உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Narendra Modi: ’جو لوگ مفت پر یقین رکھتے ہیں، وہ کبھی بھی انفراسٹرکچر کی تعمیر نہیں کریں گے‘

    وزیر اعظم نریندر مودی

    وزیر اعظم نریندر مودی

    وزیر اعظم نریندر مودی نے نوجوانوں کو خبردار کیا کہ آپ کا حال ضائع ہو جائے گا اور آپ کا مستقبل تاریکیوں میں دھکیل دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ جو لوگ مفت کی تقسیم پر یقین رکھتے ہیں، وہ کبھی بھی انفراسٹرکچر کی تعمیر نہیں کریں گے۔

    • Share this:
      بندیل کھنڈ ایکسپریس وے (Bundelkhand expressway) کا افتتاح کرتے ہوئے وزیر اعظم نریندر مودی (Narendra Modi) مفت خوری کے خلاف بڑا بیان دیا ہے۔ انتخابات کے دوران سیاست دانوں اور پارٹیوں کی جانب سے منہ بھرانے کے لیے وعدوں کے خلاف انہوں نے کہا کہ مفت کا وعدہ کرکے ووٹ حاصل کرنے کا کلچر ملک کی معاشی ترقی کو نقصان پہنچاتا ہے۔

      وزیر اعظم نریندر مودی نے نوجوانوں کو خبردار کیا کہ آپ کا حال ضائع ہو جائے گا اور آپ کا مستقبل تاریکیوں میں دھکیل دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ جو لوگ مفت کی تقسیم پر یقین رکھتے ہیں، وہ کبھی بھی انفراسٹرکچر کی تعمیر نہیں کریں گے۔ ملک کے مستقبل کو محفوظ بنانے کے لیے اس طرح کے جھانسوں میں پھنسے کی ضرورت نہیں ہے۔

      انھوں نے مختصر تقریر کے دوران اختصار کے ساتھ پاپولزم کے خلاف دلیل پیش کی۔ اس تقریر نے عام آدمی پارٹی کے سپریمو اروند کیجریوال (Arvind Kejriwal) کے غصے کو اپنی طرف متوجہ کیا، جنہوں نے مفت بجلی دینے کی اپنی ٹریڈ مارک پالیسی کا دفاع کیا۔ اگر ان کی پارٹی گجرات انتخابات (Gujarat elections) جیتتی ہے تو ہر گھر کو 300 یونٹ مفت بجلی دینے کے ان کے وعدے کا تخمینہ ہے۔

      پی ایم مودی نے کہا کہ گجرات  کو سالانہ 8700 کروڑ روپے کی لاگت آئے گی۔ اس طرح کی پالیسیوں کے نتیجے میں ریاستی حکومتوں کی طرف سے بجلی پیدا کرنے اور تقسیم کرنے والی کمپنیوں کے ذمے کل بقایا رقم میں برسوں کے دوران قرض 2,40,710 کروڑ روپے تک پہنچ گئے۔ ایسے شعبے میں کون سرمایہ کاری کرنا چاہے گا؟

      انھوں نے کہا کہ اس سے بھی اہم بات یہ ہے کہ اس طرح کی پالیسیاں اور گھریلو بجلی کی کھپت کی کراس سبسڈی تجارتی اور صنعتی صارفین کے لیے بجلی کی قیمتوں میں اضافہ کرتی ہے، جس سے ان کی مسابقت کم ہوتی ہے۔ سال 2019 میں OECD کی ایک رپورٹ نے بجلی کی فراہمی کے معیار پر ہندوستان کو 141 معیشتوں میں سے 108 ویں نمبر پر رکھا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:

      MCCI: حیدرآباد میں پہلی بار سہ روزہ بین الاقوامی بزنس سمٹ کا انعقاد، ماہرین تجارت کی شرکت

      پی ایم مودی نے مزید کہا کہ اگرچہ مفت بجلی سب سے بڑی مثال ہو سکتی ہے، لیکن بدحالی پوری معیشت کو متاثر کرتی ہے۔ مثال کے طور پر زرعی آمدنی پر ٹیکس نہ لگانے کا کیا جواز ہے؟ شکر کا شعبہ سبسڈی اور ریگولیٹڈ قیمتوں سے کیوں پریشان ہے؟ پانی کو اس کی حقیقی قیمت پر قیمت دینے کے رجحان کی وجہ سے ملک تباہی کی طرف دیکھ رہا ہے۔ ہم نے دیکھا ہے کہ کس طرح یک طرفہ کھاد کی سبسڈی نے مٹی کو متاثر کیا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:

       

      Oil Prices: صارفین کیلئے خوشخبری! خوردنی تیل کی قیمتوں میں 10 سے 12 روپے تک کمی کا امکان!

      پی ایم مودی نے کہا کہ ایسی بہت سی مثالیں ہیں، جو کہ مفت لیپ ٹاپ، ٹی وی سیٹ، منگل سوتر اور یہاں تک کہ بکروں کے وعدوں سے کہیں زیادہ نقصان پہنچاتی ہیں، جو حالیہ انتخابات کا باقاعدہ سائیڈ شو ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: