ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

یو پی تعلیمی بورڈ : جان ہتھیلی پر رکھ کر ٹیچرس کر رہے ہیں کاپیوں کی جانچ

اس بار یو پی بورڈ کے ہائی اسکول اور انٹر میڈیٹ میں تقریباً تین کروڑ پچاس لاکھ طلبا ء اور طالبات نے امتحانات دئے ہیں۔

  • Share this:
یو پی تعلیمی بورڈ : جان ہتھیلی پر رکھ کر ٹیچرس کر رہے ہیں کاپیوں کی جانچ
یو پی تعلیمی بورڈ : جان ہتھیلی پر رکھ کر ٹیچرس کر رہے ہیں کاپیوں کی جانچ

الہ آباد۔ یو پی بورڈ کے ہائی اسکول اور انٹر میڈیٹ کے امتحانات کی  تقریباً ساڑھے تین کروڑ کاپیوں کے جانچنے اور ان پر نمبر دینے کا کا م لاک ڈاؤن کی وجہ سے  ادھورا پڑا ہوا ہے ۔اب یو پی حکومت نے ہائی اسکول اور انٹر میڈیٹ کی کا پیاں جانچنے کا کام پانچ مئی سے شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔لیکن  حکومت کی طرف سے بنائے گئے ویلو یشن سینٹروں پر سماجی فاصلوں کی جم کر  دھجیاں اڑائی جا رہی ہیں ۔


ویلوایشن سینٹروں  پر کورونا سے بچاؤ کے لئے کوئی معقول  انتظام نہیں کیا گیا ہے۔  ویلو ایشن سینٹروں  پرٹیچرس اپنی جان پر کھیل کر غیر محفوظ ماحول میں کاپیاں جانچنے کا کام کر رہے ہیں  ۔ایسی صورت حال میں  ٹیچروں کی طرف سے ریاستی حکومت کے اس  فیصلے  کی سخت مخالفت شروع ہو گئی ہے ۔ ٹیچروں کا کہنا ہے کہ کو رونا وائرس کے خطرات دن بہ دن بڑھتے جا رہے ہیں ۔ ان حالات  میں ہزاروں کاپیوں کے جانچنے کا کام ایک سا تھ بیٹھ کر کرنا  کسی بھی طرح خطرے سے خالی نہیں ہے ۔ٹیچروں کا یہ بھی کہنا ہے کہ لاک ڈاؤن  کے چلتے دور دراز  علاقوں میں  رہنے والے ٹیچروں کا ویلوایشن سینٹر پہنچنا مشکل ہو رہا ہے ۔ٹیچروں  نے  ریاستی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ کاپیاں جانچنے کا کام ۱۷؍ مئی کے بعد  شروع کرایا جائے ۔


ویلوایشن سینٹروں پر کورونا سے بچاؤ کے لئے کوئی معقول انتظام نہیں کیا گیا ہے۔


لاک ڈاؤن کے اعلان کے بعد ریاستی حکومت نے ہائی اسکول اور انٹر میڈیٹ کی کاپیاں جانچنے کا کام روک دیا تھا ۔لیکن  پانچ مئی سے  بورڈ کی  کاپیوں کے جانچنے کا کام پھر سے شروع کرا دیا گیا ہے۔  یو پی میں ٹیچروں کی تنظیم کے نائب صدر ڈاکٹر ہری  پرکاش یادؤ کا کہنا ہے کہ  طویل لاک ڈاؤن کے چلتے زیادہ تر ٹیچرس اپنے ہوم ٹاؤن میں پھنسے ہوئے ہیں ۔ان میں بھی ایسے ٹیچروں کی کافی تعداد ہے جو ریاست کے دور دراز علاقوں میں رہتے ہیں اور  لاک ڈاؤن کے چلتے ان کو ویلو ایشن سینٹروں تک پہنچنے میں کافی مشکلات کا سامنا ہے ۔ ڈاکٹر ہری پرکاش اس بات پر زور دیتے ہیں کہ ۱۷؍ مئی کے بعد لاک ڈاؤن میں مزید نرمی دئے جانے کی امید ہے ایسے میں ریاستی حکومت کاپی جانچنے کا کام ۱۷؍ مئی کے بعد کرا سکتی ہے ۔ ان کہنا ہے کہ ٹیچرس اپنی ذمہ داریوں سے نہیں بھاگ رہے ہیں بلکہ ان کو اپنی اور اپنے گھر والوں کی صحت کی فکر ہے۔

واضح رہے کہ اس بار یو پی بورڈ کے ہائی اسکول اور انٹر میڈیٹ  میں تقریباً تین کروڑ پچاس لاکھ  طلبا ء اور طالبات نے  امتحانات دئے ہیں ۔گذشتہ ۱۶؍ مارچ سے  یو پی بورڈ کی کاپیوں کے ویلو ایشن کا کام شروع ہوا تھا ۔لیکن لاک ڈاؤن کے اعلان کے بعد ہی کاپیاں جانچنے کا کام بھی روک دیا گیا تھا ۔اس وقت لاکھوں کاپیاں ویلویشن سینٹروں پر جمع ہیں جن کے جانچنے کا کام ابھی  باقی ہے۔
First published: May 06, 2020 06:40 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading