உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    گجرات میں دلتوں پر مظالم پر بولتے ہوئے راج ناتھ نے کی ریاستی حکومت کی تعریف، مچا ہنگامہ

    نئی دہلی۔ گجرات کے اونا میں دلتوں کی پٹائی کے معاملے میں مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے بدھ کو پارلیمنٹ میں حکومت کا موقف رکھا۔

    نئی دہلی۔ گجرات کے اونا میں دلتوں کی پٹائی کے معاملے میں مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے بدھ کو پارلیمنٹ میں حکومت کا موقف رکھا۔

    • Share this:
      نئی دہلی۔ گجرات کے اونا میں دلتوں کی پٹائی کے معاملے میں مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے بدھ کو پارلیمنٹ میں حکومت کا موقف رکھا۔ راج ناتھ نے کہا کہ 11 جولائی کو جو بھی واقعہ ہوا اس کی سخت الفاظ میں مذمت ہونی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم بیرون ملک کے دورے پر تھے (راج ناتھ کے ایسا بولتے ہی اپوزیشن ارکان نے چلانا شروع کر دیا)، پی ایم نے آتے ہی مجھے فون کر کے معلومات حاصل کی۔

      وزیر داخلہ نے کہا کہ سومناتھ کے اس علاقے میں  متاثرین مردہ گائے سے اس کی چمڑی اتار رہے تھے، جبکہ ملزمان نے اسی وقت آ کر انہیں مارنا شروع کر دیا۔ ملزمان کے خلاف مقدمہ درج ہو گیا ہے اور اب تک 9 افراد کو گرفتار کیا گیا ہے۔ ان میں سے 7 لوگوں کو عدالتی حراست میں بھیج دیا گیا ہے۔ اب تک 4 پولیس افسران کو ڈیوٹی میں غفلت برتنے کے لئے معطل کر دیا گیا ہے۔

      راج ناتھ نے بتایا کہ پوری جانچ سی بی سی آئی ڈی کے حوالے کر دی گئی ہے۔ ریاستی حکومت کوشش کر رہی ہے کہ اس کی سماعت کے لئے اسپیشل کورٹ بنایا جائے۔ تمام متاثرین کا خرچ ریاستی حکومت اٹھا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں گجرات حکومت کو اس کی مبارکباد دینا چاہتا ہوں کہ اس واقعہ کے بعد جتنی تیزی سے کارروائی کی وہ بہت اچھی ہے (راج ناتھ کے ایسا کہتے ہی اپوزیشن کے ارکان ہنگامہ کرنے لگے، راج ناتھ نے کہا کہ آج میں آپ کے ہنگامے کہ وجہ سے بیٹھوں گا نہیں- میں کھڑا ہی رہوں گا)۔
      First published: