உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    India-UK talks: یوکرین جنگ، ہند-بحرالکاہل، دفاعی تعلقات اور روڈ میپ 2030 پر توجہ مرکوز

    Youtube Video

    پی ایم مودی نے جمعہ کی سہ پہر کو ایک مشترکہ پریس بریفنگ میں کہا کہ ہم نے یوکرین میں فوری جنگ بندی اور مسئلے کے حل کے لیے مذاکرات اور سفارت کاری پر زور دیا۔ ہم نے تمام ممالک کی علاقائی سالمیت اور خودمختاری کے احترام کی اہمیت کو بھی دہرایا ہے۔

    • Share this:
      یوکرین (Ukraine) میں تشدد کا فوری خاتمہ، آب و ہوا اور توانائی میں شراکت داری اور ہند-بحرالکاہل خطے کو "آزاد اور کھلا" رکھنا وزیر اعظم نریندر مودی (Prime Minister Narendra Modi) اور برطانیہ کے وزیر اعظم بورس جانسن (United Kingdom's Boris Johnson) کے درمیان جمعہ کے روز ہونے والی بات چیت کا مرکزی نقطہ رہا ہے۔

      برطانوی وزیر اعظم نے جمعرات کو اپنے دو روزہ ہندوستان کے دورے کا آغاز وزیر اعظم مودی کی آبائی ریاست گجرات سے کیا۔ دونوں ممالک نے جمعہ کو ایک نئے دفاعی تعاون کے معاہدے پر دستخط کیے اور سال کے آخر تک آزاد تجارتی معاہدے کو مکمل کرنے کی کوشش کریں گے۔ پی ایم مودی نے کہا کہ ’’ہم نے روڈ میپ 2030 کے نفاذ میں ہونے والی پیش رفت کا جائزہ لیا اور مستقبل کے لیے کچھ اہداف بھی طے کیے‘‘۔

      ہندوستان-برطانیہ مذاکرات کے اہم نکات یہ ہیں:

      1. پی ایم مودی نے جمعہ کی سہ پہر کو ایک مشترکہ پریس بریفنگ میں کہا کہ ہم نے یوکرین میں فوری جنگ بندی اور مسئلے کے حل کے لیے مذاکرات اور سفارت کاری پر زور دیا۔ ہم نے تمام ممالک کی علاقائی سالمیت اور خودمختاری کے احترام کی اہمیت کو بھی دہرایا ہے۔

      2. بورس جانسن کا دورہ ہندوستان اس وقت سے اہمیت رکھتا ہے جب انہوں نے حال ہی میں کیف میں یوکرین کے ولادیمیر زیلینسکی (Ukraine's Volodymyr Zelensky in Kyiv) سے ملاقات کی تھی۔ برطانیہ مسلسل روس سے ملک میں تشدد ختم کرنے کے لیے کہہ رہا ہے۔ اس نے پابندیاں بھی متعارف کرائی ہیں۔ ماسکو نے 24 فروری کو یوکرین پر حملہ شروع کیا۔

      3. وزیر اعظم مودی نے کہا کہ آزادی کا امرت مہوتسو (ہندوستان کی آزادی کے 75 ویں سال) کے دوران وزیر اعظم بورس جانسن کا دورہ ہندوستان تاریخی اہمیت کا حامل ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہندوستان انڈو پیسیفک اوشین انیشیٹو میں شامل ہونے کے برطانیہ کے فیصلے کا خیرمقدم کرتا ہے۔ جانسن نے جواب دیتے ہوئے کہا کہ وہ ہندوستان کے استقبال سے بہت خوش ہیں۔

      4. وہیں جانسن نے کہا کہ دونوں ممالک نے آزاد ہند-بحرالکاہل خطے کی ضرورت پر اتفاق کیا۔ جانسن نے کہا کہ پچھلے سال سے مطلق العنان جبر کے خطرات اور بھی بڑھ گئے ہیں، اس لیے یہ ضروری ہے کہ ہم اپنے تعاون کو گہرا کریں جس میں انڈو پیسیفک کو کھلا اور آزاد رکھنے میں ہماری مشترکہ دلچسپی بھی شامل ہے۔

      مزید پڑھیں: Jobs in Telangana: تلنگانہ میں 80 ہزار نئی نوکریوں کا اعلان، لیکن پہلے سے وعدہ شدہ اردو کی 558 ملازمتیں ہنوز خالی!

      5. انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے آج شاندار بات چیت کی ہے اور اپنے تعلقات کو ہر طرح سے مضبوط کیا ہے۔ ہندوستان اور برطانیہ کے درمیان شراکت داری ہمارے دور کی واضح دوستی میں سے ایک ہے۔

      6. برطانیہ کے وزیر اعظم بورس جانسن نے کہا کہ برطانیہ ہندوستان کو اپنے لڑاکا طیارے بنانے میں بھی مدد کرے گا۔

      7. جانسن نے جمعہ کو نئی شراکت داری کو ’دہائیوں پر محیط عزم‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ دونوں ممالک کی انڈو پیسیفک کو کھلا اور آزاد رکھنے میں مشترکہ مفاد ہے۔

      مزید پڑھیں: TMREIS: تلنگانہ اقلیتی رہائشی اسکول میں داخلوں کی آخری تاریخ 20 اپریل، 9 مئی سے امتحانات

      8. پی ایم مودی نے افغانستان پر بھی تشویش کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ ضروری ہے کہ افغان سرزمین دوسرے ممالک میں دہشت گردی پھیلانے کے لیے استعمال نہ ہو۔

      9. دونوں ممالک نے اس بات پر بھی اتفاق کیا کہ آزاد تجارتی معاہدے کے حوالے سے پیش رفت ہو رہی ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: