ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

نبام تكی نے دیا استعفی ، پیما كھانڈو ہوں گے اروناچل پردیش کے نئے وزیر اعلی

سابق وزیر اعلی دورجي كھانڈو کے بیٹے اور کانگریس کے ممبر اسمبلی پیما كھانڈو ریاست کے نئے وزیر اعلی ہوں گے۔ تكي اور كھانڈو نے ہفتہ کو گورنر سے ملاقات کی۔

  • Pradesh18
  • Last Updated: Jul 16, 2016 08:45 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
نبام تكی نے دیا استعفی ، پیما كھانڈو ہوں گے اروناچل پردیش کے نئے وزیر اعلی
سابق وزیر اعلی دورجي كھانڈو کے بیٹے اور کانگریس کے ممبر اسمبلی پیما كھانڈو ریاست کے نئے وزیر اعلی ہوں گے۔ تكي اور كھانڈو نے ہفتہ کو گورنر سے ملاقات کی۔

ايٹانگر: اروناچل پردیش کے وزیر اعلی نبام تكي کے استعفی کے بعد سابق وزیر اعلی دورجي كھانڈو کے بیٹے اور کانگریس کے ممبر اسمبلی پیما كھانڈو ریاست کے نئے وزیر اعلی ہوں گے۔ تكي اور كھانڈو نے ہفتہ کو گورنر سے ملاقات کی۔ تكي نے وزیر اعلی کے عہدے سے استعفی نامہ سونپ دیا۔ راج بھون کے ترجمان کے مطابق کہ گورنر نے ان کا استعفی منظور کر لیا ہے۔

قبل ازیں تكي نے کانگریس ممبر اسمبلی پارٹی کے لیڈر کے عہدہ سے استعفی دے دیاتھا ، جس کے بعد كھانڈو کا راستہ صاف ہو گیا۔ تكي کی حکومت بدھ کو سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد بحال کی گئی تھی۔ کانگریس پارٹی اراکین کی ہفتہ کو ہوئی میٹنگ میں تكي نے كھانڈو کے نام کی تجویز پیش کی، جسے پارٹی کے تمام 44 ممبران اسمبلی نے حمایت کی ۔ ان میں کانگریس کے 15 اور پارٹی کے 29 باغی ممبر ان اسمبلی بھی شامل ہیں ، جو فروری میں پیپلز پارٹی آف اروناچل سے وابستہ ہوگئے تھے۔

ان 44 ارکان اسمبلی میں سابق وزیر اعلی كالیكھو پل بھی شامل ہیں، جنہوں نے فروری میں تكي کو اقتدار سے بے دخل کر دیا تھا اور خود وزیر اعلی بن گئے تھے۔ تكي نے راج بھون سے نکلنے کے بعد کہا کہ یہ اروناچل پردیش میں کانگریس کی بڑی جیت ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ حال میں جو بھی سیاسی بحران پیدا ہوا، وہ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کی دین تھی۔ لیکن تمام حربے دھرے کے دھرے رہ گئے، کیونکہ کانگریس اپنا قلعہ بچانے میں کامیاب رہی اور مجھے امید ہے کہ بی جے پی کو اس سے بڑا سبق ملا ہوگا ۔

كھانڈو نے کہا کہ تكي نے اپنا استعفی نامہ سونپ دیا ہے اور میں نے گورنر کو ان 44 ارکان اسمبلی کی فہرست سونپ دی ہے، جو وزیر اعلی کے طور پر میری حمایت کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ گورنر نے کہا کہ وہ رسمی کارروائی پوری کریں گے اور ہمیں اگلے قدم کے بارے میں بتائیں گے۔ دہلی کے ہندو کالج سے گریجویٹ كھانڈو طیارہ حادثہ میں اپنے والد کی موت کے بعد سال 2011 میں تكي کی حکومت میں وزیر بنائے گئے تھے۔

First published: Jul 16, 2016 08:42 PM IST