உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ہیما مالنی بولیں، طلاق کے معاملات جلد نمٹانے کے لئے الگ سے قائم کی جائیں عدالتیں

    نئی دہلی۔ طلاق کے مقدمات کی فوری سماعت کے لیے الگ سے عدالت قائم کرنے کا مطالبہ لوک سبھا میں اٹھا۔

    نئی دہلی۔ طلاق کے مقدمات کی فوری سماعت کے لیے الگ سے عدالت قائم کرنے کا مطالبہ لوک سبھا میں اٹھا۔

    نئی دہلی۔ طلاق کے مقدمات کی فوری سماعت کے لیے الگ سے عدالت قائم کرنے کا مطالبہ لوک سبھا میں اٹھا۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی۔ طلاق کے مقدمات کی فوری سماعت کے لیے الگ سے عدالت قائم کرنے کا مطالبہ لوک سبھا میں اٹھا۔ بھارتیہ جنتا پارٹی کی ہیما مالنی نے وقفہ صفر کے دوران یہ معاملہ اٹھایا۔ انہوں نے کہا کہ طلاق کے معاملات کے نپٹارے میں دس دس سال لگ جاتے ہیں، جس سے مرد اور خواتین کی خوشگوار ازدواجی زندگی ختم ہو جاتی ہے۔


      محترمہ ہیما مالنی نے کہا کہ شادی زندگی کاحیرت انگیز حصہ ہے اور مرد اور خواتین زندگی کی گاڑی کے دو پہیے۔ لیکن حالیہ برسوں میں مختلف وجوہات کی بنا پر طلاق کے معاملات میں اضافہ ہوا ہے۔ بی جے پی رکن نے کہا کہ کئی ایسے معاملات آتے ہیں جن میں میاں بیوی کے تعلقات میں تلخی آ جاتی ہے، جس سے خوشگوار ازدواجی تعلق جاری نہیں رہ پاتا اور بات طلاق تک آ جاتی ہے۔


      انہوں نے کہا کہ طلاق کے عدالتی عمل میں دس دس سال گزر جاتے ہیں، جس سے ان کی ازدواجی زندگی کا اہم وقت گزر جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ طلاق کے مقدمات کی سماعت کے لیے الگ سے عدالت قائم کی جانی چاہئے، تاکہ معاملات کا تصفیہ جلد ہو اور طلاق لینے والے نوجوان لڑکے اور لڑکیوں کو نئے سرے سے ازدواجی زندگی جینے کا کافی وقت مل سکے۔

      First published: