உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پی ایچ ڈی اور ایم فل کے وظیفےبند ہونے سے 12 ہزار طلبہ پریشان

    یوجی سی: فائل فوٹو

    یوجی سی: فائل فوٹو

    نئی دہلی۔ یونیورسٹی گرانٹس کمیشن (یو جی سی)کے ذریعہ پی ایچ ڈی اور ایم فل کے طلبہ کے وظیفے بندکرنے سے ملک کے بارہ ہزار سے زائد ریسرچ اسکالرس کی تعلیم خطرے میں پڑ گئی ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی۔ یونیورسٹی گرانٹس کمیشن (یو جی سی)کے ذریعہ پی ایچ ڈی اور ایم فل کے طلبہ کے وظیفے بندکرنے سے ملک کے بارہ ہزار سے زائد ریسرچ اسکالرس کی تعلیم خطرے میں پڑ گئی ہے۔


      اب تک ملک کی بیس یونیورسٹیوں میں اس فیصلے کے خلاف احتجاجی مظاہرے ہوچکے ہیں ۔ ا س دوران طلبہ نے اس تحریک کو مزید تیز کرنے کی اپیل کی ہے ۔ دہلی یونیورسٹی ٹیچرس ایسوسی ایشن (ڈوٹا) کے بعد جواہر لال نہرو یونیورسٹی ٹیچرس ایسوسی ایشن (جے این یو ٹی اے) نے یو جی سی سے فوراَ اس وظیفہ کو بحال کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔ جے این یو ٹی اے کی سکریٹری بھاستوی گھوش اور صدر سچیدانند سنہا نے طلبہ پر کل ہوئے لاٹھی چارج کی بھی سخت مذمت کی۔


      کل 200سے زائد ٹیچروں نے اپنے بیان میں یو جی سی کے اس فیصلے کی مخالفت کی ۔ آل انڈیا اسٹوڈنٹس ایسوسی ایشن (آئسا) نے الزام لگایا ہے کہ ان کی پرامن تحریک کو بدنام کرنے کے لئے بی جے پی کی طلبہ تنظیم اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد نے پولیس پر رات میں پتھراو کیا اور بسوں میں توڑ پھوڑ کی لیکن پولیس نے انہیں گرفتار کرنے کے بجائے دھرنا دے رہے طلبہ کو گرفتار کیا ۔ تقریباََ دو سو طلبہ کو کل پولیس نے حراست میں لیا او رلاٹھی چارج میں کئی طلبہ بری طرح زخمی ہوگئے۔


      آئیسا نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ اگر یو جی سی نے اپنا فیصلہ واپس نہیں لیا تو ملک گیر تحریک شروع کی جائے گی۔ جے این یو ٹی اے اور ڈی یو ٹی اے کا کہنا ہے کہ نومبر میں نیروبی میں ہونے والے گیٹ اور ڈبلیو ٹی او کی میٹنگ میں معاہدہ پر ہندوستان کے دستخط کرنے سے ملک میں تعلیم کے لئے سرکاری امداد کم ہوجائے گی اور تعلیم منافع کا کاروبار ہوجائے گا اور اس کی مزید نجکاری ہوجائے گی۔


      خیال رہے کہ اسکالرشپ بند کئے جانے کے خلاف یہاں مخالفت کرنے والے طلبہ پر کل پولیس نے لاٹھی چارج کیا اور تقریباََ100طلبہ کو حراست میں لے لیا ۔ اسکالرشپ بند کئے جانے کے خلاف دہلی یونیورسٹی، جواہر لال نہرو یونیورسٹی، امبیڈکر اور جامعہ ملیہ اسلامیہ کے طلبہ مسلسل تیسرے روز بھی اپنی مخالفت جاری رکھے ہوئے ہیں۔ان طلبہ نے یو جی سی کے افسران کو دفتر میں جانے سے روکنے کی کوشش کی جس پر پولیس کو کارروائی کرنی پڑی۔ جب طلبہ نے یو جی سی کے دفتر کے سامنے سے ہٹنے سے منع کیا تو پولیس نے لاٹھی چارج کیا ، جس سے کئی طلبہ زخمی ہوگئے ۔ پولیس تقریباََ ایک سو طلبہ کو پکڑ کر شمال مغربی دہی کے بھلسوا تھانے میں لے گئی۔

      First published: