ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

جامعہ ملیہ اسلامیہ میں میڈیکل کالج کا قیام ، نئے شعبے کھولنا، چھوٹے شعبوں کی توسیع اور معیاری تعلیم میری ترجیحات میں شامل: پروفیسر طلعت احمد

جامعہ ملیہ اسلامیہ کے وائس چانسلر پروفیسر طلعت احمد نے کہا ہے کہ جامعہ میں میڈیکل کالج کا قیام ، نئے شعبے کھولنا، چھوٹے شعبے کی توسیع اور معیاری تعلیم ان کی ترجیحات میں شامل ہیں۔

  • UNI
  • Last Updated: Jul 31, 2016 02:36 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
جامعہ ملیہ اسلامیہ میں میڈیکل کالج کا قیام ، نئے شعبے کھولنا، چھوٹے شعبوں کی توسیع اور معیاری تعلیم میری ترجیحات میں شامل: پروفیسر طلعت احمد
جامعہ کے وائس چانسلر پروفیسر طلعت احمد: فائل فوٹو

نئی دہلی۔  جامعہ ملیہ اسلامیہ کے وائس چانسلر پروفیسر طلعت احمد نے کہا ہے کہ جامعہ میں میڈیکل کالج کا قیام ، نئے شعبے کھولنا، چھوٹے شعبے کی توسیع اور معیاری تعلیم ان کی ترجیحات میں شامل ہیں۔ یہ بات انہوں نے حالیہ دنوں میں جامعہ کی خالی کرائی زمین کے بارے میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہی۔ انہوں نے زمین کی کمی اور اس سے ہونے و الی دشواریوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ اس سے جامعہ کو نئے نئے شعبے کھولنے،چھوٹے شعبے کی توسیع اور دوسرے سنٹر کھولنے میں مدد ملے گی جس سے نہ صرف جامعہ کے ارد گرد رہنے والوں بلکہ ملک کے دیگر حصوں کے طلبہ کو بہت فائدہ پہنچے گا۔


جامعہ کی جائیداد  پرقبضے خالی کرانے سے متعلق ایک سوال کے جواب میں وائس چانسلر نے کہا کہ ابھی حال ہی میں بٹلہ ہاؤس بس اسٹینڈ کے پاس جامعہ کی ایک بڑی زمین خالی کرائی گئی ہے۔اس پر  2006میں سپریم کورٹ کا فیصلہ آگیا تھا لیکن خالی نہیں کرایا جاسکا تھا۔ ہم نے اس سلسلے میں کوشش کی اور پھر سے سپریم کورٹ سے آرڈر نکلوایا اور انتظامیہ پر دباؤ ڈال کراس زمین کو خالی کرایا گیا۔ اس کو خالی کرانے میں تین دن لگے۔ اس دوران ہمیں پولیس نے کافی مدد کی اور لیفٹننٹ گورنر نجیب جنگ صاحب کا بھی ہمیں تعاون حاصل رہا۔ واضح رہے کہ یہ زمین  نوم چوسکی بلڈنگ سے متصل ہے۔ انہوں نے کہاکہ ایسی کئی زمینیں ہیں جسے خالی کرانے کی کوشش کی جائے گی۔ جامعہ کے پاس جگہ کی قلت ہے جس کی وجہ سے بہت سے شعبے شروع نہیں کرائے جاسکے ہیں۔ اس زمین کے ملنے سے جہاں این سی سی اور این ایس ایس کے بچوں کو ماک ڈرل کرنے کا موقع ملے گا وہیں اس زمین کا استعمال بہت سے نئے شعبے کھولنے میں کیا جاسکتا ہے۔


انہوں نے یو این آئی سے خصوصی بات چیت میں کہا کہ جامعہ میں نیا شعبہ سنسکرت اور ڈایزاسٹر منیجمنٹ کا کھولا گیا ہے۔ اس کے علاوہ یونیورسٹی گرانٹ کمیشن اور انسانی وسائل کے فروغ کی وزارت سے درخواست کی گئی ہے کہ وہ ہمیں نئے نئے شعبے دیں اور اس شعبے کی توسیع کی درخواست کی گئی جو شعبے چھوٹے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جامعہ کا ویژن ہے کہ آئندہ برسوں میں میڈیکل کالج کھولیں ۔ یہاں ایک میڈیکل کالج کی سخت  ضرورت ہے  اور جامعہ میں میڈیکل کالج کھلنے سے جامعہ کی ایک کمی پوری ہوجائے گی۔ انہوں نے کہاکہ یہاں دو بڑے بڑے ہاسپٹل ہیں لیکن دونوں میں مہنگا علاج ہونے کی وجہ سے یہاں کے لوگوں کو سخت دشواریوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ کالج کے قیام سے یہاں کے لوگوں کی ایک بڑی ضرورت نہ صرف پوری ہوجائے گی بلکہ لوگوں کا سستا علاج بھی حاصل ہوجائے گا۔ وائس چانسلر نے کہا کہ جامعہ کے قریب پہاڑی کی زمین ہے جہاں دہلی حکومت اور اترپردیش کے درمیان بات چیت چل رہی ہے اور دونوں کو ملکر زمین دینے کا فیصلہ کرنا ہے۔ جامعہ کے پاس سارے فیکلٹیز ہیں سوائے میڈیکل کے۔ لیکن اس سمت میں ایک کوشش کامیاب ہوئی ہے اور وزارت آیوش کے ساتھ ملکر ایک یونانی ڈسپنری کھولی گئی ہے۔


مسٹر طلعت احمد نے کہا کہ اسی کے ساتھ حکیم اجمل خاں کے نام سے ایک سنٹر کھولا گیا ہے جہاں یونانی طب کی تعلیم دی جائے گی۔ جامعہ میں تعلیم حاصل کرنے کے سلسلے میں طلبہ کے شوق کے پیش نظر پروفیسرطلعت احمد نے کہاکہ سارے طلبہ کو داخلہ دینا ممکن نہیں ہے۔ اس لئے جامعہ نے فاصلاتی تعلیم کا سلسلہ شروع کیا ہے اور ملک کے دوردراز علاقے میں اس کے سنٹر کھولے جارہے ہیں تاکہ وہاں وہ ایگزام میں حصہ لے سکیں۔ اسی کے ساتھ انہو ں نے کہا کہ 2020میں جامعہ ملیہ اسلامیہ کا صد سالہ جشن نہایت دھوم دھام سے منایا جائے گا اور جامعہ کا ویژن ڈاکو منٹ بھی جاری کیا جائے گا۔

First published: Jul 31, 2016 02:26 PM IST