ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

شاہین باغ میں رقم کی گئی تاریخ، ہزاروں کی تعدادمیں لوگوں نے منایا یوم جمہوریہ کا جشن

شاہین باغ میں71 ویں یوم جمہوریہ کےموقع پر'شاہین باغ کی دادیاں' کے ہاتھوں پرچم کشائی کی گئی۔ اس موقع پر ہزاروں کی تعدادمیں لوگ یہاں موجودرہے۔ آج صبح سے ہی مختلف مذاہب کےلوگ بڑی تعدادمیں جمع ہوئے اورتاریخ رقم کرتے ہوئےقومی یکجہتی کا پیغام دیا۔

  • Share this:
شاہین باغ میں رقم کی گئی تاریخ، ہزاروں کی تعدادمیں لوگوں نے منایا یوم جمہوریہ کا جشن
شاہین باغ میں ہزاروں کی تعدادمیں لوگوں نے یوم جمہوریہ کا جشن منایا۔

شہریت ترمیمی قانون اور این آر سی کی مخالفت میں تقریباً 40 دنوں سے احتجاج کرکے پوری دنیا میں توجہ کا مرکز بن چکے دارالحکومت دہلی کے جامعہ نگرکے شاہین باغ علاقے اور جامعہ ملیہ اسلامیہ میں یوم جمہوریہ کا جشن بہت دھوم دھام اور جوش وخروش کے ساتھ منایا گیا۔ شاہین باغ اور رات کے وقت 12 بجتے ہی قومی گیت کے ساتھ جشن کا ماحول شروع ہوا، جو پوری رات جاری رہا۔ اس کےبعد 71 ویں یوم جمہوریہ کے موقع پر پرچم کشائی کی تقریب منعقد کی گئی۔ اس موقع پر ہزاروں کی تعداد میں لوگ یہاں موجود رہے۔ آج صبح سے لوگ بڑی تعداد میں جمع ہونےلگے اور پرچم کشائی کے موقع پر ہزاروں لوگ جمع ہوگئے اور لوگوں کے کھڑے ہونے کے لئے جگہ باقی نہ رہی۔ پرچم کشائی تقریب میں ہندو، مسلم، سکھ، عیسائی نےشرکت کرکے قومی یکجہتی کا پیغام دیا۔


شاہین باغ میں 71 ویں یوم جمہوریہ کے موقع پرتاریخ رقم کی گئی۔


سی اے اےکے خلاف شاہین باغ میں مظاہرہ کرنے والے عوام کے درمیان شاہین باغ کی دادیاں اور  روہت ویمولا کی ماں رادھیکا ویمولا اور جواہر لعل نہرو یونیورسٹی (جے این یو) سے لاپتہ طالب علم، نجیب کی ماں فاطمہ نفیس نے پرچم، ترنگا لہراکر یوم جمہوریہ 2020 کی تقریب منائی۔ پرچم کشائی کی گئی اور اس کے بعد راشٹریہ گیان گایا گیا۔ جامعہ ملیہ اسلامیہ اور شاہین باغ دونوں مقامات پر قومی یکجہتی کا پیغام دیا گیا۔ اس موقع پر آئین اور دستور ہند کی حفاظت کا عہدکیا گیا۔ ساتھ ہی اتحاد اور بھائی چارہ کو فروغ دینےکےلئے مختلف ثقافتی پروگرام پیش کئےگئے۔ اس موقع پر ایک بار پھر سی اے اے اور این آرسی کی مخالفت کرتے رہنےکا عہد کیا گیا۔ شاہین باغ میں آج بھی مردوں سے زیادہ خواتین کی تعداد دیکھی گئی۔ یوم جمہوریہ کے جشن اور سی اے اے اور این آرسی کی مخالفت میں شامل خواتین نے ایک بار پھر دوہرایا ہےکہ ہم اپنے مطالبات تسلیم ہونےتک احتجاج کرتے رہیں گے اور دستور ہندکی حفاظت کریں گے۔ شاہین باغ کےلوگوں کا یہ بھی کہنا ہےکہ دستور ہند کی حفاظت کےلئے ہم جان ومال کی قربانی کے لئے تیار ہیں۔


شاہین باغ میں 71 ویں یوم جمہوریہ کے موقع ہزاروں لوگوں نے یوم جمہوریہ کا جشن منایا۔ ساتھ ہی سی اے اے اور این آرسی کی مخالفت جاری رکھنے کا عزم دوہرایا۔


واضح رہےکہ جامعہ ملیہ اسلامیہ اور شاہین باغ میں گزشتہ 42 روز سے سی اے اے اور این آر سی کی مخالفت کی جارہی ہے۔ ہر رات سینکڑوں خواتین اپنےگھر کےباہر دھرنے پر بیٹھ کراحتجاج کرتی ہین، لیکن اب تک ان کی پریشانیوں کو سننے والا حکومت کا کوئی نمائندہ نہیں آیا ہے جبکہ یہ آواز پوری دنیا میں پہنچ چکی ہے۔ آج شاہین باغ میں بھی چھوٹے چھوٹے بچوں نے یہاں پہنچ کر بابا صاحب امبیڈکر والی آزادی کا مطالبہ کیا۔ قابل ذکر ہے کہ شاہین باغ ہر دن نئے چیلنج کا سامنا کر رہا ہے وہیں خود شاہین باغ بھی ہر روز نئے چیلنج دے رہا ہے اور ملک کے مخلتف حصوں میں شاہین باغ کے طرز پر احتجاج کیا جارہا ہے۔ واضح رہے کہ اس احتجاج کی خاص بات یہ بھی ہے کہ کپکتاتی سردیوں میں بھی شاہین باغ کی خواتین دھرنے پر بیٹھی رہیں اور پوری پوری رات انہوں نے سڑکوں پر بتائی ہے۔ اس کے باوجود ان کے حوصلے میں کوئی کمی نہیں آئی ہے۔

شاہین باغ میں شاندار کیلی گرافی اور پینٹنگ کی نمائش بھی کی جاچکی ہے۔


اس سے قبل بھی شاہین باغ اور جامعہ ملیہ اسلامیہ کی یہ پُرامن تحریک ہر روز ایک نئی اور انوکھی شکل اختیارکرتی رہی ہے۔ کچھ دنوں قبل ہی یہاں جو آرٹ اور فنون کی مثال پیش کی گئی ہے، اس کو دیکھنےکےلئے ہزاروں کی تعداد میں لوگ جمع ہو ئے تھے۔ اس پینٹنگ کو بنانےکی ذمہ داری جامعہ ملیہ اسلامیہ اور جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے طلباء وطالبات نے نبھائی تھی۔ شاہین باغ احتجاجی مظاہرے کی جگہ پر جو کیلی گرافی اور خوبصورت پینٹنگ بنائی گئی تھی۔ اس میں فیض احمد فیض کی نظم 'لازم ہےکہ ہم بھی دیکھیں گے' تحریر کی گئی تھی اور اس نظم کےلئے ایک دل نما آرٹ پیش کیا گیا تھا۔
First published: Jan 26, 2020 07:35 PM IST