உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    زرعی قوانین کے خلاف کسانوں کے احتجاج پر سپریم کورٹ سخت، کہا : دو ہفتے میں حل نکالے سرکار

    زرعی قوانین کے خلاف کسانوں کے احتجاج پر سپریم کورٹ سخت، کہا : دو ہفتے میں حل نکالے سرکار ۔ پی ٹی آئی ۔ فائل فوٹو ۔

    زرعی قوانین کے خلاف کسانوں کے احتجاج پر سپریم کورٹ سخت، کہا : دو ہفتے میں حل نکالے سرکار ۔ پی ٹی آئی ۔ فائل فوٹو ۔

    Supreme Court Farmers Protest: سپریم کورٹ نے کہاکہ کسانوں کو مظاہرہ کا حق ہے ، لیکن سڑکوں کو غیرمعینہ مدت کے لئے بند نہیں کیا جاسکتا ہے۔ اس کا حل مرکزی حکومت اور متعلقہ ریاست کے ہاتھ میں ہے۔ خواہ وجہ کوئی بھی ہو، سڑکوں کو بلاک نہیں کیا جاسکتا ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      نئی دہلی : سپریم کورٹ نے تقریبا نو مہینے سے زیادہ وقت سے جاری کسان تحریک کی وجہ سے ٹریفک کی نقل و حرکت میں پڑنے والے خلل پر پیر کو ناراضگی ظاہر کی اور مرکزی حکومت، اترپردیش اور ہریانہ حکومت کو اس کا حل تلاش کرنے کے لئے کہا ہے ۔ جج سنجے کشن کول اور جج رشی کیش رائے پر مشتمل بنچ نے نوئیڈا کی باشندہ مونیکا اگروال کی عرضی پر سماعت کے دوران مرکز کو یہ یقینی بنانے کی ہدایت دی کہ دہلی سے نوئیڈا کے درمیان کی سڑک پر کوئی رکاوٹ نہ ہو۔

      جج کول نے کہاکہ کسانوں کو مظاہرہ کا حق ہے ، لیکن سڑکوں کو غیرمعینہ مدت کے لئے بند نہیں کیا جاسکتا ہے۔ اس کا حل مرکزی حکومت اور متعلقہ ریاست کے ہاتھ میں ہے۔ خواہ وجہ کوئی بھی ہو، سڑکوں کو بلاک نہیں کیا جاسکتا ہے۔ عدالت نے کہا کہ مرکزی حکومت اس معاملے کا حل تلاش کرکے عدالت کو رپورٹ کرے۔ اس کے ساتھ ہی مرکزی حکومت اور یوپی سرکار کو دہفتوں میں حل نکالنے کیلئے کہا ہے ۔

      اترپردیش حکومت کے وکیل نے عدالت کے سامنے کہا کہ مظاہرین کسانوں سے بات کرکے انہیں سڑک خالی کرنے کے لئے سمجھانے کی کوشش کی جارہی ہے۔ ریاستی حکومت مظاہرین کو یہ سمجھانے کی کوشش بھی کررہی ہے کہ ان کا سڑک روکنا عدالت کے حکم کی خلاف ورزی ہے۔

      عرضی گزار کا کہنا ہے کہ سڑکوں کو خالی رکھنے کے عدالت کی با ر بار کی ہدایات کے باوجود بھی اس پر عملد رآمد نہیں کیا گیا ہے۔’سنگل مدر‘ اور کئی طبی مسائل میں مبتلا ہونے کی وجہ سے ان کے لئے نوئیدا سے دہلی آنا ایک برے خواب کی طرح ہوگیا ہے ۔

      حالانکہ عرضی گزاروں کی غیرموجودگی کی وجہ سے اب سماعت ملتوی کردی گئی ۔ عدالت نے معاملہ کی اگلی سماعت کے لئے 20 ستمبر کی تاریخ مقرر کی ہے۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: