உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    UP Election: مختلف پارٹیوں کی جانب سے کیا ہے مسلم امیدواروں کا فیصد، کیا وہ انتخابی فتح و شکست کا بنیں گے ذریعہ؟

    ہر ووٹ کی اپنی اہمیت ہے۔

    ہر ووٹ کی اپنی اہمیت ہے۔

    اتر پردیش کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ کے بی جے پی کے لیے ووٹروں کی حمایت کے بارے میں 80 بمقابلہ 20 فیصد کے تبصرے کے بعد ایس پی کو لگتا ہے کہ مسلمان بی جے پی کو شکست دینے کے لیے اس کے پیچھے متحد ہوں گے لیکن بی ایس پی کو مغربی یوپی میں کمیونٹی کے درمیان ہمیشہ اچھی حمایت حاصل رہی ہے۔

    • Share this:
      سال 2017 کے اتر پردیش اسمبلی انتخابات کے رد عمل میں سماج وادی پارٹی-راشٹریہ لوک دل (SP-RLD) اتحاد کے 13 مسلم امیدوار اور بہوجن سماج پارٹی (BSP) کے 17 امیدوار پہلے مرحلے میں 58 سیٹوں کے لیے الیکشن لڑیں گے۔ مغربی یوپی میں 10 فروری کو الیکشن ہوگا، جہاں مسلم آبادی زیادہ ہے۔

      اس کا مطلب ہے کہ پہلے مرحلے میں تقریباً 22 فیصد انتخابی ٹکٹ مسلم امیدواروں کو ایس پی نے الاٹ کیے ہیں جبکہ بی ایس پی کا حصہ تقریباً 29 فیصد ہے۔ الیکشن کمیشن آف انڈیا کی ویب سائٹ (ای سی آئی) کے مطابق نیوز 18 نے یہ معلومات دونوں پارٹیوں کی سرکاری فہرستوں اور امیدواروں کی طرف سے داخل کردہ نامزدگیوں کے ذریعے جمع کیں۔

      بی جے پی دعویداروں کی فہرست:

      بی جے پی (BJP) نے پہلے مرحلے کے لیے اعلان کردہ اپنے 109 دعویداروں کی فہرست میں ایک بھی مسلمان کو ٹکٹ نہیں دیا ہے۔ پہلے مرحلے میں ہونے والے آئندہ انتخابات میں ایس پی آر ایل ڈی اتحاد اور بی ایس پی دونوں نے آٹھ سیٹوں پر مسلم امیدوار کھڑے کیے ہیں۔ اس سے بی جے پی کو مذکورہ سیٹ پر مدد ملنے کی امید ہے کیونکہ مسلم ووٹ تقسیم ہو سکتے ہیں۔ سال 2017 کے اسمبلی انتخابات میں مذکورہ 58 سیٹوں میں سے سات پر ایس پی-کانگریس اتحاد اور بی ایس پی دونوں کے مسلم امیدوار تھے۔ اس کےک باوجود بھی بی جے پی نے تمام سات سیٹوں پر کامیابی حاصل کی تھی۔

      اس بار جن آٹھ سیٹوں پر ایس پی-آر ایل ڈی اور بی ایس پی دونوں نے مسلم امیدوار کھڑے کیے ہیں، ان میں تھانہ بھون، سیوال خاص، میرٹھ، میرٹھ ساؤتھ، دھولانہ، بلند شہر، کوئیل اور علی گڑھ شامل ہے۔ اتر پردیش کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ کے بی جے پی کے لیے ووٹروں کی حمایت کے بارے میں 80 بمقابلہ 20 فیصد کے تبصرے کے بعد ایس پی کو لگتا ہے کہ مسلمان بی جے پی کو شکست دینے کے لیے اس کے پیچھے متحد ہوں گے لیکن بی ایس پی کو مغربی یوپی میں کمیونٹی کے درمیان ہمیشہ اچھی حمایت حاصل رہی ہے۔ مغربی یوپی میں ابتدائی دو مرحلوں میں 2017 کے انتخابات میں ایسا مانا جاتا ہے کہ مسلمانوں نے بڑی حد تک بی ایس پی کی حمایت کی۔

      اتحاد کے اختلافات:

      سال 2017 کے انتخابات کی طرح مظفر نگر ضلع کی چھ سیٹوں پر ایس پی کی قیادت والے اتحاد نے کسی بھی مسلم امیدوار کو ٹکٹ نہیں دیا ہے۔ یہ 2013 کے مظفر نگر فرقہ وارانہ فسادات کے پس منظر میں رہا ہے جس میں جاٹ اور مسلمانوں کے درمیان اختلافات آ رہے تھے اور اس کے بعد سے مسلمانوں نے ایس پی یا بی ایس پی کے ساتھ اتحاد کیا اور جاٹوں نے اپنی وفاداری بی جے پی کے ساتھ منتقل کر دی۔

      تاہم ایس پی-آر ایل ڈی اتحاد نے میرٹھ ضلع میں مسلمانوں کو چار اور کیرانہ میں ناہید حسن کو ٹکٹ دیا ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: