உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    سپریم کورٹ نے ہائی کورٹ کو ٹرانسفر کئے اشتعال انگیز تقاریر کے سبھی ریکارڈ، کہا۔ جمعہ کو کریں سماعت

    انوراگ ٹھاکر، پرویش ورما اور کپل مشرا پر اشتعال انگیز تقریر کرنے کا الزام ہے

    انوراگ ٹھاکر، پرویش ورما اور کپل مشرا پر اشتعال انگیز تقریر کرنے کا الزام ہے

    بتا دیں کہ ہائی کورٹ نے دہلی تشدد پر سماعت کی تاریخ 13 اپریل مقرر کی ہے۔

    • Share this:
    نئی دہلی۔ بی جے پی رہنماؤں انوراگ ٹھاکر (Anurag Thakur)، کپل مشرا (Kapil Mishra)  اور پرویش ورما کے خلاف اشتعال انگیز تقاریر کے معاملہ پر سپریم کورٹ (Supreme Court) میں آج سماعت ہوئی۔ کورٹ نے ان رہنماؤں کی اشتعال انگیز تقاریر کے ریکارڈ دلی ہائی کورٹ کو ٹرانسفر کر دئیے ہیں۔ سپریم کورٹ نے ہائی کورٹ کو ہدایت دی کہ وہ جمعہ کو اس معاملہ کی سماعت کرے۔ بتا دیں کہ ہائی کورٹ نے دہلی تشدد پر سماعت کی تاریخ 13 اپریل مقرر کی ہے۔


    سپریم کورٹ نے اس سے پہلے بی جے پی لیڈران کپل مشرا، پرویش ورما اور انوراگ ٹھاکر کے خلاف عرضی دائر کرنے والے سابق آئی اے ایس آفیسر ہرش مندر کو ان کے بیان کے لئے سخت پھٹکار لگائی۔ چیف جسٹس ایس اے بوبڈے کی بینچ نے کوئی بھی حکم دینے سے پہلے عرضی گزار ہرش مندر کے بیان کا ہی ٹرانسکرپشن مانگا۔ مندر نے پہلے کہا تھا کہ سپریم کورٹ پر بھروسہ نہیں ہے، پھر بھی ہم وہاں جا رہے ہیں۔

    کورٹ نے کہا کہ ہم ہرش مندر کو نہیں سنیں گے۔ صرف کالن گونجالیوس کو سنیں گے۔ بتا دیں کہ سینئر وکیل کالن گونجالیوس فساد زدگان کی طرف سے کورٹ میں پیش ہوئے ہیں۔ کورٹ نے مندر کے بیان پر صفائی بھی مانگی ہے۔
    Published by:Nadeem Ahmad
    First published: