உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    سیاسی زندگی میں پہلی بار اتنے بے بس نظر آئے ملائم، میٹنگ میں ہوئے جذباتی

     لکھنؤ میں بکھرے کنبے کو سمیٹنے کے لئے جاری میٹنگ میں ملائم سنگھ اپنوں کے آگے کئی بار بے بس نظر آئے۔

    لکھنؤ میں بکھرے کنبے کو سمیٹنے کے لئے جاری میٹنگ میں ملائم سنگھ اپنوں کے آگے کئی بار بے بس نظر آئے۔

    لکھنؤ میں بکھرے کنبے کو سمیٹنے کے لئے جاری میٹنگ میں ملائم سنگھ اپنوں کے آگے کئی بار بے بس نظر آئے۔

    • IBN Khabar
    • Last Updated :
    • Share this:
      لکھنؤ۔ ایس پی سپریمو اپنی سیاسی زندگی میں پہلی بار اتنے بے بس نظر آ رہے ہیں۔ لکھنؤ میں بکھرے کنبے کو سمیٹنے کے لئے جاری میٹنگ میں ملائم سنگھ اپنوں کے آگے کئی بار بے بس نظر آئے۔ میٹنگ میں ملائم انتہائی دلبرداشتہ نظر آئے۔ وہ کئی بار جذباتی ہوئے۔ ملائم نے کہا کہ انہیں امید نہیں تھی کہ اکھلیش ایسا کریں گے۔

      ملائم کے گھر سینئر لیڈر بینی پرساد ورما، ماتا پرساد پانڈے، نریش اگروال، كرنمے نندا اور ریوتی رمن سنگھ پہنچے۔ سب نے ملائم سے کہا کہ وہ دخل دیں، تاکہ پارٹی میں سب کچھ ٹھیک ہو۔ میٹنگ میں ملائم اکھلیش کے ساتھ ساتھ بھائی رام گوپال پر بھی انتہائی ناراض تھے۔ انہوں نے کہا کہ آج تک مخالفین نے جو نہیں کہا وہ ہماری پارٹی کے لوگوں نے میرے خاندان کے لئے کہا۔ یہی دن دیکھنے تھے کیا؟

      ملائم نے یہ بھی کہا کہ مجھے بتایا گیا کہ رام گوپال اکھلیش کے کہنے پر نئی پارٹی بنانے الیکشن کمیشن تک چلے گئے تھے۔ لیکن وہاں یہ کہا گیا کہ نئی پارٹی کا رجسٹریشن کرانے میں سات آٹھ مہینے کا وقت لگے گا، لہذا وہ واپس لوٹ آئے۔ کیا یہی دیکھنے کے لئے خون پسینے سے پارٹی کھڑی کی تھی؟

      میٹنگ میں سب نے ملائم کو سمجھایا۔ ان سے کہا گیا کہ اکھلیش سب کی عزت کرتے ہیں، لیکن درمیان والے گڑبڑ کر رہے ہیں۔ یہ بھی کہا کہ جس نے بھی خاندان اور نیتا جی کے خلاف بولا ہے، اس کے خلاف سخت کارروائی ہونی چاہئے، تاکہ پیغام تمام تک جائے۔

      پرانے رہنماؤں کے ساتھ ملائم سنگھ کی میٹنگ میں شیو پال تین بار آئے اور گئے۔ ہر بار انہوں نے کہا کہ مجھے استعفی دے دینا چاہئے، اس سے شاید سب کچھ ٹھیک ہو جائے۔ اس پر ملائم نے کہا کہ آپ ایسا نہیں کریں گے۔

      پرانے لیڈروں نے جذباتی ملائم کو سنبھالتے ہوئے کہا کہ بیٹے کا نقصان نہیں ہونا چاہئے، ساتھ ہی پارٹی کا بھی نہیں۔ اکھلیش ہی پارٹی کا چہرہ ہونا چاہئے۔ اگر اکھلیش کا نقصان ہوگا تو پارٹی کا بھی نقصان ہوگا۔ ان لیڈروں نے کہا کہ اگر آپ کی اجازت ہو تو ہم سب اکھلیش سے جا کر ملنا چاہتے ہیں۔ اس پر ملائم نے کہا جائیے اور سمجھائیے کہ خود اپنے پیروں پر کلہاڑی کیوں مار رہے ہیں۔

       

       
      First published: