ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

ہاتھرس معاملہ: ایف ایس ایل ٹیسٹ کے لئے 11 دن بعد لئے گئے سیمپل، نہیں ہو سکتی ریپ کی تصدیق۔ سی ایم او

علی گڑھ مسلم یونیورسیٹی کے جواہر لال نہرو میڈیکل کالج کے سی ایم او ڈاکٹر عظیم ملک کا کہنا ہے ' واردات کے 11 دن بعد سیمپل لئے گئے تھے۔ جبکہ سرکاری رہنما خطوط میں واضح طور پر کہا گیا ہے کہ ایسے جرم کے 96 گھنٹے بعد تک فارنسک ثبوت پائے جا سکتے ہیں۔ اس سے تاخیر ہونے پر ریپ یا گینگ ریپ کی تصدیق نہیں ہو سکتی ہے۔

  • Share this:
ہاتھرس معاملہ: ایف ایس ایل ٹیسٹ کے لئے 11 دن بعد لئے گئے سیمپل، نہیں ہو سکتی ریپ کی تصدیق۔ سی ایم او
ہاتھرس معاملہ: فائل فوٹو

نئی دہلی۔ اترپردیش کے ضلع ہاتھرس (Hathras Gangrape Case) میں بیتے دنوں مبینہ اجتماعی عصمت دری اور درندگی سے 19 سالہ لڑکی کی موت معاملہ میں ملک بھر میں غصہ ہے۔ حالانکہ، یوپی پولیس پوسٹ مارٹم رپورٹ میں اجتماعی عصمت دری کی بات سے انکار کر رہی ہے۔ 14 ستمبر کو ہوئی واردات کے بعد متاثرہ کو دو ہفتے کے لئے علی گڑھ مسلم یونیورسیٹی  (AMU) کے جواہر لال نہرو میڈیکل کالج میں بھرتی کیا گیا تھا۔ یہاں کے چیف میڈیکل آفیسر  (CMO) کا کہنا ہے کہ ایف ایس ایل رپورٹ جس کی بنیاد پر یوپی پولیس لڑکی کی اجتماعی عصمت دری نہیں ہونے کا دعویٰ کر رہی ہے، اس کے سیمپل واردات کے 11 دن بعد لئے گئے تھے۔ ایسے میں اس رپورٹ کی کوئی اہمیت نہیں ہے۔


علی گڑھ مسلم یونیورسیٹی کے جواہر لال نہرو میڈیکل کالج کے سی ایم او ڈاکٹر عظیم ملک نے ' انڈین ایکسپریس' سے بات چیت میں یہ بیان دیا۔ انہوں نے کہا ' واردات کے 11 دن بعد سیمپل لئے گئے تھے۔ جبکہ سرکاری رہنما خطوط میں واضح طور پر کہا گیا ہے کہ ایسے جرم کے 96 گھنٹے بعد تک فارنسک ثبوت پائے جا سکتے ہیں۔ اس سے تاخیر ہونے پر ریپ یا گینگ ریپ کی تصدیق نہیں ہو سکتی ہے۔


اطلاعات کے مطابق، ہاتھرس کے بلگڑھی گاوں میں 14 ستمبر کو مبینہ طور پر اعلیٰ ذات کے چار لڑکے جنگل میں گھاس کاٹ رہی لڑکی کا منھ دبا کر دوپٹے کے سہارے اسے پیچھے سے کھینچ لے گئے۔ کچھ گھنٹوں کے بعد لڑکی باجرے کے کھیت میں نیم برہنہ حالت میں ملی۔ اس کی زبان کٹی ہوئی تھی اور ریڑھ کی ہڈی ٹوٹی تھی۔ اسے اے ایم یو اسپتال میں بھرتی کرایا گیا تھا۔ 22 ستمبر کو جب اسے ہوش آیا تو اس نے اشاروں میں اپنے ساتھ ہوئی درندگی کی جانکاری کنبے کو دی۔



مجسٹریٹ کے سامنے بیان درج ہونے کے بعد پولیس نے ریپ کی دفعات کو ایف آئی آر میں جوڑا۔ واقعہ کے 11 دن بعد 25 ستمبر کو متاثرہ کے سیمپل ایف ایس ایل جانچ کے لئے بھیجے گئے تھے۔ اسی رپورٹ کی بنیاد پر پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ لڑکی کے ساتھ ریپ نہیں ہوا ہے۔ بیتے منگل کی صبح تقریبا چار بجے متاثرہ نے دم توڑ دیا تھا۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Oct 05, 2020 10:25 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading