ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

آرایس ایس کے پروگرام میں پرنب مکھرجی کی تقریر سے رواداری کا ماحول بنانے میں مدد ملے گی: اڈوانی

بی جے پی کے سینئر لیڈر لال کرشن اڈوانی نے آرایس ایس میں پرنب مکھرجی کی تقریر کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ پرنب مکھرجی کے ناگپور دورہ کو ملک کی موجودہ تاریخ سے یقینی طور پر ملک میں رواداری، ہم آہنگی اور تعاون کا ماحول بنانے میں مدد ملے گی۔

  • Share this:
آرایس ایس کے پروگرام میں پرنب مکھرجی کی تقریر سے رواداری کا ماحول بنانے میں مدد ملے گی: اڈوانی
بی جے پی کے سینئر لیڈر لال کرشن اڈوانی نے آرایس ایس میں پرنب مکھرجی کی تقریر کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ پرنب مکھرجی کے ناگپور دورہ کو ملک کی موجودہ تاریخ سے یقینی طور پر ملک میں رواداری، ہم آہنگی اور تعاون کا ماحول بنانے میں مدد ملے گی۔

بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے سینئر لیڈر لال کرشن اڈوانی نے راشٹریہ سیوم سیوک سنگھ (آرایس ایس) میں سابق صدر جمہوریہ پرنب مکھرجی کی تقریر کی تعریف کی ہے۔ اڈوانی نے پرنب مکھرجی کے ناگپور دورہ کو ملک کی موجودہ تاریخ سے یقینی طور پر ملک میں رواداری، ہم آہنگی اور تعاون کا ماحول بنانے میں مدد ملے گی۔


آرایس ایس پرچارک رہے اڈوانی نے پرنب مکھرجی کو دعوت دینے کے لئے آرایس ایس سربراہ موہن بھاگوت کی بھی تعریف کی۔ اڈوانی نے کہا کہ دونوں کی تقریر میں ہم آہنگی اور یکسانیت نظر آرہی تھی۔ انہوں نے کہا کہ مکھرجی اور بھاگوت نے نظریاتی اصولوں اور اختلافات سے اوپر اٹھ کر بات چیت کی قابل تعریف مثال پیش کی ہے۔


اپنے بیان میں اڈوانی نے کہا کہ دونوں نے ہندوستان کے اتحاد پر زور دیا، جو سبھی تنوع  اور عقائد کی کثرتکو قبول کرتی ہے اور احترام کرتی ہے۔ انہوں نے بھاگوت کی قیادت میں آرایس ایس کی توسیع اور بات چیت کے جذبے میں ملک کے الگ الگ طبقات تک پہنچنے کی کوشش میں تیزی پر خوشی کااظہار کیا۔


اڈوانی نے کہا کہ کھلے پن اور آپسی احترام کے ذریعہ اس طرح کی بات چیت سے ہمارے خوابوں کو ہندوستان کے لئے بہت ضروری رواداری کا ماحول، ہم آہنگیتعاون کا ماحول بنانے میں مدد ملے گی۔

پرنب مکھرجی کی تعریف کرتے ہوئے اڈوانی نے کہا کہ انہوں نے آرایس ایس کی دعوت قبول کرکے وفاداری اور بھائی چارہ دکھایا ہے۔ہم آہنگی اور تعاون کا ماحول بنانے میں مدد لے گی۔ انہوں نے مکھر جی کے لئے کہا  کہ ان کے برتاو اور عوامی زندگی کی طویل اور مختلف تجربے نے انہیں ایسا سیاست داں بنایا ہے جو الگ الگ سیاسی پس منظر اور نظریات کے لوگوں کے درمیان بات چیت اور تعاون کی ضرورت میں مضبوطی سے یقین کرتا ہے۔

واضح رہے کہ مکھرجی کے آرایس ایس کی دعوت کو قبول کرنے کے فیصلے کی کئی کانگریسی لیڈروں اور دیگر سیاسی پارٹیوں نے تنقید کی تھی۔ حالانکہ ان کی تقریر کے بعد مخالفت کرنے والے لوگوں کی رائے تبدیل ہوگئی تھی اور وہ پرنب مکھرجی کی تعریف کرنے لگے تھے۔

پرنب مکھرجی نے اپنی تقریر میں وارننگ دی تھی کہ نفرت اور تعصب کی پہچان کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔ پرنب  مکھرجی کے نظریات اور مثبت باتوں نے ان کی اس تقریر کو خاص بنادیا ہے۔ مکھرجی نے رواداری ، اتحاد اور تنوع کو ہندستان کی سب سے بڑی پہچان قرار دیتے ہوئے آج کہا کہ ہمیں ایسے ملک کی تعمیر کرنی ہے جہاں لوگوں کے اندر خوف نہیں ہواورسب متحد ہوکر ملک کی ترقی کے لئے کام کریں۔
First published: Jun 08, 2018 05:32 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading