உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    لمپی وائرس اور Swine Flu کی زد میں آنے سے جانورووں کی موت، لاشوں کو نہروں میں پھینک رہے لوگ

    Lumpy Diesease:  گزشتہ تقریباً 15 دنوں سے ان دونوں نہروں میں مردہ جانور پھینکے جا رہے ہیں اور صورتحال یہ ہے کہ اب تک 200 سے زائد جانوروں کو نہر سے نکالا جا چکا ہے۔

    Lumpy Diesease: گزشتہ تقریباً 15 دنوں سے ان دونوں نہروں میں مردہ جانور پھینکے جا رہے ہیں اور صورتحال یہ ہے کہ اب تک 200 سے زائد جانوروں کو نہر سے نکالا جا چکا ہے۔

    Lumpy Diesease: گزشتہ تقریباً 15 دنوں سے ان دونوں نہروں میں مردہ جانور پھینکے جا رہے ہیں اور صورتحال یہ ہے کہ اب تک 200 سے زائد جانوروں کو نہر سے نکالا جا چکا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Haryana | Rohtak
    • Share this:
      Lumpy Diesease:گائے میں لمپی کے لمپی وائرس Lumpy virus کے علاوہ سوروں میں بھی سوائن فلو بہت تیزی سے پھیل رہا ہے جس کی وجہ سے کئی مویشی مر رہے ہیں اور خطرہ بھی مسلسل بڑھ رہا ہے۔ کیونکہ بعض مویشی مالکان ان مردہ جانوروں کو دفنانے کی بجائے نہروں میں پھینک رہے ہیں جس کی وجہ سے انفیکشن پھیلنے کا امکان کافی بڑھ گیا ہے۔ روہتک سے دو نہریں نکلتی ہیں، ایک کا نام جواہر لال نہرو کینال ہے اور دوسری کا نام بھلوتھ سب برانچ کے نام سے جانی جاتی ہے۔ گزشتہ تقریباً 15 دنوں سے ان دونوں نہروں میں مردہ جانور پھینکے جا رہے ہیں اور صورتحال یہ ہے کہ اب تک 200 سے زائد جانوروں کو نہر سے نکالا جا چکا ہے۔

      لیکن نہر میں مردہ جانوروں کے بہنے  کا سلسلہ رکنے کا نام نہیں لے رہا۔ اندیشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ یہ مردہ جانور لمپی وائرس یا سوائن فلو  lumpy virus and swine flu کی زد میں آ گئے ہیں۔ اس کے بعد ان کی موت کے بعد انہیں نہروں میں پھینکا جا رہا ہے جو کہ پیچھے سے بہہ کر آرہے ہیں  اور یہاں پر سائیفن میں پھنس جاتے ہیں۔

      سنو نہروں کی پکار مشن کے افسر ڈاکٹر جسمیر سنگھ نے کہا کہ یہ عمل تقریباً 10 اگست سے مسلسل جاری ہے۔ دونوں نہروں میں آئے روز مردہ خنزیر اور گائے مل رہی ہیں جو کہ پیچھے بہہ کر سے آرہی ہیں۔ یہ نہریں کئی اضلاع کو پینے کا پانی فراہم کرتی ہیں جس کی وجہ سے نہ صرف پانی آلودہ ہوتا ہے بلکہ جانوروں میں بیماریاں پھیلنے کے امکانات بھی بڑھ جاتے ہیں۔ ضلعی انتظامیہ سے شکایت کے بعد اب ان مردہ جانوروں کو روزانہ نکال کر دفن کیا جاتا ہے لیکن تاحال ان پر روک نہیں لگائی گئی ہے۔

      کیجریوال کا الزام، BJP نے منیش سسودیا کو CM کے عہدے کی پیشکش کی

      لاش کے واسطے Gold کی کار! ڈیزائن دیکھ کر حیران ہوئے لوگ، دیکھ کر آپ کے بھی اڑ جائیں گے ہوش

      وہیںح اس بارت میں جانوروں کے ماہر ڈاکٹر راجندر سنگھ نے کہا کہ جس طرح سے مردہ جانوروں کو ندیوں میں پھینکا جا رہا ہے، یہ بالکل ٹھیک  نہیں ہے، اس سے بیماریاں پھیلنے کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ جانوروں کے ڈاکٹروں کو چاہیے کہ اگر مویشی بیماری کی وجہ سے مر جائیں تو انہیں دفن کر دینا چاہیے تاکہ انفیکشن کو پھیلنے سے روکا جا سکے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: