உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    یوپی کے نئے لوک آیکت سے متعلق سپریم کورٹ نے اپنے ہی حکم پر لگائی روک

    نئی دہلی: سپریم کورٹ نے اتر پردیش کے لوک آیکت کے طور پر جسٹس وریندر سنگھ کی کل ہونے والی حلف برداری کی تقریب کو فی الحال ٹال دیا ہے۔ جسٹس اے کے گوئل اور جسٹس ادے امیش للت کی بینچ نے اتر پردیش کے سچچدانند گپتا کی درخواست پر آج چھٹی کے دن سماعت کرتے ہوئے حلف برداری پر عبوری روک لگا دی۔

    نئی دہلی: سپریم کورٹ نے اتر پردیش کے لوک آیکت کے طور پر جسٹس وریندر سنگھ کی کل ہونے والی حلف برداری کی تقریب کو فی الحال ٹال دیا ہے۔ جسٹس اے کے گوئل اور جسٹس ادے امیش للت کی بینچ نے اتر پردیش کے سچچدانند گپتا کی درخواست پر آج چھٹی کے دن سماعت کرتے ہوئے حلف برداری پر عبوری روک لگا دی۔

    نئی دہلی: سپریم کورٹ نے اتر پردیش کے لوک آیکت کے طور پر جسٹس وریندر سنگھ کی کل ہونے والی حلف برداری کی تقریب کو فی الحال ٹال دیا ہے۔ جسٹس اے کے گوئل اور جسٹس ادے امیش للت کی بینچ نے اتر پردیش کے سچچدانند گپتا کی درخواست پر آج چھٹی کے دن سماعت کرتے ہوئے حلف برداری پر عبوری روک لگا دی۔

    • News18
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی: سپریم کورٹ نے اتر پردیش کے لوک آیکت کے طور پر جسٹس وریندر سنگھ کی کل ہونے والی حلف برداری کی تقریب کو فی الحال ٹال دیا ہے۔ جسٹس اے کے گوئل اور جسٹس ادے امیش للت کی بینچ نے اتر پردیش کے سچچدانند گپتا کی درخواست پر آج چھٹی کے دن سماعت کرتے ہوئے حلف برداری پر عبوری روک لگا دی۔


      درخواست گزار کی دلیل ہے کہ ریاستی حکومت نے جسٹس سنگھ کا نام دیتے وقت عدالت عظمی کو یہ نہیں بتایا تھا کہ الہ آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس نے جسٹس سنگھ کے خلاف کچھ اعتراضات درج کرائے تھے۔


      درخواست گزار نے دلیل دی کہ چیف جسٹس نے اتر پردیش حکومت کو خط لکھ کر جسٹس سنگھ کے نام کے بارے میں اپنے اعتراضات درج کرائے تھے، لیکن حکومت نے اس بارے میں عدالت کو کچھ بھی نہیں بتایا۔ ریاستی حکومت کے انڈرٹیكنگ کے بعد عدالت نے  معاملہ  کے حل ہونے تک جسٹس سنگھ کی حلف برداری کی تقریب پر روک لگا دی۔


      قابل ذکر ہے کہ یوپی حکومت کی جانب سے مقررہ مدت میں لوک آیکت کا نام تجویز نہیں کئے جانے کے بعد سپریم کورٹ نے تاریخی فیصلہ سناتے ہوئے اپنی طرف سے یوپی کے لئے لوک آیکت کے نام کی منظوری دی تھی۔ عدالت نے نئے لوک آیکت کے لئے ریٹائرڈ جسٹس وریندر سنگھ کا نام طے کیا تھا۔


      بعد میں الہ آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس ڈی وائي چندرچوڑ نے نئے لوک آیکت وریندر سنگھ یادو کی تقرری پر سوال اٹھایا تھا۔ جسٹس چندرچوڑ نے کہا تھا کہ لوک آیکت کے عہدے کے لئے جن پانچ افراد کے نام بھیجے گئے تھے، ان میں وریندر سنگھ کا نام شامل نہیں تھا۔


      خیال رہے کہ اتر پردیش میں لوک آیکت کی تقرری کا معاملہ کافی وقت سے لٹکا ہوا تھا، جس پر ریاستی حکومت اتفاق نہیں بنا پا رہی تھی۔ اس کے بعد سپریم کورٹ نے خود ہی بدھ کو قدم اٹھاتے ہوئے وریندر سنگھ کو اتر پردیش کا نیا لوک آیکت مقرر کر دیا تھا۔


       وریندر سنگھ کو مبینہ طور پر سماج وادی پارٹی کے صدر ملائم سنگھ یادو کا قریبی سمجھا جاتا ہے۔ لوک آیکت کے عہدے کے لئے وریندر سنگھ اتر پردیش کی حکومت کی پہلی پسند تھے۔

      First published: