உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    لوک آیکت معاملہ: اترپردیش سرکار کے رویہ پر سپریم کورٹ ناراض

    نئی دہلی۔ سپریم کورٹ نے لوک آیکت کی تقرری کے معاملہ میں اترپردیش سرکار کے رویہ پر شدیدناراضگی ظاہر کرتے ہوئے  کہا کہ وہ بغیرکسی معقول وجہ کے سابق جج وریندر سنگھ کی تقرری رد نہیں کرے گی۔

    نئی دہلی۔ سپریم کورٹ نے لوک آیکت کی تقرری کے معاملہ میں اترپردیش سرکار کے رویہ پر شدیدناراضگی ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ وہ بغیرکسی معقول وجہ کے سابق جج وریندر سنگھ کی تقرری رد نہیں کرے گی۔

    نئی دہلی۔ سپریم کورٹ نے لوک آیکت کی تقرری کے معاملہ میں اترپردیش سرکار کے رویہ پر شدیدناراضگی ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ وہ بغیرکسی معقول وجہ کے سابق جج وریندر سنگھ کی تقرری رد نہیں کرے گی۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی۔ سپریم کورٹ نے لوک آیکت کی تقرری کے معاملہ میں اترپردیش سرکار کے رویہ پر شدیدناراضگی ظاہر کرتے ہوئے  کہا کہ وہ بغیرکسی معقول وجہ کے سابق جج وریندر سنگھ کی تقرری رد نہیں کرے گی۔ جسٹس رنجن گوگوئی اورجسٹس پرفل چند پنت کی بنچ نے کہا کہ وہ لوک آیکت کے طور پر جسٹس سنگھ کی تقرری کو لے کر اپنے ایک ماہ کے پہلے کے فیصلہ میں کوئی تبدیلی تب تک نہیں کرے گی جب تک کوئی معقول اور غیر معمولی سبب نہ ہو۔ چوٹی کی عدالت نے جسٹس سنگھ کے بارے میں گمراہ کرنے پر ریاستی سرکار کے تئیں شدید ناراضگی ظاہر کی۔


      بنچ نے کہا کہ ریاستی سرکار نے گزشتہ ماہ ہوئی سماعت کے دوران پانچ نام دیئے تھے اور دعوی کیا تھا کہ جسٹس سنگھ کے نام پر تین رکنی سلیکشن کمیٹی کے رکن کوکوئی اعتراض نہیں ہے جب کہ حقیقت یہ تھی کہ سلیکشن کمیٹی کے رکن الہ آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس ڈی وائی چندر چوڑ نے ان کے نام پر اعتراض کیاتھا۔ عرضی گزار سچدانند گپتا جسٹس عرف سنجے نے عدالت عظمی کو  اس بات سے واقف کرایا کہ جسٹس چندر چوڑ نے ریاستی سرکار کو اپنے اعتراضات تحریری طور پر جب کہ اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر سوامی پرساد موریہ نے بھی جسٹس سنگھ کے نام پر اعتراض کیا تھا۔ عدالت نے کہا ہے کہ اسے ان اعتراضات سے واقف نہیں کرایا گیا اور آخر کار اس نے جسٹس سنگھ کو لوک آیکت مقرر کردیا تھا۔ 


      سپریم کورٹ نے کل اترپردیش سرکار کے وکیل کپل سبل کے غیر حاضر رہنے کی وجہ سے سماعت آج تک ملتوی کردی تھی۔ ساتھ ہی عدالت نے اس رویہ پرناراضگی بھی ظاہر کی۔
      ریاستی سرکار کی دلیل تھی کہ مسٹر سبل دوسرے معاملہ کی سماعت میں مصروف ہیں اس لئے وہ پیشنہیں ہوسکے ہیں۔ قابل ذکر ہے کہ سپریم کورٹ کی ایک بنچ نے ریاست میں لوک آیکت کی تقرری کے معاملہ پر اس کے حکم پر عمل نہ کرنے پر ناراضگی ظاہر کرتے ہوئے 16 دسمبر کو از خود جسٹس سنگھ کو لوک آیکت مقرر کردیاتھا۔ بنچ نے تاریخی فیصلہ کرتے ہوئے لوک آیکت کی تقرری کے لئے دفعہ 142 میں دیئے گئے اختیارات کا استعمال کیاتھا۔

      First published: