உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    عصمت دری متاثرہ کا اسقاط حمل کرنے کے سبب کانگریس کی خاتون لیڈر گرفتار

    یہ ایکٹ بچوں کو جنسی طور پر ہراساں کرنا، سیکسوئل حملہ اور پونوگرافی جیسے سنگین جرائم سے تحفظ دیتا ہے۔

    یہ ایکٹ بچوں کو جنسی طور پر ہراساں کرنا، سیکسوئل حملہ اور پونوگرافی جیسے سنگین جرائم سے تحفظ دیتا ہے۔

    ممبئی پولیس ملزم سروج کشیپ کو اپنے ساتھ ممبئی لے گئی ہے۔ الزام ہے کہ خاتون لیڈرنے کچھ ماہ قبل اسقاط حمل کیا تھا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
      عصمت دری متاثرہ کا اسقاط حمل کرنے میں خاتون کانگریس کی ضلع صدر سروج کشیپ دھریا کو ممبئی پولیس نے پرتاپ گڑھ سے گرفتار کیا ہے۔ ممبئی پولیس ملزم سروج کشیپ کو اپنے ساتھ ممبئی لے گئی ہے۔ الزام ہے کہ خاتون لیڈرنے کچھ ماہ قبل اسقاط حمل کیا تھا۔ ملزم کے گرفت میں آنے کے بعد پولیس نے کانگریس لیڈر کے گھر جاکر اسے گرفتار کر لیا۔

      دراصل، مہاراشٹر کے ورار ضلع کے پال گھر کی رہنے والی ایک لڑکی کے ساتھ سبزی بیچنے والے پون دھریا کے بیٹے چھوٹے لال دھریا رہائشی شاہ بری تھانہ  سانگی پور نے  6 ماہ قبل عصمت دری کی تھی۔ پال گھر تھانہ کے سب انسپیکٹر چندرکانت پاٹل نے بتایا کہ لڑکی کو ورغلا کر پون اس کے ساتھ جنسی تعلقات بناتا رہا۔

      دو ماہ قبل لڑکی حاملہ ہو گئی۔ آپ کو بتا دیں کہ لڑکی بھی پرتاپ گڑھ ضلع کی ہی رہنے والی ہے، ملزم پون کچھ ماہ قبل خاندان کے اراکین کو ورغلا کر اسے اپنے ساتھ یہاں لے آیا۔ وہ اسے 363 کٹرا روڈ کانپور میں رہنے والی کانگریس لیڈر سروج کشیپ دھریا  کی بیوی رام کمار دھریا کے پاس لے گیا۔ جہاں سروج دھریا نے عصمت دری متاثرہ کا اسقاط حمل کر دیا۔ بتا دیں کہ سروج جھولا چھاپ ڈاکٹر ہے اور اپنی کلینک بھی چلاتی ہے۔

      اسقاط حمل کے بعد لڑکی کی صحت خراب ہوئی جس کے سبب لڑکی کے خاندان والوں کو شک ہوا۔ اہل خانہ کی پوچھ گچھ کے بعد اس نے آپ بیتی سنائی۔ متاثرہ لڑکی کے والد نے پالگھر تھانہ میں ملزم پون کے خلاف عصمت دری اور اسقاط حمل کرانے کا مقدمہ درج کرایا۔

       
      First published: