உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Uniform Civil Code: ’’یکساں سول کوڈ مسلم خواتین کی ضرورت‘‘  آسام کے وزیر اعلیٰ ہمانتا بسوا سرما کا بیان 

    انھوں نے اسے ہر مسلمان عورت کے لیے ایک مسئلہ قرار دیا

    انھوں نے اسے ہر مسلمان عورت کے لیے ایک مسئلہ قرار دیا

    ہمانتا بسوا سرما نے کہا کہ ہر کوئی UCC چاہتا ہے۔ کوئی مسلمان عورت نہیں چاہتی کہ اس کا شوہر 3 دوسری بیویاں گھر لے آئے۔ کسی مسلمان عورت سے پوچھ لیں۔ یو سی سی میرا مسئلہ نہیں ہے، یہ تمام مسلم خواتین کا مسئلہ ہے۔ اگر انہیں انصاف دینا ہے تو طلاق ثلاثہ کو ختم کرنے کے بعد یو سی سی کو لانا پڑے گا۔

    • Share this:
      آسام کے وزیر اعلیٰ ہمانتا بسوا سرما (Assam Chief Minister Himanta Biswa Sarma) نے اتوار کے روز یکساں سول کوڈ (Uniform Civil Code) کی ضرورت پر ہونے والی بحث کو نیا رخ دینے کی کوشش کی ہے۔ انھوں نے اسے ہر مسلمان عورت کے لیے ایک مسئلہ قرار دیا، جو نہیں چاہتی تھی کہ اس کا شوہر تین دوسری بیویوں کو گھر لے آئے۔

      ہمانتا بسوا سرما نے کہا کہ ہر کوئی UCC چاہتا ہے۔ کوئی مسلمان عورت نہیں چاہتی کہ اس کا شوہر 3 دوسری بیویاں گھر لے آئے۔ کسی مسلمان عورت سے پوچھ لیں۔ یو سی سی میرا مسئلہ نہیں ہے، یہ تمام مسلم خواتین کا مسئلہ ہے۔ اگر انہیں انصاف دینا ہے تو طلاق ثلاثہ کو ختم کرنے کے بعد یو سی سی کو لانا پڑے گا۔

      اطلاعات کے مطابق سی ایم نے مزید کہا کہ آسام کے مقامی مسلمان مہاجر مسلمانوں کے ساتھ گھل مل جانا نہیں چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگرچہ آسام میں مسلم آبادی کا ایک مذہب ہے، لیکن ثقافت اور اصل کے لحاظ سے دو مختلف طبقات ہیں۔ ایک کا تعلق آسام سے ہے، جہاں گزشتہ 200 سال میں کوئی نقل مکانی نہیں ہوئی ہے۔ بسوا کے مطابق یہ گروہ نقل مکانی کرنے والے مسلمانوں سے الگ ہونا اور اپنی الگ شناخت دینا چاہتا ہے۔

      چیف منسٹر نے کہا کہ آسام میں مقامی اور مہاجر مسلمانوں کی شناخت کا فیصلہ ریاستی حکومت کرے گی۔ ذیلی کمیٹی تشکیل دی گئی اور رپورٹ پیش کی گئی۔ لیکن یہ سب کمیٹی کی رپورٹ ہے، حکومت نے ابھی تک کوئی فیصلہ نہیں کیا۔ یہ مستقبل میں فیصلہ کرے گا کہ کون مقامی مسلمان ہے اور کون مہاجر مسلمان۔ آسام میں اس کی کوئی مخالفت نہیں ہے۔ وہ فرق جانتے ہیں، اسے سرکاری شکل دینا ہوگی۔

      بی جے پی کے کئی رہنما اپنی اپنی ریاستوں میں یو سی سی کے مطالبے کو واپس لا رہے ہیں۔ ہماچل پردیش کے وزیر اعلی جیرام ٹھاکر نے پہلے نیوز 18 کو بتایا تھا کہ اتراکھنڈ حکومت کی جانب سے اس کے لیے ایک پینل کا اعلان کرنے کے بعد ریاست میں یکساں سول کوڈ کی جانچ کی جا رہی ہے۔

      مزید پڑھیں: Jobs in Telangana: تلنگانہ میں 80 ہزار نئی نوکریوں کا اعلان، لیکن پہلے سے وعدہ شدہ اردو کی 558 ملازمتیں ہنوز خالی!

      انہوں نے کہا تھا کہ ہم نے حکام سے کہا ہے کہ وہ اس کی جانچ کریں اور کیا یہ ریاست کے لیے فٹ بیٹھتا ہے؟ اس پر بھی کام ہوگا۔ اتراکھنڈ نے اس کے لیے ایک پینل کا اعلان کرنے کے بعد یہ فعال طور پر زیر غور آیا ہے۔ ہمیں یقین ہے کہ یو سی سی کو نافذ کرنے کا فیصلہ اچھا ہے لیکن ہم اس کا جائزہ لے رہے ہیں۔ دوسری ریاستوں سے یو سی سی کے حق میں جو پیغام گیا ہے وہ درست ہے۔ ہم انتخابات سے پہلے اس کا اعلان کرنے کے امکان کو رد نہیں کر رہے ہیں۔ ہم جلدی میں نہیں ہوں گے۔ ہم جانچیں گے اور دیکھیں گے کہ ہم کیا کر سکتے ہیں۔

      مزید پڑھیں: TMREIS: تلنگانہ اقلیتی رہائشی اسکول میں داخلوں کی آخری تاریخ 20 اپریل، 9 مئی سے امتحانات

      اتراکھنڈ کے وزیر اعلیٰ پشکر سنگھ دھامی نے کہا تھا کہ یو سی سی کا مسودہ تیار کرنے کے لیے جلد ہی ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی قائم کی جائے گی اور ریاست میں فرقہ وارانہ امن کو کسی بھی قیمت پر متاثر نہیں ہونے دیا جائے گا۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: