ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

جیوتش پیٹھ نے آبادی کنٹرول سے متعلق کسی بھی قانون کی مخافت کی، بولے۔ میں خود اپنے ماں پاب کی 14ویں اولاد ہوں

انہوں نے کہا کہ ملک کی عظیم شخصیتیں بھی بڑے کنبوں سے تعلق رکھتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مشترکہ خاندانی نظام اس ملک کی روایت میں شامل رہا ہے۔ سوامی اومکتیشورا نند نے کہا کہ آبادی کو کنٹرول کرنے کے لئے اگر کوئی قانون بنایا جاتا ہے تو ملک میں قتل جنین کو اور بڑھاوا ملے گا۔

  • Share this:
جیوتش پیٹھ نے آبادی کنٹرول سے متعلق کسی بھی قانون کی مخافت کی، بولے۔  میں خود اپنے ماں پاب کی 14ویں اولاد ہوں
انہوں نے کہا کہ ملک کی عظیم شخصیتیں بھی بڑے کنبوں سے تعلق رکھتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مشترکہ خاندانی نظام اس ملک کی روایت میں شامل رہا ہے۔ سوامی اومکتیشورا نند نے کہا کہ آبادی کو کنٹرول کرنے کے لئے اگر کوئی قانون بنایا جاتا ہے تو ملک میں قتل جنین کو اور بڑھاوا ملے گا۔

ماگھ میلے میں جاری وشو ہندو پریشد کے سنت سمیلن میں آبادی کو کنٹرول کرنے  سے  متعلق قانون بنانے کی قرار داد منظور ہونے پر جیوتش  اور شاردا پیٹھ نے اپنے سخت رد عمل کا اظہار کیا ہے۔ جیوتش پیٹھ کے شنکرا چاریہ سوامی سروپا نند سرسوتی کے نائب  سوامی او مکتیشورا نند نے وشو ہندو پریشد کے سنت سمیلن  کے اس فیصلے کو غیر ضروری قرار دیتے ہوئے اسے ملک کی قدیم اخلاقی قدروں کے منافی قرار دیا ہے ۔ماگھ میلے واقع اپنے کیمپ میں میڈیا سے بات کرتے  ہوئے سوامی او مکتیشورا نند نے کہا کہ ملک میں آبادی کو کنٹرول کرنے کے لئے کسی قانون کی ضررورت نہیں ہے ۔

انہوں نے کہا کہ ملک کی عظیم شخصیتیں بھی  بڑے کنبوں سے تعلق رکھتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مشترکہ خاندانی نظام اس ملک کی روایت میں  شامل رہا ہے۔  سوامی اومکتیشورا نند نے کہا کہ آبادی کو کنٹرول کرنے کے لئے اگر کوئی قانون بنایا جاتا ہے تو  ملک میں قتل جنین کو اور بڑھاوا ملے گا۔

سوامی او مکتیشورا نند نے کہا کہ صرف تحمل اور  باہمی سمجھداری کی بنیاد پر ہی آبادی کے عمل پر کنٹروکیا جا سکتا ہے۔  سوامی اومکتیشورا نند نے کہا کہ وہ خود اپنے ماں باپ کی چو دہویں اولاد ہیں۔  انہو ں نے کہا کہ قدرت کے نظام کے تحت ہر بچے کو زندہ حالت میں پیدا ہونے کا حق حاصل ہے۔  ایسے میں کسی مصنوعی طریقے سے اس پر روک نہیں لگائی جا سکتی۔  سوامی اومکتیشورا نند نے وشو ہندو پریشد پر الزام لگایا کہ وہ غیر ضروری اور متنازعہ مسئلے کو ہوا دینے کا کام کر رہی ہے۔  واضح رہے کہ آر ایس  ایس چیف موہن بھاگوت نے گذشتہ دنوں یو پی کے شہر بریلی میں عوامی جلسے کو  خطاب کرتے ہوئے  ملک کی آبادی کو کنٹرول کرنے کے لئے قانون بنانے کی بات کہی تھی۔  انہوں نے بڑھتی آبادی کو ملک کے لئے ایک سنگین مسئلہ بھی قرار دیا تھا۔ آر ایس ایس چیف کے  اس بیان کے بعد  ماگھ میلے میں چلنے والے وی ایچ پی کے سنت سمیلن میں آبادی کو کنٹرول کرنے سے متعلق قانون بنانے کا قرار دا منظور کیا گیا ہے ۔

First published: Jan 22, 2020 07:33 PM IST