உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    یو این ایس سی میں بحری سلامتی پر ہندوستان کی باتوں کو دنیا نے کیا قبول ، وزیر اعظم مودی نے کی تھی اتحاد کی اپیل

    یو این ایس سی میں بحری سلامتی پر ہندوستان کی باتوں کو دنیا نے کیا قبول ، وزیر اعظم مودی نے کی تھی اتحاد کی اپیل ۔ (ANI)

    یو این ایس سی میں بحری سلامتی پر ہندوستان کی باتوں کو دنیا نے کیا قبول ، وزیر اعظم مودی نے کی تھی اتحاد کی اپیل ۔ (ANI)

    صدارتی خطاب کے دوران وزیر اعظم مودی (Narendra Modi) نے سمندروں کو ایک مشترکہ ورثہ قرار دیتے ہوئے بحری سلامتی کے پانچ اصول بتائے ۔ بعد میں سلامتی کونسل نے ہندوستان کی صدارتی تقریر کو قبول کر لیا ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : بحری سلامتی کے حوالے سے پیر کو منعقدہ اقوام متحدہ کے سلامتی کونسل (یو این ایس سی) کے اجلاس میں ہندوستان کی باتوں کو پوری دنیا نے قبول کیا ہے ۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے اس اجلاس کی صدارت کی ۔ صدارتی خطاب کے دوران وزیر اعظم مودی نے سمندروں کو ایک مشترکہ ورثہ قرار دیتے ہوئے بحری سلامتی کے پانچ اصول بتائے ۔ بعد میں سلامتی کونسل نے ہندوستان کی صدارتی تقریر کو قبول کر لیا ۔

      اجلاس میں وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا : ’سمندر ہماری مشترکہ وراثت ہیں اور سمندری راستے بین الاقوامی تجارت کی لائف لائن ہیں ۔ یہ مہا ساگر ہمارے سیارے کا مستقبل کے لئے بہت اہمیت رکھتے ہیں۔ ہماری یہ مشترکہ وراثت کئی طرح کے چیلنجز کا سامنا کر رہی ہے ۔ دہشت کو بڑھاوا دینے کے لئے سمندری شاہراہوں کا استعمال کیا جا رہا ہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ ہمارے علاقے میں سمندری تحفظ کو لے کر ایک جامع فریم ورک تیار ہو۔ یہ فریم ورک ساگر پر مبنی ہو۔ یہ نظریہ محفوظ اور مستحکم سمندری شاہراہ یقینی کرنے کے لئے پابند عہد ہے۔


      وزیر اعظم مودی نے کہا کہ ہمیں سمندری تجارت کی رکاوٹوں کو ختم کرنا ہوگا۔ ہماری خوشحالی سمندری تجارت پر منحصر کرتی ہے، اس میں کسی بھی طرح کی رکاوٹ ہمارے مستقبل کے لئے چیلنجز کھڑی کرسکتی ہے۔

      پانچ اصولوں پر عمل کرنا ہوگا: وزیر اعظم

      سمندری تحفظ کے لئے وزیر اعظم نریندر مودی نے میٹنگ میں 5 بنیادی اصولوں کا بھی ذکر کیا۔ انہوں نے کہا کہ اگر سمندری شاہراہوں سے چلانا ہے تو پانچ اصولوں پر عمل کرنا ہوگا۔

      ہمیں سمندری تجارت میں پیدا ہونے والی رکاوٹوں کو ہٹانا ہوگا، جس سے قانونی تجارت کو منظم کیا جاسکے۔

      سمندری تنازعہ کا نمٹارہ پُرامن اور بین الاقوامی ضوابط کے مطابق کیا جانا چاہئے۔

      ذمہ داری سمندری کنیکٹیوٹی کی حوصلہ افزائی کی جانی چاہئے۔

      ہمیں سمندری ماحولیات اور وسائل کا تحفظ کرنا ہوگا۔

      نان اسٹیٹ ایکٹرس اور قدرتی آفات کے ذریعہ پیدا کئے گئے سمندری چیلنجز کا سامنا ایک ساتھ مل کر کیا جانا چاہئے۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: