ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

یوگی حکومت کے اس فیصلے سے بی جے پی رکن پارلیمنٹ ساکشی مہاراج ناراض، کہی یہ بات

ساکشی مہاراج اکثر متنازعہ بیان دیتے رہتے ہیں، لیکن جب اپوزیشن حکومت کو گھیرنے میں لگا ہو ایسے میں ان کا اپنی ہی حکومت کے خلاف ناراضگی ظاہر کرنا چونکانے والا ہے

  • Share this:
یوگی حکومت کے اس فیصلے سے بی جے پی رکن پارلیمنٹ ساکشی مہاراج ناراض، کہی یہ بات
بی جے پی رکن پارلیمنٹ ساکشی مہاراج: فائل فوٹو۔

لکھنئو۔ اناو سے بی جے پی (BJP)  رکن پارلیمنٹ ساکشی مہاراج (Sakshi Maharaj) نے شراب کی فروخت (Liquor Sale) شروع کرنے کے فیصلے پر یوگی حکومت کو کٹگہرے میں کھڑا کیا ہے۔ رکن پارلیمنٹ ساکشی مہاراج نے ٹویٹ کر فیصلہ پر ناراضگی ظاہر کی ہے۔ ساکشی مہاراج نے کہا ہے کہ لاک ڈاون عوام کی زندگی کی حفاظت اور بہتر صحت کے لئے ہے تو پھر شراب، بیڑی، سگریٹ، گٹکا، پان پراگ وغیرہ نشیلی اشیا کی فروخت پر چھوٹ کیوں ہے؟




ساکشی مہاراج اکثر متنازعہ بیان دیتے رہتے ہیں، لیکن جب اپوزیشن حکومت کو گھیرنے میں لگا ہو ایسے میں ان کا اپنی ہی حکومت کے خلاف ناراضگی ظاہر کرنا چونکانے والا ہے۔ اس سے پہلے کانپور کے بی جے پی رکن پارلیمنٹ ستیہ دیو چودھری نے بھی یوپی میں شراب کی دکانیں کھولے جانے کی مخالفت کی ہے۔ انہوں نے اس سلسلہ میں یوگی آدتیہ ناتھ کو ایک خط بھی لکھا ہے۔ اس خط میں رکن پارلیمنٹ نے کہا ہے کہ ریڈ زون میں شراب کی فروخت بند کی جائے۔


بی جے پی رکن پارلیمنٹ ستیہ دیو چودھری نے وزیر اعلیٰ یوگی کو لکھے اپنے خط میں شراب کی فروخت کے دوران سوشل ڈسٹینسنگ کے ضوابط پر عملدرآمد نہ ہونے کا حوالہ دیتے ہوئے دکانیں بند کرنے کی اپیل کی ہے۔ خط میں لکھا ہے کہ حکومت نے کورونا وائرس کے انفیکشن کو پھیلنے سے روکنے کے لئے لاک ڈاون لگا کر چالیس دنوں تک محنت کی ہے۔ وزیر اعلیٰ یوگی کی تعریف کرتے ہوئے انہوں نے کہا ہے کہ آپ کی قیادت میں کووڈ۔ انیس جیسی وبا پر قابو پانے کی کوشش کی جا رہی ہے، لیکن چار مئی سے لاک ڈاون میں کچھ چھوٹ دی گئی ہے جس میں شراب کی دکانوں کو کھولنے کی اجازت بھی شامل ہے۔

 

 
First published: May 07, 2020 09:19 AM IST