ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

اقلیتی کردار کا معاملہ : وقت کا تقاضہ ہے کہ ہم اب آر ایس ایس سے بات کریں : ضمیرالدین شاہ

علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے وائس چانسلر ضمیرالدین شاہ کا کہنا ہے کہ اے ایم یو کے اقلیتی کردار کو لے کر آر ایس ایس سے بات کرنا وقت کا اہم تقاضہ ہے

  • ETV
  • Last Updated: Aug 17, 2016 05:56 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
اقلیتی کردار کا معاملہ : وقت کا تقاضہ ہے کہ ہم اب آر ایس ایس سے بات کریں : ضمیرالدین شاہ
علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے وائس چانسلر ضمیرالدین شاہ کا کہنا ہے کہ اے ایم یو کے اقلیتی کردار کو لے کر آر ایس ایس سے بات کرنا وقت کا اہم تقاضہ ہے

علی گڑھ (محمد کامران ) علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے وائس چانسلر ضمیرالدین شاہ کا کہنا ہے کہ اے ایم یو کے اقلیتی کردار کو لے کر آر ایس ایس سے بات کرنا وقت کا اہم تقاضہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم تین مرتبہ کیس ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ میں ہار چکے ہیں اور جب مرکزی حکومت ہمارے ساتھ تھی ، لیکن آج ملک کی حکومت بھی اس کے خلاف کھڑی ہے ، لیکن ہمیں پورا بھروسہ ہے کہ کامیابی ہمیں ملے گی۔

یوم آزادی کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے وائس چانسلر نے سرسید احمد خاں کی مثال پیش کی اور کہا کہ انھوں نے قوم کی ترقی کے لئے انگریزوں سے گفت وشنید سے بھی پرہیز نہیں کیا تھا ۔ وقت کا تقاضہ ہے کہ ہم حکومت اور آر ایس ایس سے بات کریں ، اسی لئے میں آرایس ایس اور وزیر اعظم سے ملا تھا ۔فی الحال ان کے رخ میں کوئی تبدیلی واقع نہیں آئی ہے ، لیکن ہمیں بھروسہ ہے کہ ہم کامیاب ہوں گے۔ انھوں نے ہمارا نظریہ سمجھ لیا ہے ۔اب ان کے اوپر ہے کہ وہ ہمیں کس نظریہ سے دیکھتے ہیں۔

ضمیر الدین شاہ نے کہا کہ ہم مسلسل اقلیتی کردار کی لڑائی بہتر طریقہ سے لڑ رہے ہیں ۔ انہوں نے اعتراف کیا کہ موجودہ حکومت نے اے ایم یو کے فنڈ میں کٹوتی کی ہے۔ موجودہ وقت میں بی ایچ یو اور جامعہ ملیہ اسلامیہ سے کم فنڈ علی گڑھ کو دیا گیا ہے ۔

First published: Aug 17, 2016 05:56 PM IST