ہوم » نیوز » No Category

مسجد، مندر مقدمے سے متعلق غیر دستوری بیانات پرعائد کی جائے پابندی: جیلانی

لکھنئو۔ بابری مسجد ایکشن کمیٹی کے کنوینر اور معروف وکیل ظفریاب جیلانی کے مطابق عدالت عظمٰی میں زیر سماعت مسجد ۔مندر مقدمے کے پس منظر میں شدت پسند اور فرقہ پرست لوگوں کی جانب سے آنے والے بیانات پر وکیلوں کی ایک ٹیم غور کررہی ہے۔

  • ETV
  • Last Updated: Feb 08, 2016 03:13 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
مسجد، مندر مقدمے سے متعلق غیر دستوری بیانات پرعائد کی جائے پابندی: جیلانی
لکھنئو۔ بابری مسجد ایکشن کمیٹی کے کنوینر اور معروف وکیل ظفریاب جیلانی کے مطابق عدالت عظمٰی میں زیر سماعت مسجد ۔مندر مقدمے کے پس منظر میں شدت پسند اور فرقہ پرست لوگوں کی جانب سے آنے والے بیانات پر وکیلوں کی ایک ٹیم غور کررہی ہے۔

لکھنئو۔ بابری مسجد ایکشن کمیٹی کے کنوینر اور معروف وکیل ظفریاب جیلانی  کے مطابق عدالت عظمٰی میں زیر سماعت مسجد ۔مندر مقدمے کے پس منظر میں شدت پسند اور فرقہ پرست لوگوں کی جانب سے آنے والے بیانات پر وکیلوں کی ایک ٹیم غور کررہی ہے۔  یہ ٹیم مکمل ثبوتوں کے ساتھ سپریم کورٹ کو باخبر کرے گی تاکہ اس ضمن میں ضروری کارروائی کی جاسکے۔ ایودھیا کا تاریخی مقدمہ سپریم کورٹ میں زیر سماعت ہے،  پھر بھی کچھ متعصب لوگ اور شدت پسند ذہنیتیں سماج کی تقسیم کو یقینی بنانے اور نفرت بڑھانے کے لئے الٹے سیدھے بیانات جاری کرتی رہتی ہیں۔ انتخابات کی دستکوں کے ساتھ تو اس میں مزید شدت آگئی ہے ۔


جیلانی مانتے ہیں کہ یہ بی جے پی، آر ایس ایس اور ان کی ہمنوا جماعتوں کی منصوبہ بند سازش کے تحت سیاسی مفاد کے حصول کے لئے ایسا کیاجاتاہے۔ظفریاب جیلانی، ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل اتر پردیش کا کہنا ہے کہ  ایسے لوگوں پر اب قدغن لگانے کی تیاریاں بھی کی جارہی ہیں۔ دہلی میں وکیلوں کی ایک ٹیم اس ضمن میں سنجیدہ پیش رفت کرنے  کے موڈ میں ہے۔جس کے لئے ثبوت اکٹھا کئے جارہے ہیں جوجلد ہی  عدالت میں پیش کئے جائیں گے۔ آئین ودستور کی روشنی میں اور جمہوری تقاضوں کے پیش نظر جب معاملہ زیر سماعت ہو تو نتائج سے قبل کسی بھی تبصرے کی گنجائش نہیں۔ تاہم کچھ لوگ بار بار ایسے بیانات جاری کرتے ہیں جن سے لوگ مشتعل ہوں، سماج کی تقسیم ہو اور  وہ سیاسی مفاد حاصل کرسکیں۔

First published: Feb 08, 2016 03:13 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading