உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پبلک ہیلتھ کیلئے عوامی بیداری ازحد ضروری، روبرو پلیٹ فارم کے ذریعہ لوگوں تک پہنچنے کی کوشش

    نئی دہلی ۔ پبلک ہیلتھ کے ساتھ ساتھ اردو میڈیا کی اہمیت اور اس کے مسائل کو مد نظر رکھتے ہوئے قومی خواتین کمیشن کی رکن ثمینہ شفیق نے ’’روبرو‘‘ کے نام سے ایک پلیٹ فارم تیار کیا ہے ۔

    نئی دہلی ۔ پبلک ہیلتھ کے ساتھ ساتھ اردو میڈیا کی اہمیت اور اس کے مسائل کو مد نظر رکھتے ہوئے قومی خواتین کمیشن کی رکن ثمینہ شفیق نے ’’روبرو‘‘ کے نام سے ایک پلیٹ فارم تیار کیا ہے ۔

    نئی دہلی ۔ پبلک ہیلتھ کے ساتھ ساتھ اردو میڈیا کی اہمیت اور اس کے مسائل کو مد نظر رکھتے ہوئے قومی خواتین کمیشن کی رکن ثمینہ شفیق نے ’’روبرو‘‘ کے نام سے ایک پلیٹ فارم تیار کیا ہے ۔

    • Pradesh18
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی ۔ پبلک ہیلتھ کے ساتھ ساتھ اردو میڈیا کی اہمیت اور اس کے مسائل کو مد نظر رکھتے ہوئے قومی خواتین کمیشن کی رکن ثمینہ شفیق نے ’’روبرو‘‘ کے نام سے ایک پلیٹ فارم تیار کیا ہے ۔ سوشل میڈیا اور دیگر ذرائع سے ثمینہ شفیق عوام تک اس کے ذریعہ پہونچنے کی کوشش کر رہی ہیں۔ ’’پاور فائونڈیشن‘‘ کے زیر اہتمام چلائے جانے والے اس پروجیکٹ کو انہوں نے تاریخی بتاتے ہوئے کہاکہ اس پروجیکٹ کے ذریعہ وہ ان لوگوں تک پہونچنے کی کوشش کریںگی جو سماج کی آخری صف میں کھڑے ہیں۔ ثمینہ شفیق نے بتایا کہ اردو اخبار بلاشبہ ان لوگوں کی ترجمانی کرتے ہیں جن کی آواز یا تو دبا دی جاتی ہے یا ان کی آواز کو قومی میڈیا میں زیادہ اہمیت نہیں دی جاتی ہے ۔ ثمینہ شفیق نے بتایا کہ روبرو پلیٹ فارم انہوں نے اس لئے تیار کیا ہے تاکہ وہ سماج کے اس طبقہ تک پہونچ سکیں اور اس کے من جملہ مسائل اور صحت کے مسائل سے خصوصی طور سے واقف ہوسکیں اور اس کے حل کیلئے لائحہ عمل بھی تیار کریں ۔


      ثمینہ شفیق نے بتایاکہ سماج میں بہت سے مسائل ایسے ہیں جو صرف بیداری سے حل کئے جاسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر سماج کو صرف صفائی سے متعلق بیدار کردیا جائے تو بیشتر مسائل حل ہوسکتے ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ اگر سماج کو کھانا کھانے سے پہلے اور کھانا کھانے کے بعد ہاتھ دھونے اور اس کو کھانے کے برتنوں کی صفائی اور گائوں دیہات میں نلوں کے اردگرد کی صفائی ، محلہ چوپال کے ارد گرد کی صفائی جیسی بنیادی چیزوں سے واقف کرادیا جائے تو سماج صحت مند ہوسکتا ہے ۔ ثمینہ نے بتایا کہ ان چیزوں سے وہی لوگ ناواقف ہیں جو سماج کی آخری صف میں ہیں اس لئے روبر و پلیٹ فارم کے ذریعہ ان تک پہونچنے کی ان کی کوشش ہے ۔


      ان کا کہنا تھا کہ سماج نے کبھی بھی صحت کے مسائل کو ترجیحات پر نہیں رکھا اور یہی معاملہ تعلیم کا بھی ہے ۔ تعلیم کے معاملہ میں سماج میں کچھ بیداری ضرور آئی ہے لیکن صحت کا معاملہ آج بھی ترجیحات سے غائب ہے ۔ ایسا لگتا ہے جیسے لوگ بیماری کا انتظار کرتے ہوں ۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے بتایاکہ اردو میڈیا اس لئے ضروری ہے کیونکہ اردو میڈیا سماج کے اس طبقہ تک پہونچتا ہے جہاں دوسرے میڈیا کی پہونچ نہیں ہے ۔


      First published: