اپنا ضلع منتخب کریں۔

    جب مرکز میں ’ بھائی‘ کی سرکار ہے تو رام مندر تحریک کی ضرورت نہیں: توگڑیا

    لکھنؤ۔  وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی) نے پہلے سے اپنے اعلان شدہ موقف کے برعکس اجودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لئے تحریک نہ چلانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ اس کے لئے پارلیمنٹ میں تمام سیاسی پارٹیاں مل کر ایک قانون بنائیں۔

    لکھنؤ۔ وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی) نے پہلے سے اپنے اعلان شدہ موقف کے برعکس اجودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لئے تحریک نہ چلانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ اس کے لئے پارلیمنٹ میں تمام سیاسی پارٹیاں مل کر ایک قانون بنائیں۔

    لکھنؤ۔ وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی) نے پہلے سے اپنے اعلان شدہ موقف کے برعکس اجودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لئے تحریک نہ چلانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ اس کے لئے پارلیمنٹ میں تمام سیاسی پارٹیاں مل کر ایک قانون بنائیں۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      لکھنؤ۔  وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی) نے پہلے سے اپنے اعلان شدہ موقف کے برعکس اجودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لئے تحریک نہ چلانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ اس کے لئے پارلیمنٹ میں تمام سیاسی پارٹیاں مل کر ایک قانون بنائیں۔ وی ایچ پی کے بین الاقوامی صدر ڈ اکٹر پروین توگڑیا نے  یہاں مذہب تحفظ فنڈ کے لئے چندہ کے پروگرام کی افتتاحی تقریب میں کہاکہ  جب مرکز میں بھائی کی سرکار ہے تو رام مندر تحریک کی ضرورت نہیں۔ انہوں نے کہا کہ رام مندر کوئی سیاسی مسئلہ نہیں ہے۔ اتر پردیش اسمبلی کے لئے آئندہ سال ہونے والے انتخابات کے پیش نظر اس مسئلے پر کوئی تحریک نہیں چلائیں گے"۔


      پروین توگڑیا کا کہنا تھا کہ "اجودھیا میں رام مندر کی تعمیر کا راستہ ہموار کرنے کے لئے تمام پارٹیوں کو مل کر پارلیمنٹ میں ایک قانون بنانا چاہئے۔ جس طرح سردار ولبھ بھائی پٹیل نے سومناتھ مندر بنانے کے لئے کام کیا تھا، اجودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لئے بھی اسی طرز پر کام ہونا چاہئے"۔ مسٹر توگڑیا نے کہا کہ" مرکز میں اب ہماری حکومت ہے ، جبکہ ریاست میں مخالف سرکار ہے۔ تاہم، اب اس مسئلے پر تحریک کی ضرورت نہیں ہے۔ اکھلیش بھیا ! رام مندر تحریک کی فکر چھوڑ کر لوگوں کو روزگار دینے کے لئے کام کریں۔ خواہ کوئی بھی اس کی مخالفت کیوں نہ کرے، رام مندر کی تعمیر قانونی راہ پر چل کر ہی ہونی چاہئے"۔ انہوں نے کہا کہ "یہ سیاست کا نہیں، دھرم کا معاملہ ہے۔ مجھے یقین ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی اس مسئلے پر غور کرکے اجودھیا میں رام مندر بنانے کے لئے پارلیمنٹ سے قانون پاس کرنے کی پہل کریں گے"۔


      اس موقع پر دارالحکومت لکھنؤ میں مذہب حفاظت فنڈ کے پروگرام کا آغاز کرتے ہوئے وی ایچ پی کے سربراہ نے کہا کہ ملک کے تقریبا 40 کروڑ غریب ہندوؤں کو تعلیم، صحت اور روزگار دینے کے لئے سب کو آگے آنا چاہئے۔

      First published: