ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

ایکسکلوزیو انٹرویو: وزیر اعظم مودی نے کہا۔ جموں وکشمیر میں افسپا کو ختم کرنا جوانوں کو پھانسی کے تخت پر چڑھانے جیسا

وزیر اعظم مودی نے کہا کہ بدامنی کے علاقوں میں افسپا ضروری ہے۔ اسے ختم کرنے کے لئے پہلے ویسا ماحول بنانا پڑے گا جیسے کہ اروناچل پردیش میں حکومت نے جزوی طور پر اسے ختم کیا ہے۔

  • Share this:
ایکسکلوزیو انٹرویو: وزیر اعظم مودی نے کہا۔ جموں وکشمیر میں افسپا کو ختم کرنا جوانوں کو پھانسی کے تخت پر چڑھانے جیسا
وزیر اعظم نریندر مودی


کانگریس کے منشور کی تنقید کرتے ہوئے وزیر اعظم نریندر مودی نے پیر کے روز کہا کہ جموں وکشمیر میں افسپا کو ختم کرنا ہمارے فوجی جوانوں کو پھانسی کے تخت پر چڑھانے جیسا ہے۔ نیوز 18 نیٹ ورک گروپ کے ایڈیٹر ان چیف راہل جوشی سے ایک انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ فوج کی خود اعتمادی بنائے رکھنے کے لئے افسپا کو جاری رکھنا ضروری ہے۔


وزیر اعظم مودی نے کہا کہ بدامنی کے علاقوں میں افسپا ضروری ہے۔ اسے ختم کرنے کے لئے پہلے ویسا ماحول بنانا پڑے گا جیسے کہ اروناچل پردیش میں حکومت نے جزوی طور پر اسے ختم کیا ہے۔ انہوں نے کہا ’’ سب سے پہلے ہم نے اروناچل پردیش کے کچھ اضلاع میں اسے ختم کیا۔ 1980 میں ہماری پہلی حکومت تھی جس نے اس سلسلہ میں قدم اٹھائے۔ لیکن ہم نے قانون و انتظام کی صورت حال کو نافذ رکھا۔


بتا دیں کہ کانگریس نے گزشتہ ہفتہ اپنا انتخابی منشور جاری کیا تھا۔ اس میں پارٹی نے جموں وکشمیر سے افسپا ہٹانے سے لے کر غداری جیسے قانون میں بھی ترمیم کرنے کی بات کہی تھی۔ بی جے پی نے اس کی سخت تنقید کی تھی۔ حالانکہ کانگریس نے صفائی دیتے ہوئے کہا تھا کہ یہ صرف حقوق انسانی کی خلاف ورزی کئے جانے کی صورت حال میں ہی ہو گا۔

وزیر اعظم مودی نے کانگریس کے منشور کو لے کر یہ بھی الزام لگایا تھا کہ کانگریس کا رویہ دہشت گردی کو لے کر کافی نرم ہے۔ انہوں نے کہا تھا’’ دہشت گردی کو لے کر کانگریس کے نظریات پاکستان سے ملتے جلتے ہیں۔ افسپا کو ختم کرنا فوجیوں کے ہاتھ سے ہتھیار چھیننے جیسا ہے‘‘۔

خیال رہے کہ افسپا فوج کو خصوصی اختیارات دیتا ہے کہ جس کے تحت وہ بغیر وارنٹ کے کسی کو بھی گرفتار کر سکتے ہیں۔ قانون وا نتظام کے خلاف کام کرنے والوں پر گولی چلا سکتے ہیں یا طاقت کا استعمال کر سکتے ہیں۔ اس کے تحت فوجی جوانوں کو قانونی طور پر استثنیٰ حاصل ہے۔
First published: Apr 09, 2019 09:49 AM IST