உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Cryptocurrency: نجی کریپٹو کرنسیوں سے صارفین کے تحفظ کو فوری خطرات لاحق، RBI کی سالانہ رپورٹ جاری

    نجی کریپٹو کرنسیوں سے صارفین کے تحفظ کے لیے فوری طور پر خطرات لاحق ہوں گے۔

    نجی کریپٹو کرنسیوں سے صارفین کے تحفظ کے لیے فوری طور پر خطرات لاحق ہوں گے۔

    آر بی آئی کی تازہ ترین رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ’’نجی کریپٹو کرنسی سے صارفین کا تحفظ خطرہ میں پڑسکتا ہے۔ وہیں اس سے اینٹی منی لانڈرنگ (AML) اور دہشت گردی کی مالی اعانت (CFT) کا مقابلہ کرنے کے لیے فوری خطرات لاحق ہیں۔ یہ کرنسی دھوکہ دہی اور قیمتوں میں جلد اتار چڑھاؤ کا بھی شکار ہے‘‘۔

    • Share this:
      ریزرو بینک آف انڈیا (RBI) نے بدھ کو جاری کردہ اپنی مالیاتی استحکام کی رپورٹ میں کہا کہ نجی کریپٹو کرنسیز (Private Cryptocurrencies) صارفین کے تحفظ کے لیے فوری طور پر خطرات کا باعث بنتی ہیں اور دھوکہ دہی اور قیمتوں میں انتہائی اتار چڑھاؤ کا شکار ہوتی ہیں۔ تازہ ترین رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ پوری دنیا میں نجی کرپٹو کرنسیوں کے پھیلاؤ نے ریگولیٹرز اور حکومتوں کو متعلقہ خطرات سے آگاہ کیا ہے۔

      آر بی آئی کی تازہ ترین رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ’’نجی کریپٹو کرنسی سے صارفین کا تحفظ خطرہ میں پڑسکتا ہے۔ وہیں اس سے اینٹی منی لانڈرنگ (AML) اور دہشت گردی کی مالی اعانت (CFT) کا مقابلہ کرنے کے لیے فوری خطرات لاحق ہیں۔ یہ کرنسی دھوکہ دہی اور قیمتوں میں جلد اتار چڑھاؤ کا بھی شکار ہے‘‘۔ اس میں کہا گیا کہ طویل مدتی خدشات جیسے سرمائے کے بہاؤ کا انتظام، مالیات اور جزوی معیشت کا استحکام، مانیٹری پالیسی کی ترسیل اور کرنسی کے متبادل سے متعلق ہیں۔

      غیر قانونی سرمایہ کاری:

      رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ان کرنسیوں سے نئی غیر قانونی فائنانسنگ کی قسمیں ابھرتی رہتی ہیں، جس میں ورچوئل سے ورچوئل لیئرنگ (virtual-to-virtual layering) اسکیموں کا بڑھتا ہوا استعمال ہوگا۔ جو نسبتاً آسان، سستے اور گمنام انداز میں مزید خراب اور مشکوک لین دین میں اضافہ ہوگا۔

      کرپٹو کرنسی اینڈ ریگولیشن آف آفیشل ڈیجیٹل کرنسی بل 2021 لوک سبھا بلیٹن-پارٹ II میں 22 دسمبر کو ختم ہونے والے پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس میں متعارف کرانے کے لیے شامل کیا گیا تھا۔ بلیٹن کے مطابق یہ بل آر بی آئی کے ذریعہ جاری کی جانے والی سرکاری ڈیجیٹل کرنسی سے متعلق فریم ورک بنانے کے لیے وضع کی گئی ہے۔




      مذکورہ بل کے تحت ہندوستان میں تمام نجی کریپٹو کرنسیز پر پابندی لگانے کی بات کہی گئی ہے۔ تاہم یہ کریپٹو کرنسیز کی بنیادی ٹیکنالوجی اور اس کے استعمال کو فروغ دینے کے لیے کچھ مستثنیات کی اجازت دیتا ہے۔ سرفہرست 100 کرپٹو کرنسیوں کی مجموعی مارکیٹ کیپٹلائزیشن 2.8 ڈالر ٹریلین تک پہنچ گئی ہے۔


      قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔

      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: