ اس معاملہ میں سی بی ایس ای نے دہلی پولیس کو خط لکھا ہے۔ سی بی ایس ای کے علاقائی ڈائریکٹر کی طرف سے لکھے گئے خط میں کہا گیا کہ کسی نے انہیں 23 مارچ کو فیکس کیا، جس میں پیپر لیک معاملہ میں وکی نام کے ایک شخص کا ہاتھ ہونے کی بات کہی گئی ہے۔ وکی دلی کے راجندر نگر کے سیکٹر 8 میں کوچنگ انسٹی ٹیوٹ چلاتا ہے۔ شکایتی خط میں بورڈ کو بتایا گیا کہ پیپر لیک میں راجندر نگر کے دو اسکول بھی شامل ہیں۔


اس معاملہ پر پریس کانفرنس کرکے پرکاش جاوڈیکر نے کہا کہ یہ بہت بدقسمتی کی بات ہے۔ میں والدین اور طالب علموں کے درد کو سمجھ سکتا ہوں۔ میں بھی نہیں سو سکا۔ اس پیپر لیک معاملہ میں جو بھی قصوروار ہوں گے انہیں بخشا نہیں جائے گا۔


فروغ انسانی وسائل کے مرکزی وزیر جاوڈیکر نے کہا کہ پولیس جلد ہی مجرموں کو اپنی گرفت میں لے لے گی۔ ایس ایس سی کے معاملے میں پولیس نے جس طرح سے ملزموں کو گرفتار کیا ہے ویسے ہی اس معاملہ میں بھی گرفتاری ہو گی۔


انہوں نے مزید کہا کہ سپریم کورٹ نے بھی سی بی ایس ای کی تعریف کی ہے۔ ہم اس کی تہہ تک جائیں گے۔ ہم اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ آگے سے کوئی ایسی دھوکہ دھڑی نہیں ہوگی۔ ہم نظام کو بہتر بنائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ سی بی ایس ای جلد ہی پیر یا منگل کو نئی تاریخوں کا اعلان کرے گی۔

وہیں، سی بی ایس ایس پیپر لیک کیس میں کانگریس نے مرکزی حکومت سے جمعرات کو کئی سوالات پوچھے ہیں۔ اس معاملے میں حکومت پر بڑا حملہ کرتے ہوئے کانگریس نے کہا کہ سرکاری تحفظ میں پیپر لیک ہو رہا ہے۔ کانگریس کے رہنما رندیپ سرجیوالا نے کہا، ویاپم اور ایس ایس سی کے بعد سی بی ایس ای کے تین پیپر لیک ہو گئے ہیں۔ طالب علموں کی مانیں تو ابھی کچھ اور پیپر لیک ہونے کا اندیشہ ہے۔  2017 میں 12 ویں کلاس کے امتحان میں بھی شکایت موصول ہوئی تھی۔ سرجیوالا نے پوچھا، کیا وجہ ہے کہ سی بی ایس ای کے چیئرمین کا عہدہ گزشتہ دو سالوں سے خالی پڑا تھا؟
First published: Mar 29, 2018 02:50 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading