உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    سپریم کورٹ نے لوک آیکت پر اکھلیش حکومت کی سرزنش کرخود لوک آیکت کی تقرری کردی

    نئی دہلی۔  عدالت عظمی نے اپنے خصوصی اختیار کا استعمال کرتے ہوئے ملازمت سے سبکدوش چیف جسٹس کو اترپردیش کا لوک آیکت مقرر کیا ہے۔

    نئی دہلی۔ عدالت عظمی نے اپنے خصوصی اختیار کا استعمال کرتے ہوئے ملازمت سے سبکدوش چیف جسٹس کو اترپردیش کا لوک آیکت مقرر کیا ہے۔

    نئی دہلی۔ عدالت عظمی نے اپنے خصوصی اختیار کا استعمال کرتے ہوئے ملازمت سے سبکدوش چیف جسٹس کو اترپردیش کا لوک آیکت مقرر کیا ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی۔  عدالت عظمی نے اپنے خصوصی اختیار کا استعمال کرتے ہوئے ملازمت سے سبکدوش چیف جسٹس کو اترپردیش کا لوک آیکت مقرر کیا ہے۔ عدالت عظمی نے لوک آیکت کی تقرری میں ہورہی تاخیر کے سبب پیر کے روز اترپردیش کی سرزنش کرتےہوئے اسے دو دن کے وقفے میں ہی تقرری کی ہدایت دی تھی۔ ریاستی حکومت کے اس کام میں ناکام ہونے پر عدالت نے خود لوک آیکت کی تقرری کردی۔


      چیف جسٹس رنجن گوگوئی اور جسٹس این وی رمنا کی بنچ نے ریاستی حکومت سے کہا تھا کہ وہ بدھ تک لوک آیکت کی تقرری کرے یا پھر سنگین نتائج بھگتنے کے لئے تیار رہے۔
      عدالت نے کہا کہ اگر اس کے حکم کی تعمیل نہیں ہوئی تو ریاست کے چیف سکریٹری کو عدالت میں پیش ہونا پڑے گا۔ عدالت عظمی نے کہا کہ اگر آپ لوک آیکت کی تقرری میں ناکام رہتے ہیں تو ہم حکم میں لکھیں گے کہ وزیراعلی اور الہ آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اپنی ڈیوٹی کرنے میں ناکام رہے۔


      عدالت نے اسی مہینے ریاستی حکومت کو نوٹس جاری کرکے لوک آیکت کی تقرری نہ کرنے پر جواب طلب کیا تھا۔ عدالت نے پوچھا کہ 24 اپریل 2014 کو جب اس نے چھ مہینے کے اندر ریاست میں نئے لوک آیکت کی تقرری کا حکم دیا تھا تو اب تک اس پر عمل کیوں نہیں کیا گیا۔

      First published: