உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    COVID-19: کیا آپ بیرون ملک کا سفر کرنا چاہتے ہیں؟ کیا ہیں اب کووڈ۔19 سفری پروٹوکال؟

    تمام بالغ افراد کووڈ ویکسین کی خوراک کے لیے اہل ہیں۔

    تمام بالغ افراد کووڈ ویکسین کی خوراک کے لیے اہل ہیں۔

    اطلاعات کے مطابق یہ موضوع یقینی طور پر مستقبل کے اجلاس میں اٹھایا جائے گا۔ اس وقت 18 سال سے زیادہ عمر کا کوئی بھی شخص جس نے دوسری خوراک کے بعد سے نو ماہ مکمل کر لیے ہوں، احتیاطی خوراک کے لیے اہل ہے۔

    • Share this:
      قومی ٹیکنیکل ایڈوائزری گروپ آن امیونائزیشن (NTAGI) نے سفارش کی ہے کہ جن افراد کو بیرون ملک سفر کرنے کی ضرورت ہے وہ نو ماہ کے انتظار کی مدت سے پہلے کووڈ۔19 ویکسینیشن (Covid vaccination) کی احتیاطی خوراک لے سکتے ہیں۔ قومی ٹیکنیکل ایڈوائزری گروپ آن امیونائزیشن نے ابھی تک سب کے لیے دوسری خوراک اور احتیاطی تدابیر کے درمیان فرق کو نو ماہ سے چھ ماہ تک کم کرنے کی سفارش نہیں کی ہے۔

      اطلاعات کے مطابق یہ موضوع یقینی طور پر مستقبل کے اجلاس میں اٹھایا جائے گا۔ اس وقت 18 سال سے زیادہ عمر کا کوئی بھی شخص جس نے دوسری خوراک کے بعد سے نو ماہ مکمل کر لیے ہوں، احتیاطی خوراک کے لیے اہل ہے۔

      مرکزی وزارت صحت سے ان لوگوں کے لیے کووڈ ویکسین کی احتیاطی خوراک کے لیے متعدد درخواستیں کی گئی ہیں جنہیں کام، کاروبار، غیر ملکی تعلیمی اداروں میں داخلہ، کھیلوں کے مقابلوں میں شرکت، اور ہندوستان کے سرکاری وفد کے حصے کے طور پر دو طرفہ اور کثیرالجہتی ملاقاتوں کے لیے بیرون ملک سفر کرنا چاہیے۔

      مزید پڑھیں: Defense Companies in Profit:کارپوریٹائزیشن کے بعد دفاعی کمپنیوں نے کمایا خوب منافع

      اس سال 10 جنوری سے ہندوستان نے صحت کی دیکھ بھال اور فرنٹ لائن ورکرز کے ساتھ ساتھ 60 سال یا اس سے زیادہ عمر کے لوگوں کو ویکسین کی احتیاطی خوراکیں تقسیم کرنا شروع کیں۔ مارچ میں comorbidity کی فراہمی کو ہٹا دیا گیا، جس سے 60 سال سے زیادہ عمر کے تمام بالغ افراد کووڈ ویکسین کی خوراک کے لیے اہل ہو گئے۔

      مزید پڑھیں: امتحانی تناؤ کو کم کرنے Instagram نےاٹھایا قدم، ’مابعد کووڈ۔19طلبا کی ہوگی بہتر رہنمائی‘

      وہیں دس اپریل کو ہندوستان میں 18 سال سے زیادہ عمر کے تمام بالغوں کو نجی ویکسینیشن مراکز پر COVID-19 ویکسین کی خوراک فراہم کرنا شروع کی۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: