உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Taj Mahal: ’تاج محل کےکمروں میں کوئی مورتی نہیں ملی، کمرےوقتاً فوقتاً کھولےجاتے ہیں‘ ASI

    ان میں کسی بھی طرح کے بتوں کا وجود نہیں دیکھا گیا ہے۔

    ان میں کسی بھی طرح کے بتوں کا وجود نہیں دیکھا گیا ہے۔

    اے ایس آئی کے حکام نے ٹائمز آف انڈیا کو بتایا ہے کہ یہ کمرے سرکاری طور پر سیل کہلاتے ہیں۔ جو کہ مستقل طور پر بند نہیں ہیں اور حال ہی میں حفاظتی کاموں کے لیے کھولے گئے تھے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اب تک کئی سال سے جانچے گئے تمام ریکارڈوں میں سے کسی میں بھی بت یا مورتی کی موجودگی کی نشاندہی نہیں کی گئی ہے۔

    • Share this:
      الہ آباد ہائی کورٹ (Allahabad High Court) نے تاج محل (Taj Mahal) کی تاریخ کے بارے میں حقائق تلاش کرنے کی انکوائری کی درخواست کو مسترد کیا، اسی درمیان ہندوستان کے آثار قدیمہ سے متعلق سروے یعنی Archaeological Survey of India کے اعلی عہدیداروں نے کہا کہ مستقل طور پر 22 بند کمروں کو کھولنے کی درخواست کی گئی ہے۔ درخوست میں کہا گیا ہے کہ وہ کمرے رہائشی ہوسکتے ہیں۔ یا ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ وہ قدیم زمانے کے ہندو مورتیوں کا مکین تھا۔ جن کہ ان دونوں باتوں کو غلط قرار دیا گیا ہے۔

      اے ایس آئی کے حکام نے ٹائمز آف انڈیا کو بتایا ہے کہ یہ کمرے سرکاری طور پر سیل کہلاتے ہیں۔ جو کہ مستقل طور پر بند نہیں ہیں اور حال ہی میں حفاظتی کاموں کے لیے کھولے گئے تھے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اب تک کئی سال سے جانچے گئے تمام ریکارڈوں میں سے کسی میں بھی بت یا مورتی کی موجودگی کی نشاندہی نہیں کی گئی ہے۔

      رپورٹ میں صرف تین ماہ قبل بحالی کے کام سے متعلق ایک سینئر اہلکار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ مختلف ریکارڈ اور رپورٹس جن کا اب تک جائزہ لیا گیا ہے، ان میں کسی بھی طرح کے بتوں کا وجود نہیں دیکھا گیا ہے۔

      تاج محل تک سب سے زیادہ اندرونی رسائی رکھنے والوں کے مطابق مقبرے کے احاطے کے مختلف حصوں میں 100 سے زائد سیلز ہیں جو سیکورٹی اور حفاظتی وجوہات کی بناء پر عوام کے لیے ناقابل رسائی رہے ہیں اور ان میں سے کسی نے بھی ایسی کوئی دریافت نہیں کی ہے جیسا کہ اس میں الزام لگایا گیا ہے۔

      اے ایس آئی کے ایک سینئر اہلکار نے ٹائمز آف انڈیا کو بتایا کہ درخواست گزار کا 22 کمروں کے مستقل طور پر بند ہونے کا دعویٰ حقیقتاً غلط ہے کیونکہ یہ حفاظتی کاموں کے لیے استعمال ہوتے ہیں۔ جس میں دراڑیں بھرنا، دوبارہ پلستر کرنا اور منہدم ہونے سے بچنے کے علاج شامل ہیں۔ یہ کام وقتاً فوقتاً کیے جاتے ہیں۔ درحقیقت حالیہ کام پر ہمیں 6 لاکھ روپے کی لاگت آئی۔

      اے ایس آئی کے ایک اور سینئر اہلکار نے بتایا کہ 100 عوامی سیل تہہ خانے میں واقع ہیں، مرکزی مقبرے کی اونچی سطح، کونے کے 'برج'، چار مینار، باؤلی کے اندر (مسجد کے قریب) اور مشرق، مغرب میں چمیلی منزل پر یہ کمرے ہیں۔ ان کے علاوہ خطے کے دیگر عالمی ثقافتی ورثے کی یادگاروں جیسے آگرہ فورٹ اور فتح پور سیکری کے کئی علاقے سیکورٹی خدشات کی وجہ سے برسوں سے عوام کے لیے بند ہیں۔

      مزید پڑھیں: Saudi Aramco: سعودی آرامکونےایپل کوبھی پیچھےچھوڑدیا، دنیاکاسب سےقیمتی اسٹاک بننے کاملااعزاز

      بدھ کے روز جسٹس ڈی کے اپادھیائے اور سبھاش ودیارتھی کی لکھنؤ بنچ نے عرضی گزار رجنیش سنگھ کے وکیل کی، جو بی جے پی کی ایودھیا یونٹ کے میڈیا انچارج ہیں، ان کی طرف سے پی آئی ایل کو "آرام دہ" طریقے سے دائر کرنے پر تنقید کی گئی اور کہا کہ ایسا نہیں ہو سکتا۔ اس معاملے میں آئین کے دفعہ 226 کے تحت حکم جاری کریں۔

      مزید پڑھیں: Madhya Pradesh: بنارس گیان واپی مسجد کی طرزپر اجین میں بھی شروع ہوا مسجد کا تنازعہ، جانئے کیا ہے پورا معاملہ

      یہ دفعہ ہائی کورٹ کو اختیار دیتا ہے کہ وہ اپنے دائرہ اختیار کے تحت علاقے میں کسی بھی شخص یا اتھارٹی کو بنیادی حقوق کے نفاذ کے لیے احکامات یا رٹ جاری کرے۔ بنچ نے کہا کہ یہ ایک غیر منصفانہ مسئلہ ہے جس کا فیصلہ عدالت نہیں کر سکتی اور نہ ہی اس میں جا سکتی ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: