உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    نوجوت سنگھ سدھو نے استعفی کے بعد جاری کیا ویڈیو،  حق اور سچ کیلئے جاری رہے گی جدوجہد، میری لڑائی نجی نہیں

    Youtube Video

    سدھو نے کہا ، "میرا مقصد لوگوں کی زندگیوں میں تبدیلی لانا ، میرے فیصلوں پر ثابت قدم رہنا اور لوگوں کی زندگی کو بہتر بنانا ہے۔ میں اپنی اخلاقیات ، اخلاقی اتھارٹی پر سمجھوتہ نہیں کر سکتا۔ جو میں دیکھ رہا ہوں وہ پنجاب میں مسائل ، ایجنڈے کے ساتھ سمجھوتہ ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
      نوجوت سنگھ سدھو  (Navjot Singh Sidhu)  میڈیا سے روبرو ہوئے۔ پی سی سی صدر کے عہدے کے استفعی کے بعد میڈیا سے خطاب کرتے ہوئے سدھو نے پنجاب کے ایجنڈے لیے لڑائی جاری رکھنے کے عزم کا اظہار کیا۔ سدھو نے کہا کہ وہ حق اور سچ کے لیے جدوجہد جاری رکھیں گے۔ سدھو کے مطابق حق کی لڑائی میں عہدہ کوئی معنی نہیں رکھتا۔ انہوں نے واضح کیا کہ مرکزی قیادت کو نہ گمراہ کروں گا نہ گمراہ کرنے دوں گا۔ میرے سیاسی کیرئیر کے 17 سال ایک مقصد کے لیے رہے ہیں۔

      سدھو نے کہا ، "میرا مقصد لوگوں کی زندگیوں میں تبدیلی لانا ، میرے فیصلوں پر ثابت قدم رہنا اور لوگوں کی زندگی کو بہتر بنانا ہے۔ میں اپنی اخلاقیات ، اخلاقی اتھارٹی پر سمجھوتہ نہیں کر سکتا۔ جو میں دیکھ رہا ہوں وہ پنجاب میں مسائل ، ایجنڈے کے ساتھ سمجھوتہ ہے۔ میں نے ایک لمبے عرصے تک پنجاب کے مسائل کے لیے جدوجہد کی، داغی لیڈروں ، عہدیداروں کا ایک نظام تھا ، اب آپ دوبارہ وہی نظام نہیں دہرا سکتے میں اپنے اصولوں پر قائم رہوں گا۔ '


      سدھو نے کہا ، 'میری لڑائی مدعے ، مسائل کی ہے۔ میری لڑائی ایک ایجنڈے کے لیے ہے۔ میں حق اور سچ کی جنگ لڑتا رہا۔ میرے والد نے ہمیشہ مجھے سکھایا ہے کہ اگر دو راستے ہیں تو ہمیشہ سچ کا ساتھ دیں۔ اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر 4.39 منٹ کی ویڈیو میں سدھو نے کہا ، 'میں نہ تو ہائی کمان کو گمراہ کر سکتا ہوں اور نہ ہی اپنے آپ کو گمراہ کروں گا۔ میں پنجاب کے لوگوں کے لیے بہتر زندگی کی جنگ کے لیے کچھ بھی قربان کروں گا۔ داغدار لیڈروں اور افسران کو واپس لا کر دوبارہ موقع نہیں دیا جا سکتا۔ میں اس کی مخالفت کرتا ہوں۔ ' سدھو نے کہا کہ جنہوں نے ماؤں کی گودیں سونی کیں انہیں محافظ نہیں بنایا جا سکتا۔

      بتادیں کہ نوجوت سنگھ سدھو نے منگل کو پنجاب پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا اور اپنی پارٹی کے کئی ارکان کو ساتھ لے لیا ۔ تاہم پارٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ ان کا استعفیٰ قبول نہیں کیا گیا اور پارٹی قیادت معاملہ کو حل کرنے کی کوشش کرے گی ۔ کانگریس نے ایک بیان میں کہا کہ ریاستی قیادت سے کہا گیا ہے کہ وہ اس معاملہ کو پہلے اپنی سطح پر حل کرے ۔ سدھو نے اس سال جولائی میں پارٹی کے ریاستی صدر کا عہدہ سنبھالا تھا ۔

      نوجوت سنگھ سدھو نے کانگریس کی عبوری صدر سونیا گاندھی کو بھیجے گئے اپنے استعفیٰ میں لکھا تھا کہ ایک انسان کے کردار کا زوال سمجھوتے سے شروع ہوتا ہے۔ میں پنجاب کے مستقبل اور بھلائی کے ساتھ کبھی سمجھوتہ نہیں کرسکتا۔ ایسے میں، میں پنجاب کانگریس صدر کے عہدے سے استعفیٰ دیتا ہوں۔ میں کانگریس کے لئے کام کرتا رہوں گا‘۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: