உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    فیس بک میں پھر آئی پریشانی، ہفتے میں دوسری بار ہوا ٹھپ، کمپنی نے مانگی معافی

    علامتی تصویر

    علامتی تصویر

    کمپنی نے کہا ، 'ہم ان لوگوں سے معذرت خواہ ہیں جو گزشتہ چند گھنٹوں سے ہماری مصنوعات استعمال نہیں کر پا رہے ہیں۔ ہم نے مسئلہ حل کر لیا ہے اور سب کچھ معمول پر ہو جانا چاہیے۔

    • Share this:
      کیلی فورنیا سوشل میڈیا  (Social Media)  کمپنی فیس بک  (Facebook) نے حال ہی میں پلیٹ فارم  کے ٹھپ ہونے کو لیکر معافی مانگی ہے۔ جمعہ کے ایک ہفتے میں دوسری بار ، انسٹاگرام  (Instagram)، میسنجر  (Messenger) اور ورک پلیس جیسی فیس بک خدمات کو کچھ وقت کیلئے بند کرنے کی خبریں آئی تھیں۔ کمپنی کا کہنا ہے کہ اس بار صارفین کو درپیش مسائل کمپیوٹنگ پلیٹ فارم میں تکنیکی خرابی کے ذمہ دار ہیں۔ اس سے قبل پیر کو کمپنی کی خدمات تقریبا  6 گھنٹے بند رہنے کے بعد بحال کی جا سکی تھیں۔

      کمپنی نے کہا ، 'ہم ان لوگوں سے معذرت خواہ ہیں جو گزشتہ چند گھنٹوں سے ہماری مصنوعات استعمال  نہیں کر پا رہے  ہیں۔ ہم نے مسئلہ حل کر لیا ہے اور سب کچھ معمول پر ہو جانا  چاہیے۔ آنے والے مسائل کے معاملات میں اضافہ ہوا ہے۔ آؤٹیج ( وہ وقت جب صارفین کسی خدمات کا استعمال نہیں کر پا رہہا ہو) کو ٹریک کرنے والی کمپنی  DownDetector نے بتایا ہے کہ فیس بک، انسٹاگرام، میسنجر اور وہاٹس ایپ استعمال کرنے میں آنے والی پریشانیوں کے میں معاملات میں اضافہ ہوا ہے۔

      کچھ صارفین حالیہ پریشانی کے دوران انسٹاگرام فیڈز پر کام کرنے سے قاصر تھے۔ اسی وقت  دوسرے یوزرس فیس بک میسنجر پر پیغامات بھیجنے کے قابل نہیں تھے۔ اب انٹرنیٹ صارفین نے اس آؤٹیج کے حوالے سے ایک بار پھر ٹوئٹر کا رخ کیا اور ایک ہفتے میں دوسری بار اس مسئلے کے بارے میں میمز شیئر کیے۔ فیس بک کے مطابق ، انسٹاگرام نے اس دوران  پرسکون رہنے اور "اس ہفتے کے تمام میمز" کے لیے صارفین  کا شکریہ ادا کیا۔

      پیر کے روز سوشل میڈیا کمپنی کے اسٹاک میں 4.9 فیصد کی گراوٹ درج کی گئی۔ جبکہ ستمبر کے وسط سے ہی تقریباً 15 فیصد کی گراوٹ دیکھی گئی ہے۔ پیر کو اسٹاک میں ہوئی تبدیلی کے بعد مارک زکربرگ کی 12 ہزار 160 کروڑ ڈالر پر آگئی ہے۔ بلومبرگ کی فہرست میں فیس بک کے سی ای او کا نام اب بل گیٹس کے نیچے پہنچ گیا ہے۔ پیر کو ٹھپ ہوئے فیس بک پروڈکٹس کے سبب کروڑوں صارفین متاثر ہوئے تھے۔
      واضح رہے کہ پیر کے روز سوشل میڈیا سائٹس فیس بک، انسٹاگرام اور وہاٹس ایپ کی سروس عالمی سطح پر ڈاون ہوگئی، جس کی وجہ سے صارفین کو کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ ان سوشل میڈیا پلیٹ فارم کی سروس کئی گھنٹوں تک ڈاون رہی۔ صارفین ٹوئٹ کرکے اپنی اپنی پریشانیوں کا اظہار کررہے ہیں۔ وہیں فیس بک نے ٹوئٹ کرکے کہا کہ ہم جانتے ہیں کچھ لوگوں کو ہمارے ایپس اور مصنوعات تک پہنچنے میں پریشانی ہورہی ہے۔ ہم اسے جلد از جلد معمول پر لانے کیلئے کام کررہے ہیں اور کسی بھی طرح کی تکلیف کے لئے معذرت خواہ ہیں۔

      وہیں وہاٹس ایپ نے اپنے سرکاری ٹوئٹر اکاونٹ پر کہا کہ ہم جانتے ہیں کہ کچھ لوگ اس وقت وہاٹس ایپ پر مسائل کاسامنا کررہے ہیں۔ ہم اسے معمول پر لانے کے لئے کام کررہے ہیں اور جلد از جلد معلومات کو اپ ڈیٹ کریں گے۔ آپ کے صبر کے لئے شکریہ۔ دوسری جانب انسٹا گرام نے کہا کہ انسٹا گرام کے دوستوں ابھی ہم تھوڑے مشکل وقت سے گزر رہے ہیں اور آپ ان کا استعمال کرنے میں پریشانی ہوسکتی ہے۔ ہمارے ساتھ رہیں ہم اس پر ہیں۔
      مسئلہ اس وقت شروع ہوا جب انجینئر فیس بک کے عالمی نیٹ ورک پر روزانہ کام کر رہے تھے۔ اس نیٹ ورک میں ، دنیا بھر میں واقع مراکز میں کمپیوٹر ، روٹرز اور سافٹ وئیر فائبر آپٹک کیبلز کے ذریعے جڑے ہوئے ہیں۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: