اپنا ضلع منتخب کریں۔

    گیانواپی معاملہ: کورٹ نے کہا، فریقین 2 ہفتے میں دے سکتے ہیں دلائل دو ہفتے بعد آئے گا فیصلہ

     Gyanvapi Masjid Case

    Gyanvapi Masjid Case

    گیانواپی کیمپس کے اے ایس آئی کو سروے کرانے کے حکم سے متعلق معاملے میں مسلم فریق کی طرف سے دائر درخواستوں پر ہائی کورٹ میں سماعت مکمل ہو گئی ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi, India
    • Share this:
      Gyanvapi Masjid Case: وارانسی کے گیان واپی کیس کو لے کر پیر کو الہ آباد ہائی کورٹ میں سماعت ہوئی۔ تقریباً ایک گھنٹے تک سماعت کے بعد عدالت نے فیصلہ محفوظ کر لیا۔ گیانواپی کیمپس کے اے ایس آئی کو سروے کرانے کے حکم سے متعلق معاملے میں مسلم فریق کی طرف سے دائر درخواستوں پر ہائی کورٹ میں سماعت مکمل ہو گئی ہے۔

      ہائی کورٹ نے کہا ہے کہ فریقین دو ہفتے کے اندر عدالت میں اپنے تحریری دلائل پیش کر سکتے ہیں یا عدالت میں دیگر دستاویزات داخل کر سکتے ہیں۔ اب الہ آباد ہائی کورٹ دو ہفتے بعد ہی اپنا فیصلہ دے سکتی ہے۔

      آپ کو بتاتے چلیں کہ وارانسی کے گیان واپی احاطے کو لے کر مختلف عدالتوں میں سماعت جاری ہے۔ آج الہ آباد ہائی کورٹ کے جسٹس پرکاش پانڈے کی سنگل بنچ میں اس کیس کی سماعت ہوئی۔

      تین درخواستوں پر پہلے ہی ہے فیصلہ محفوظ ۔
      وارانسی کی گیانواپی مسجد کی انتظامیہ کمیٹی اور یوپی سنی سنٹرل وقف بورڈ نے الہ آباد ہائی کورٹ میں پانچ عرضیاں دائر کی ہیں۔ ہائی کورٹ نے وارانسی کی عدالت میں سال 1991 میں دائر کیس کی برقراری سے متعلق تین درخواستوں پر پہلے ہی اپنا فیصلہ محفوظ کر لیا ہے۔ اس کے ساتھ ہی اے ایس آئی نے پچھلی سماعت کے دوران داخل کیے گئے حلف نامہ میں کہا تھا کہ اگر عدالت حکم دیتی ہے تو وہ متنازعہ جگہ کا سروے کرے گی اور حقیقت جاننے کی کوشش کرے گی۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: